ایم آئی ایم سربراہ اسدالدین اویسی نے شیعہ وقف بورڈ کی شدید تنقید کی ، کہا : مسجد کسی کو نہیں دی جا سکتی

Aug 13, 2017 07:51 PM IST | Updated on: Aug 13, 2017 07:51 PM IST

حیدرآباد : آل انڈیا مسلم مجلس اتحاد کے سربراہ اور ممبر پارلیمنٹ اسد الدین اویسی نے اتوار کو کہا کہ کوئی شخص یا تنظیم مسجد دے نہیں سکتی، کیونکہ مسجد کا مالک تو اللہ ہے۔ اویسی کا یہ بیان اس وقت آیا ہے، جب شیعہ وقف بورڈ نے عدالت عظمی سے کہا کہ ایودھیا میں بابری مسجد متنازع زمین کی بجائے کچھ فاصلے پر بن سکتی ہے۔

شیعہ وقف بورڈ کے حالیہ موقف پر حیدرآباد کے ممبر پارلیمنٹ نے اپنے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ 'مسجد کا انتظام شیعہ، سنی، بریلوی، صوفی، دیوبندی، سلفی، بوهري کمیونٹی کی طرف سے کیا جا سکتا ہے، لیکن وہ اس کے مالک نہیں ہیں۔ یہاں تک کہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ بھی کسی کو مسجد نہیں دے سکتا۔

ایم آئی ایم سربراہ اسدالدین اویسی نے شیعہ وقف بورڈ کی شدید تنقید کی ، کہا : مسجد کسی کو نہیں دی جا سکتی

اسدالدین اویسی: فائل فوٹو، گیٹی امیجیز

اویسی نے کہا کہ 'مسجد صرف ایک مولانا بھر کے کہنے سے نہیں دی جا سکتی۔ اللہ اس کا مالک ہے، مولانا نہیں۔ ایک مسجد ہمیشہ مسجد رہے گی۔ ' انہوں نے ٹویٹ کیا کہ سپریم کورٹ کیس کی سماعت کر رہا ہے اور وہ ثبوتوں کی بنیاد پر اس کا فیصلہ کرے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز