کیرالہ : انجینئرنگ کالج کے طلبہ کا الزم ، پرنسپل نے جان بوجھ کر کھلایا بیف کٹلیٹ ، پرنسپل نے کی تردید

شمالی ہند کے طلبہ کا الزم ہے کہ پرنسپل نے ان کے مذہبی جذبات کو مجروح کرنے کیلئے جان بوجھ کر بیف کٹلیٹ کھلایا ۔ ان طلبہ نے ڈی ایم سے تحریری طور پر شکایت کی ہے

Jan 28, 2018 10:37 AM IST | Updated on: Jan 28, 2018 10:37 AM IST

ملاپورم : کیرالہ میں ایک انجینئرنگ کالج کے طلبہ کو کھانا میں بیف کٹلیٹ دینے کا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ شمالی ہند کے طلبہ کا الزم ہے کہ پرنسپل نے ان کے مذہبی جذبات کو مجروح کرنے کیلئے جان بوجھ کر بیف کٹلیٹ کھلایا ۔ ان طلبہ نے ڈی ایم سے تحریری طور پر شکایت کی ہے ۔

یہ واقعہ کیرالہ کے کوچن یونیورسٹی کالج آف انجینئرنگ کتاناد میں پیش آیا ہے ۔ پرنسپل کے خلاف شکایت میں طلبہ کا کہنا ہے کہ کالج میں شمالی ہندوستان کے کچھ طلبہ کو بتائے بغیر ہی بیف کھلادیا گیا ہے ۔ شکایت کرنے والے طلبہ کا تعلق اکھل بھارتیہ ودیاتھی پریشد اے بی وی پی سے ہے ۔ طلبہ کا الزام ہے کہ پرنسپل نے جان بوجھ کر ایسا کیا اور ان کا مقصد مذہبی جذبات کو مجروح کرنا تھا ۔

کیرالہ : انجینئرنگ کالج کے طلبہ کا الزم ، پرنسپل نے جان بوجھ کر کھلایا بیف کٹلیٹ ، پرنسپل نے کی تردید

Loading...

ادھر پرنسپل ڈاکٹر سنیل کمار نے ان سبھی الزامات کی تردید کی ہے ۔ ان کے مطابق کالج اتھاریٹی کی طرف سے طلبہ کو ناشتہ نہیں دیا گیا تھا ۔ پرنسپل نے کہا کہ ڈیجیٹل بینکنگ اورنیس پر سیمینار چل رہا تھا ، جہاں پروگرام کے آرگنائزرس نے باہری طلبہ اور مہمانوں کو ناشتہ کھلایا تھا ۔

پرنسپل کے مطابق جن طلبہ نے الزام لگایا ہے ، انہیں کچھ دنوں پہلے ایک معاملہ میں کلاس سے معطل کردیا گیا تھا ۔ طلبہ بدلہ کے جذبہ سے ایسا کررہے ہیں ۔ جبکہ طلبہ کا کہنا ہے کہ پرنسپل نے اپنی انا کی تسلی کیلئے انہیں جان بوجھ کر بیف کھلایا ۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز