مسلم وزرا کی کروڑوں روپئے کی ملکیت والی 630 ایکڑ وقف اراضی کو بچانے کی کوشش

Oct 13, 2017 07:47 PM IST | Updated on: Oct 13, 2017 07:47 PM IST

بنگلورو۔ ریاست کرناٹک کے مسلم وزرا نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ بیلہلی علاقہ میں موجود کروڑوں روپئے کی ملکیت والی وقف کی 630 ایکڑ زمین وقف بورڈ کے حوالے کی جائے ۔ ساتھ ہی کہا کہ سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک حکومت وقف زمین پر کسی ترقیاتی منصوبہ بنانے یا کسی دوسرے کے حوالے کرنے کی  پہل نہ کرے ۔ بنگلورو کے مضافات میں واقع وقف کی 630 ایکڑ اراضی کو بچانے کی کوششیں جاری ہیں ۔ اس سلسلے میں وکاس سودھا میں ایک اہم میٹنگ ہوئی ۔

وزیراقلیتی بہبود اور اوقاف تنویرسیٹھ کی صدارت میں ہوئی میٹنگ میں مسلم وزرا نے ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا کہ بنگلورو کے بیلہلی علاقے میں موجود 630 ایکڑ اراضی وقف کی ملکیت ہے۔ لہذا اس زمین پرکوئی ترقیاتی منصوبہ نہ بنایا جائے۔ نہ ہی اس زمین کوکسی کے حوالے کیا جائے۔ مسلم وزرا نے میٹنگ میں موجود ریاست کے وزیرمالگذاری کاگوڈ تمپا، وزیرقانون ٹی بی جئے چندرا سے کہا کہ بیلہلی کی وقف اراضی کے سلسلے میں سپریم کورٹ میں مقدمہ چل رہا ہے۔ سپریم کورٹ کا فیصلہ آنے تک حکومت کوئی قدم نہ اُٹھائے۔ کروڑوں روپئے کی وقف کی زمین کووقف بورڈ کے حوالے کرنےکا مطالبہ کیا گیا۔ اس اہم میٹنگ میں وزیرشہری ترقیات وحج آرروشن بیگ، وزیرتغذیہ وشہری رسدات یوٹی قادر، رکن اسمبلی رفیق احمد، کرناٹک ریاستی وقف بورڈ کے ایڈمنسٹریٹرمحمد محسن نے شرکت کی۔

مسلم وزرا کی کروڑوں روپئے کی ملکیت والی 630 ایکڑ وقف اراضی کو بچانے کی کوشش

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز