جنوبی کوریا نے شمالی کوریا کے سامنے فوجی مذاکرات کی تجویز پیش کی

Jul 17, 2017 03:19 PM IST | Updated on: Jul 17, 2017 03:19 PM IST

سیول۔ جنوبی کوریا نے 2015 کے بعد سے پہلی بار شمالی کوریا کے سامنے فوجی مذاکرات کی تجویز پیش کی ہے۔ جنوبی کوریا کے نائب وزیر دفاع سوہچو سُک نے آج اس بات کی اطلاع دی۔ مسٹر سُک نے کہا کہ بین کوریائی سرحد کے نزدیک دشمنی اور جنگی سرگرمیوں کے علاوہ موجودہ کشیدگی کو ختم کرنے کیلئے ہم نے شمالی کوریا کے سامنے 21 جولائی کو ٹونگلگاک میں فوجی مذاکرات کی تجویز پیش کی ہے۔ حالیہ ہفتوں میں شمالی کوریا کی جانب سے مسلسل میزائل تجربے کرنے کے بعد یہ تجویز پیش کی گئی ہے۔

جنوبی کوریا کی جانب سے فوجی مذاکرات کی یہ تجویز صدر مون جے اِن کے اس بیان کے بعد آئی ہے جس میں انہوں نے شمالی کوریا کے میزائل اور جوہری پروگرام پر کنٹرول کرنے کیلئے بات چیت کو کافی اہم قرار دیا تھا۔ واضح رہے کہ ٹونگلگاک ایک شمالی کوریائی عمارت ہے جہاں اس سے پہلے بھی کئی بار اس طرح کے مذاکرات کا انعقاد کیا جا چکا ہے۔ قبل ازیں دسمبر 2015 میں اسی عمارت میں سرکاری سطح کے مذاکرات کا انعقاد کیا گیا تھا۔

جنوبی کوریا نے شمالی کوریا کے سامنے فوجی مذاکرات کی تجویز پیش کی

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز