تلنگانہ میں طلبہ کے کاندھوں کا بوجھ ہوا کم ، اسکول بیگس کے وزن کی حد کی مقرر

Jul 21, 2017 06:03 PM IST | Updated on: Jul 21, 2017 06:03 PM IST

حیدرآباد : اسکولی طلبہ خاص پرائیویٹ اسکول کے طلبہ کو روزانہ اپنے نصابی کتابوں کے علاوہ دوران کلاس اور ہوم ورک کے لئے الگ الگ نوٹ بکس سے بھرے وزنی بیگس کو اٹھا کر اسکول کو جانا پڑتا ہے ۔تاہم اب حکومت تلنگانہ نے ان اسکولی طلبہ کو بڑی راحت دیتے ہوئے بیگس کے وزن کی حد مقررکردی ہے ۔ اس سلسلہ میں جاری حکم نامہ کے مطابق پرائمری سکولوں کیلئے بیگ کا وزن ڈیڑھ کلو سے تین کلو جبکہ ہائی اسکول کے لئے بیگ کا وزن پانچ کلو سے زائد نہ ہو۔ طلبہ نے حکومت کے اس اقدام کا خیر مقدم کیا ہے ۔

حکومت تلنگانہ کے محکمہ اسکول ایجوکیشن نے اسکولی انتظامیہ کو ہدایت جاری کی ہے کہ پہلی سے پانچویں جماعت تک طلبہ کو کوئی ہوم ورک نہ دیا جائے ۔اس کے علاوہ طلبہ کو صاف پینے کا پانی فراہم کیا جائے ۔ محکمہ کے سروے سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ گھر سے لے جانے والی پانی کی بوتلیں بھی اسکول بیگس کو وزنی بنانے کا اہم سبب بنتی ہیں ۔

تلنگانہ میں طلبہ کے کاندھوں کا بوجھ ہوا کم ، اسکول بیگس کے وزن کی حد کی مقرر

قابل ذکر ہے ریاست کے محکمہ اسکول ایجوکیشن کے ریاست گیر سروے میں انکشاف ہوا ہے کہ پرائمری اسکول کے طلبہ چھ سے بارہ کلو پر مشتمل بیگ کا بوجھ ڈھوتے ہیں جبکہ ہائی اسکول کے طلبہ بارہ سے 17 کلو وزن اٹھاتے ہوئے اسکول کا رخ کرتے ہیں ۔ سروے سے یہ بھی پتہ چلا ہے کہ وزنی بیگس اٹھانے سے ان طلبہ کی نہ صرف ریڑھ کی ہڈی بلکہ ٹخنے بھی متاثر ہو رہے ہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز