مسلم ممالک کو لے کر ٹرمپ کی ویزا پالیسی کی گوگل کے سی ای او نے کی شدید تنقید ، ٹریولنگ عملہ کو بلایا واپس

Jan 28, 2017 11:38 PM IST | Updated on: Jan 28, 2017 11:38 PM IST

نیویارک : ہند نژاد گوگل کے سی ای او سندر پچائی نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے جاری کی گئی نئی ویزا پالیسی کی شدید تنقید کی ہے ۔ جمعہ کو جاری کی گئی نئی پالیسی کے تحت 7 مسلم اکثریت والے ممالک کے شہریوں کو اگلے 3 ماہ تک ویزا نہ دینے کا حکم دیا گیا ہے ۔ ٹرمپ حکومت کے اس فیصلہ کے بعد گوگل نے اپنے ٹریولنگ عملہ کو امریکہ واپس بلا لیا ہے ۔ کمپنی کے سی ای او نے کہا ہے کہ مسلم اکثریت والے ممالک سے آنے پر روک کا فیصلہ امریکہ میں آنے والے ٹیلنٹ کے لئے رکاوٹ جیسا ہے ۔ پچائی کے علاوہ فیس بک کے بانی مارک زكربرگ اور نوبل انعام یافتہ ملالہ یوسف زئی نے بھی ٹرمپ انتظامیہ کے اس فیصلہ کی شدید مذمت کی ہے ۔

پچائی نے عملہ کو بھیجے اپنے ای میل میں لکھا ہے کہ 7 مسلم ممالک کے شہریوں کے امریکہ آنے پر عارضی روک کے فیصلہ سے گوگل کے تقریبا 187 ملازمین متاثر ہوں گے ۔ وال سٹریٹ جرنل کی رپورٹ کے مطابق  اس آرڈر کے اثر کو لے کر ہم فکر مند ہیں ۔

مسلم ممالک کو لے کر ٹرمپ کی ویزا پالیسی کی گوگل کے سی ای او نے کی شدید تنقید ، ٹریولنگ عملہ کو بلایا واپس

پچائی نے کہاکہ یہ افسوسناک ہے کہ اس ایگزیکٹو آرڈر کا نتیجہ ہمارے ساتھیوں کو بھگتنا پڑ رہا ہے۔ بی بی سی کی رپورٹ کے مطابق گوگل نے ٹریول کر رہے اپنے تقریبا 100 ملازمین کو واپس بلا لیا ہے ۔ جمعہ کو ٹرمپ کی جانب سے دستخط کی گئی نئی ویزا پالیسی کے مطابق 7 مسلم اکثریت والے ممالک کے لوگوں کو 90 دنوں تک ویزا دینے پر روک لگا دی گئی ہے ۔ اس کے علاوہ شام سے آنے والے پناہ گزینوں کی انٹری بھی اگلے حکم تک روک دی گئی ہے ۔ اس حکم کے تحت 7 مسلم ممالک ایران، عراق، لیبیا، صومالیہ، سوڈان، شام اور یمن کے شہریوں پر ویزا پابندیاں عائد کی گئی ہیں ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز