تین سال سے 52 لوگوں کو بنا رکھا تھا بندھوا مزدور،مخالفت کرنے پر ہوتا تھا خواتین کا جنسی استحصال

پولیس نے بتایا کہ ان لوگوں کو مسلسل 19 گھنٹے کام کرنے کے لئے مجبور کیا جاتا اور جب وہ اس کی مخالفت کرتے تو خواتین کے ساتھ جنسی استحصال کیا جاتا تھا

Dec 20, 2018 09:12 AM IST | Updated on: Dec 20, 2018 09:33 AM IST

تقریبا تین سال سے کرناٹک میں 52 ایس سی/ ایس ٹی لوگوں کو غلام بنا کر رکھا گیا تھا۔ جن میں 16 خواتین اور 4 بچے بھی شامل تھے۔ پولیس نے بتایا کہ ان لوگوں کو لگاتار 19 گھنٹے کام کرنے کے لئے مجبور کیا جاتا اور جب وہ اس کی مخالفت کرتے تھے تو انہیں چابک سے پیٹا جاتا اور خواتین کے ساتھ جنسی استحصال کیا جاتا تھا۔

کرناٹک کے حسن علاقہ کی ایک شیڈ میں پولیس نے اتوار کے روز چھاپا مارا۔ جہاں متاثرین غیر انسانی حالت میں پائے گئے۔ کچھ متاثرین تو یہاں تقریبا تین سال سے رہ رہے تھے۔ اس کی اطلاع پولیس کو تب ملی جب ایک بندھوا مزدور 12 فیٹ لمبی دیوار کود کر مدد مانگنے کے لئے سامنے آیا۔

تین سال سے 52 لوگوں کو بنا رکھا تھا بندھوا مزدور،مخالفت کرنے پر ہوتا تھا خواتین کا جنسی استحصال

علامتی تصویر

Loading...

معاملہ میں آئی پی سی کی دفعہ 323، 324 (غلط طریقہ سے کاراواس)، 344 (چوری)،  536( جنسی استحصال)،  بندھوا مزدر بنانے اور ایس سی /  ایس ٹی کے تحت ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔ پولیس نے اس معاملہ میں دو لوگوں کو گرفتار کیا ہے۔

تاہم پورے ملک میں بندھوا مزدوروں کے معاملہ سامنے آئے ہیں۔ مذکورہ معاملہ میں سب سے کم عمر کے دو متاثرین جو کہ چھ سال کے لڑکے ہیں۔ وہیں سب سے بزرگ شخص کی عمر 62 سال ہے۔ پولیس نے بتایا کہ اس شیڈ میں کچھ لوگوں کو تین سال سے زبردستی رکھا گیا تھا، وہیں ایک شخص گزشتہ ماہ قبل ہی لایا گیا تھا۔

Loading...