کانگریس لیڈر ملکارجن کھڑگے سے مسلم وفد کی ملاقات ، تین طلاق بل پر مودی حکومت کی مخالفت کی اپیل

Dec 27, 2017 10:43 PM IST | Updated on: Dec 27, 2017 10:43 PM IST

گلبرگہ : تمام اپوزیشن جماعتوں سے مشاورت کر کےحکمت عملی بنائی جائے گی ۔ گلبرگہ میں ایک مسلم وفد سے ملاقات کےدوران کانگریس کے سینئر لیڈر ملکا رجن کھڑگےنے کہا کہ خواتین کا تحفظ اور شریعت دونوں میں توازن رکھنا حکومت کی ذمہ داری ہے۔ اپوزیشن جماعتیں اس پرمشترکہ حکمت عملی پرغورکر رہی ہیں۔ مسلم دانشوروں نےحکومت سے سوال کیا کہ صرف طلاق ثلاثہ سے متاثرہ مسلم خواتین کی کیوں زبانی ہمدردی کی جا رہی ہے۔ مسلم خواتین کئی ایک مسائل سے دوچار ہیں، حکومت اس کی جانب کیوں توجہ نہیں دے رہی ہے۔

جمعرات کو پارلیمنٹ میں تین طلاق سے متعلق پیش کیا جائے گا ، ایسے میں ملک بھر کے مسلمانوں میں تشویش دیکھی جارہی ہے۔ اس ضمن میں تنظیم رابطہ ملت کے بینرتلےعلما کرام اورعمائدین کےایک وفد نے گلبرگہ کے ممبر پارلیمنٹ و لوک سبھا میں کانگریس کے لیڈر ملکارجن کھڑگے سے ملاقات کی۔ ملاقات میں علما نے کھڑگے کے سامنے تین طلاق پر روشنی ڈالی۔ بل پیش کرنے کے حکومت کے اقدام کو شریعت میں مداخلت کے ساتھ ساتھ دستور ہند کے بنیادی حقوق کی بھی خلاف ورزی قرار دیا۔

کانگریس لیڈر ملکارجن کھڑگے سے مسلم وفد کی ملاقات ، تین طلاق بل پر مودی حکومت کی مخالفت کی اپیل

کانگریس لیڈر ملکارجن کھڑگے سے مسلم وفد کی ملاقات۔ تصویر : ای ٹی وی۔

علما نےحکومت کی اس دلیل کو مسترد کر دیا کہ دنیا کے کئی اسلامی ممالک میں تین طلاق پر پابندی عائد ہے۔ عمائدین نے کہا کہ شریعت میں مداخلت کا حق کسی کو نہیں ہے۔ ملکارجن کھڑگے نے مسلم وفد کی دلیلوں کو بغور سنا اور انہوں نے کہا کہ حکومت کا ایک سول معاملہ کو کریمنل نقطہ نظر سے دیکھنا غلط ہے۔ کھڑگے نےالزام عائد کیا کہ عدالتی طاقت کا سہارا لےکرحکومت ایک خوف کا ماحول پیدا کر رہی ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز