تلنگانہ میں حج فار م حاصل اورر جمع کرنے والے عازمین میں زبردست جوش و خروش

Jan 08, 2017 12:24 PM IST | Updated on: Jan 08, 2017 12:24 PM IST

حیدرآباد: حکومت سعودی عرب کی جانب سے ہندوستانی عازمین کیلئے حج کوٹہ کی بحالی کا استقبال کرتے ہوئے اسپیشل افسرتلنگانہ اسٹیٹ حج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکورنے کہا ہے کہ سال2013 سے حرمشریف کے توسیعی پروجیکٹ کے سبب حکومت سعودی عربیہ نے حجاج کرام کے کوٹہ میں کمی کردی تھی جس کے نتیجہ میں ہندوستان کا کوٹہ بھی کم کردیا گیا تھا اور ہماری ریاست تلنگانہ بھی اس سے متاثر ہوئی تھی۔ بڑی خوشی کی بات ہے کہ اب حکومت سعودی عربیہ نے کوٹہ میں اضافہ کافیصلہ کیا ہے۔

پروفیسر ایس اے شکورنے مزید کہا کہ حکومت ہند خصوصاً اقلیتی امور کے وزیر مختارعباس نقوی کی کامیاب مساعی کے سبب ہندوستان کے عازمین کے کوٹہ میں 20 فیصد کا اضافہ ہوا اور اس سال ہندوستان سے ایک لاکھ 70 ہزار عازمین کی روانگی کی راہ ہموار ہوگئی ہے۔جس کے نتیجہ میں ریاست تلنگانہ سے بھی 20فیصد زیادہ عازمین فریضہ حج کی ادائیگی کے لئے روانہ ہوں گے۔ انہوں نے اس اضافہ پر حکومت سعودی عرب اور حکومت ہند سے اظہار تشکر کیا ہے۔

تلنگانہ میں حج فار م حاصل اورر جمع کرنے والے عازمین میں زبردست جوش و خروش

Picture : Twitter

یہاں یہ بات قابل ذکرہے کہ نائب وزیراعلی محمد محمود علی نے حج کوٹہ میں اضافہ کے لئے خصوصی دلچسپی لی اور اسپیشل افسرحج کمیٹی پروفیسر ایس اے شکور حج کوٹہ میں اضافہ کے لئے مسلسل نمائندگی کررہے تھے۔

اس دوران حج کمیٹی میں حج درخواست فار م حاصل اورر داخل کرنے کے لئے خواہش مند عازمین میں زبردست جوش و خروش پایا جاتاہے جس کی ماضی میں کوئی مثال نہیں ملتی۔ اگرچہ فارم داخل کرنے کی آخری تاریخ 24 جنوری ہے لیکن حج کمیٹی میں ہجوم کی کثرت ہے۔ پروفیسر ایس اے شکور نے کہاکہ حج درخواست فارم حج کمیٹی کی ویب سائٹ کے علاوہ اینڈرائیڈ موبائل ایپ سے بھی ڈاؤن لوڈ کئے جاسکتے ہیں۔ شخصی طور پر فارم داخل کرنے کے لئے فارم کی فوٹو کاپی بھی استعمال کی جاسکتی ہے۔

حج کے درخواست فارم جو صرف ایک صفحہ پر مشتمل ہوں گے ۔ ایک کور کے تحت پانچ بالغ افراد اور دو شیر خوار وں کے نام درج کرنے کی گنجائش ہے۔ خانہ پری کے بعد تمام فارم ضروری دستاویزات کے ساتھ دفتر حج کمیٹی میں داخل کئے جانے ہوں گے۔ پروفیسر ایس اے شکو رنے مزید بتایا کہ اس سال سے حج امور وزارت خارجہ سے وزارت اقلیتی امور کو منتقل کردےئے گئے ہیں۔ اور اسی وزار ت کے تحت تمام امور انجام پائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ حج درخواست کے ساتھ پاسپورٹ کی نقل‘ آدھار کارڈ‘ راشن کارڈ‘ ڈرائیونگ لائسنس‘ وغیرہ کی نقل اور ایک عدد فوٹو داخل کی جائے۔ حج کمیٹی کے توسط سے حج ادا کرنے کی سہولت زندگی میں صرف ایک مرتبہ ہی ہوگی‘ پاسپورٹ ڈیجیٹل ہوں اور 24جنوری2017 یا اس سے قبل کے جاری کردہ اور 28فروری2018 تک کارکرد ہونے چاہئیں۔

اس سال بھی 70سال یا زائد عمر کے عازمین کے علاوہ چوتھی مرتبہ کے درخواست گزاروں کے دومحفوظ زمروں کے تحت درخواست فارم داخل کئے جاسکتے ہیں‘محفوظ زمروں کے بعد بچ جانے والی نشستوں کے لئے قرعہ اندازی ہوگی۔ اس سال عازمین حج کے قیام کے لئے دو زمرے گرین اور عزیزیہ رکھے گئے ہیں ‘گرین زمرہ کے عازمین کو پکوان کی اجازت نہیں ہے‘ اوران کو اپنے طور پر کھانے پینے کا انتظام کرلینا ہوگا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز