بنگلور : ہوٹل نے ہندو مسلم جوڑے کو روم دینے سے کیا انکار، تنازع کے بعد ہوٹل انتظامیہ نے پیش کی صفائی

Jul 05, 2017 04:42 PM IST | Updated on: Jul 05, 2017 04:42 PM IST

بنگلور : بنگلور میں کیرالہ کے ایک شادی شدہ جوڑے کو ہوٹل کا کمرہ دینے سے محض اس لئے انکار کردیا گیا ، کیونکہ شوہر مسلمان تھا اور بیوی ہندو تھی ۔ یہ جوڑا خاتون کے انٹرویو کے لئے بنگلور پہنچا تھا۔اس جوڑے کے مطابق ان سے کہا گیا تھا کہ ہندو اور مسلمان کا ایک ساتھ رہنا ناقابل قبول ہے۔

نیوز 18 سے بات چیت کرتے ہوئے شفیق نے بتایا کہ بنگلور کے نیشنل لا اسکول میں میری اہلیہ کا انٹرویو تھا ، جس کیلئے ہم لوگ صبح 6.30 بجے بنگلور پہنچے ۔ ہمیں آٹو ڈرائیور ایک ہوٹل میں لے جہاں ہم لوگ اپنا اندراج کررہے تھے کہ اسی دوران ہوٹل اسٹاف نے اس کے شناختی کارڈ کو چیک اور کارڈ دیکھتے ہی انہوں نے اندراج کرنے سے روک کردیا اور کہا کہ ہم روم نہیں دے سکتے ہیں۔

بنگلور :  ہوٹل نے ہندو مسلم جوڑے کو روم دینے سے کیا انکار، تنازع کے بعد ہوٹل انتظامیہ نے پیش کی صفائی

Source: Facebook/ Shafeek Subaida Hakkim

شفیق حکیم کے مطابق جب ہم نے ان سے پوچھا کہ کمرہ کیوں نہیں دے سکتے تو انہوں نے کہا کہ ہم دیویا اور شفیق کو روم نہیں دے سکتے ۔ شفیق کے مطابق ان لوگوں نے واضح طور پر کہا کہ وہ ایک مسلم شخص کے ساتھ ایک ہندو خاتون کو روم نہیں دے سکتے ہیں ۔ پھر آٹو ڈرائیور نے ان لوگوں کو دوسرے ہوٹل میں کمرہ لینے میں مدد کی ۔

تاہم تنازع بڑھنے کے بعد اب ہوٹل انتظامیہ نے دعوی کیا کہ ہوٹل میں کمرہ نہ دینے کا تعلق مذہب سے نہیں ہے۔ ہوٹل انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ابتدا میں اس جوڑے نے کہا تھا کہ وہ صرف نصف گھنٹہ کے لئے کمرہ لیناچاہتے ہیں ، تاہم جب انتظامیہ نے انکار کردیا تو انہوں نے کہاکہ وہ ایک دن کے لئے کمرہ لینا چاہتے ہیں ۔ تاہم ان کے پاس کوئی لگیج اور مناسب شناختی کارڈز نہیں تھے اسی لئے ان کو کمرہ دینے سے انکارکردیا گیا ۔

انتظامیہ کے مطابق مذہبی عقائد سے اس کا کوئی تعلق نہیں ہے ، کیونکہ ان کے بیشتر صارفین مسلمان ہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ مذہبی عقائد کی بنیاد پر کمرہ دینے سے کبھی بھی انکار نہیں کیا جاتا ،کوئی بھی ہندو مسلم مسئلہ نہیں ہے،جن افراد کے پاس مناسب شناختی کارڈز ہیں ، ان کو کمرہ دیا جاتا ہے۔ مگر اس جوڑے کے پاس کوئی مناسب شناختی کارڈنہیں تھااورنہ ہی کوئی لگیج تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز