ایک سو طلبہ کیلئے صرف تین اساتذہ ، ان میں سے بھی ایک دو سال سے غیر حاضر

Jan 11, 2017 11:27 PM IST | Updated on: Jan 11, 2017 11:27 PM IST

بنگلورو : ریاستی حکومت نے سرکاری اسکولوں میں بچوں کی تعداد بڑھانے اور انہیں معیاری تعلیم فراہم کرنے کے لئے کئی اسکیمیں بنائی ہیں ، لیکن محکمہ تعلیمات کے افسروں کے غیر ذمہ دارانہ رویہ کی وجہ سے سرکاری اسکولوں کے اساتذہ کا تعلیمی نظام ابتر ہوتاجارہا ہے ۔

گدک ضلع کے بیلگٹی دیہات میں واقع سرکاری پرائمری اسکول میں اساتذہ کی قلت کا سامنا ہےـ ۔ بیلگٹی سرکاری پرائمری اسکول میں فی الحال پانچویں جماعت تک طلبہ کو تعلیم دی جارہی ہے ـ ان پانچ جماعتوں میں تقریباً 100 طلبہ تعلیم حاصل کررہے ہیں ۔ـ اس اسکول میں تین اساتذہ کا تقرر ہوا تھا ۔مگر ان میں سے ایس بی چوڈی گزشتہ دو سالوں سےغیرحاضرہیں اور فی الحال صرف دو اساتذہ ہی پانچ جماعتوں کی ذمہ داری اٹھائے ہوئے ہیں ۔ ـ اس سے نہ صرف اساتذہ بلکہ طلبہ کو بھی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہےـ ۔

ایک سو طلبہ کیلئے صرف تین اساتذہ ، ان میں سے بھی ایک دو سال سے غیر حاضر

اساتذہ کی قلت اورایک استاد کی مسلسل غیرحاضری کی وجہ سے بچوں کی تعلیم پر بُرا اثر پڑرہا ہے ۔ـ گدگ ضلع کے لوگ کافی دنوں سے مطالبہ کررہے ہیںکہ غیرذمہ داری سے کام کرنے والے اساتذہ اور بی ای او کے خلاف سخت کارروائی کی جائے ۔ تاہم ـ محکمہ تعلیمات نےغیر حاضر ہونے والے ایس بی چوڈی کےخلاف ابھی تک کوئی کارروائی نہیں کی ہے۔

ادھر ڈی ڈی پی آئی گدگ رُدرپا کا کہنا ہے کہ ایس پی چوڈی کی غیر حاضری کی مکمل تفصیلات بی ای او سے حاصل کروں گا ۔ ـ ان پر لگایا گیا الزام اگر سچ ثابت ہوتا ہے ، تو ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز