کرناٹک اسمبلی میں انسداد توہم پرستی بل پیش ، بی جے پی لیڈر نے ختنہ کو جادو ٹونا جیسی برائیوں سے جوڑا

کرناٹک میں جادو ٹونا، خود ساختہ عاملوں اور باباؤں پرقابو پانے کے لئے حکومت نے نیا بل پیش کردیا ہے۔

Nov 23, 2017 11:59 PM IST | Updated on: Nov 23, 2017 11:59 PM IST

بنگلورو : کرناٹک میں جادو ٹونا، خود ساختہ عاملوں اور باباؤں پرقابو پانے کے لئے حکومت نے نیا بل پیش کردیا ہے۔ بلگام میں جاری اسمبلی اجلاس میں یہ بل پیش کیا گیا ۔ ریاست کے وزیرقانون ٹی بی جے چندرا نے قانون سازکونسل میں انسداد توہم پرستی بل کو پیش کیا۔ حزب اختلاف بی جے پی نے جہاں اس بل کی مخالفت کی وہیں اس نے مسلمانوں سے جوڑکرزبردستی ایک ایسا اعتراض کھڑا کرنے کی کوشش کی، جس سے اس بل کا کوئی تعلق نہیں ہے۔ جبکہ بی جے پی لیڈر ایشورپا نے حکومت سے سوال کیا کہ رسومات اورعقائد میں کیا صحیح ہے، کیاغلط ہے، حکومت کیسے طے کرسکتی ہے ؟

بحث کےدوران بی جے پی کے لیڈر ایشورپا نے سنت ابراہیمی ختنہ کا بھی تذکرہ کیا۔ ایشورپا نے کہا کہ ہندو مذہب میں بچوں کو بخار آنے پرسوامی جی کے پاس لے جایاتا ہے، وہیں مسلمانوں میں ختنہ کی روایت موجود ہے۔ سماج میں جب تک اس طرح کی روایتیں موجود ہیں ، تو حکومت کیسے انسداد توہم پرستی قانون نافذ کرسکتی ہے۔ اس موقع پرایشورپا کے بیان پرجے ڈی ایس کے رکن کونسل مدیرآغا نے شدید اعتراض کیا ۔ مدیرآغا نے ایشورپا کو مشورہ دیا کہ وہ پہلے سنت ابراہیمی کے بارے میں جانیں پھر بحث کریں۔

کرناٹک اسمبلی میں انسداد توہم پرستی بل پیش ، بی جے پی لیڈر نے ختنہ کو جادو ٹونا جیسی برائیوں سے جوڑا

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز