ریلی فار ریورس : ست گرو جگی واسو دیوا نے دریاؤں کی بقاء کیلئے مسلمانوں سے تعاون درخواست کی

Sep 15, 2017 07:06 PM IST | Updated on: Sep 15, 2017 07:08 PM IST

حیدرآباد : آپ تصور کریں کہ اگر دریاؤں کا پانی پوری طرح خشک ہو گیا تو ملک کا اورعوام کا کیا حال ہوگا ۔ دریاؤں میں اگرندیوں سے جو پانی آتا ہے ، وہ نیچےتک نہ پہنچے تو ایک ہی موسم میں ہل چل مچ جاتی ہے، لیکن دریاؤں میں پانی کی روانی مسلسل قائم رہے، اس کی ذمہ داری سبھی ریاستی سرکاروں کی ہوتی ہے۔ وہیں سماجی تنظیموں کی بھی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ عوام کو نہروں کو جگہ جگہ غلط طریقے سے کاٹنے کے نقصانات سے واقف کرائے ۔

ست گرو جگی واسو دیوا نے مسلمانوں سے درخواست کی وہ دریاؤں کے احیاء کے لئے ملک بھر میں چلائی جانے والی تحریک کو اپنا تعاون دیں ۔ ست گرو نے ریلی فار ریورس کے حمایت میں حیدرآباد میں مسلم تنظیموں کی جانب سے منعقدہ جلسہ سے خطاب کیا۔ حیدرآباد کی مسلم تنظیموں نے دریاؤں کی بقاء کے لئے جاری مہم کو سراہتے ہوئے اس یقین کا اظہار کیا کہ مسلمان بھی اس تحریک کا حصہ بنیں گیں ۔ تحریک ریلی فار ریورس کی حمایت میں منعقدہ اس اجلاس کو روزنامہ سیاست اورغیرسرکاری تنظیموں کے اشترا ک سے منعقد کیا گیا ۔

ریلی فار ریورس : ست گرو جگی واسو دیوا نے دریاؤں کی بقاء کیلئے مسلمانوں سے تعاون درخواست کی

سوکھتی ہوئی دریاؤں کے مسئلہ سے عوام کو واقف کرانے کے لئے ملک بھرمیں چلائی جانے والی تحریک ریلی فا ر ریورس فی الوقت حیدرآباد سے گزر رہی ہے ۔ اس ریلی کی حمایت میں مسلم علماء اورمسلم تنظیموں نے ایک اجلاس منعقد کیا ۔ اس اجلاس سے خطا ب کرتے ہوئے تلنگانہ کے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے اس تحریک کے روح رواں ست گروجگی واسو دیوا کی کاوشوں کی ستائش کی۔

اس موقع پر ست گرو جگی واسو دیوا نے پانی اور درختوں کی اہمیت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ ہم اپنی سوکھے دریاؤں میں پھر سے پانی کے بہاؤ کو یقینی بنانے کے بارے میں سوچیں۔ انہوں نے ملک کے مسلم طبقہ سے درخواست کی کہ اس مہم میں اپنا تعاون دیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز