داعش اسلام دشمن ، امریکہ اور اسرائیل کا آلہ کار: ایرانی قونصلر جنرل ، صدر حسن روحانی کا دورہ ہند جلد

ایران کے صدر مسٹرحسن روحانی عنقریب ہندوستان کا دورہ کریں گے۔ ایران اور ہندوستان دونوں ہی ان کے دورہ کے سلسلہ میں تیاریاں کررہے ہیں۔

Dec 20, 2017 06:15 PM IST | Updated on: Dec 20, 2017 06:15 PM IST

حیدرآباد: ایران کے صدر مسٹرحسن روحانی عنقریب ہندوستان کا دورہ کریں گے۔ ایران اور ہندوستان دونوں ہی ان کے دورہ کے سلسلہ میں تیاریاں کررہے ہیں۔ یہ بات ایران کے قونصل جنرل متعینہ حیدرآبادمسٹر محمد حق بین قمی نے آج حیدرآباد میں ایرانی قونصل خانہ میں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں بتائی۔ انہوں نے بتایا کہ حال ہی میں ہندوستانی وزیر اعظم مسٹر نریندر مودی نے ایران کا دورہ کیا تھا جس کے جواب میں ایرانی صدر ہندوستان کا دورہ کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ مغربی ایشیائی خطہ میں ہندوستان اور ایران دو فیصلہ کن طاقتیں ہیں‘ جو مختلف شعبہ جات میں ایک دوسرے کے ساتھ تعاون کرتے ہوئے باہمی تعلقات کو مزید مستحکم کرسکتی ہیں۔

مسٹر محمد حق بین قمی نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی اور اقتصادی تعلقات کو مستحکم کرنے کے لئے بھی اقدامات کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جنوبی ہند کی 6ریاستوں کے ساتھ ایران کے اقتصادی تعلقات کو بہتر بنانے کو ترجیح دی جارہی ہے۔ انہوں نے تلنگانہ کے بشمول 6جنوبی ہند کی ریاستوں کے تجار، صنعتکار اور مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد کو باہمی تجارتی، اقتصادی تعلقات کے سلسلہ میں تبادلہ خیال کرنے کی دعوت دی۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ انفارمیشن ٹکنالوجی کے ایک مرکز کے طور پر اپنے پہچان کا حامل ہے۔ انہوں نے حیدرآباد اور ایران کے صدیوں قدیم ثقافتی تعلقات پر بھی روشنی ڈالی۔

داعش اسلام دشمن ، امریکہ اور اسرائیل کا آلہ کار: ایرانی قونصلر جنرل ، صدر حسن روحانی کا دورہ ہند جلد

ایران کے قونصل جنرل متعینہ حیدرآباد مسٹر محمد حق بین قمی نے داعش پر الزام عائد کیا کہ وہ تکفیریت کی تعلیمات کو عام کرنے کے لئے ذمہ دار ہے۔ اس کے خیالات ونظریات قرآنی تعلیمات اور مذہبی شعائر کے خلاف ہیں۔ جو ممالک ان دہشت گرد گروپس کی مدد کررہے ہیں انہیں اپنے شرانگیز رویہ سے باز آجانا چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران نے داعش کے خلاف لڑائی میں شامی اور عراقی عوام کی مدد کی ہے اور امت مسلمہ میں اتحاد کے لئے اس نے اپنا مثبت رول ادا کیا ہے۔

مسٹر قمی نے کہا کہ عالم اسلام کے اتحاد کے لئے رہبر انقلاب امام آیت اللہ خمینیؒ نے ہمیشہ کوشش کی۔ انہوں نے اسلامی انقلاب کی کامیابی سے پہلے بھی اتحاد کی اہمیت کو نظر انداز نہیں کیا۔ عالم اسلام کی ا تحاد کے لئے ان کی کاوشوں نے انہیں عالم اسلام کا ایک عظیم رہنما بنادیا تھا۔ امام خمینی نے دانشورانہ ثقافتی تحریک اور سیاسی تحریک کے ساتھ عالم اسلام میں اتحاد اور باہمی تعاون کے نظریہ کو فروغ دیا۔ وہ سیاسی تحریک کے دوران تعلیم کو عام کرنے کی تلقین کرتے رہے۔

قونصل جنرل نے کہا کہ مسلمانوں کے مختلف فرقوں کے درمیان اتحاد کی اہمیت کے پیش نظر رہبر انقلاب نے خاتم الانبیاء نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی یوم ولادت کے موقع پر 12تا 17ربیع الاول ہفتہ وحدت کے اہتمام کا آغاز کیا تھا ۔ اس ایک ہفتہ کے دوران اسلامی تعلیمات شعور کی بیداری، اتحاد کی اہمیت اور انسانیت کو درپیش مختلف مسائل کی یکسوئی سے متعلق شعور بیدار کی جاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اسلامی تعلیمات سے متمدن و مذہب اقوام نے استفادہ کیا۔ تاہم روحانیت اور مذہبی تعلیم سے دوری کی وجہ سے آج ساری دنیا انتشار اور خلفشار کا شکار ہے۔ ایران نے دیگر مذاہب کے ماننے والوں کو بھی اسلامی تعلیمات سے واقف کروایا جنہوں نے قرآنی اصولوں اور اسلامی شعائر سے استفادہ کیا۔

اسلامی جمہوریہ ایران تمام مسلمانوں کو ایک امت واحدہ سمجھتا ہے۔ اور جہاں کہیں مسلمانوں کو مدد کی ضرورت ہوتی ہے‘ یہ دست تعاون دراز کرنے کے لئے پہنچ جاتا ہے۔ قونصل جنرل نے کہا کہ انہیں اس بات کی خوشی ہے کہ مسلم ممالک داعش سے آزاد ہورہے ہیں جو اسلام کے دشمن ہیں اور امریکہ اور اسرائیل اور ان کے ہمنوا طاقتوں کے آلہ کار ہیں جو اللہ کی طاقت سے یاتو واقف نہیں ہے۔ انہوں نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ بعض ممالک جن میں امریکہ اور بعض عرب والے شامل ہیں‘ انہوں نے ایران کے ساتھ یگانگت میں تساہلی برتی ہے جس کی وہ مذمت کرتے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز