ایرانی پارلیمنٹ اور آیت اللہ خمینی کے مزار پر داعش کے حملوں میں 12 افراد ہلاک ، 42 زخمی

Jun 07, 2017 12:50 PM IST | Updated on: Jun 07, 2017 09:16 PM IST

تہران : ایران کے دارالحکومت تہران میں دو مختلف حملوں میں پارلیمنٹ کی عمارت کے علاوہ آیت اللہ خمینی کے مزار کو نشانہ بنایا گیا ہے جن میں کم از کم 12 افراد ہلاک اور 42 زخمی ہو گئے ہیں۔اطلاعات کے مطابق ابتدا میں حملہ آوروں نے کچھ افراد کو یرغمال بھی بنا رکھا تھا ، لیکن بعد میں سبھی حملہ آوروںکو ہلاک کردیا گیا ۔ آیت اللہ خمینی کے مزار پر ہونے والا خود کش حملہ تھا۔شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ نے ان حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

ایرانی میڈیا کے مطابق وزارت داخلہ کے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ دہشت گردوں کی دو ٹولیوں نے بدھ کے روز بیک وقت ایران کے بانی امام خمینی کے مزار اور پارلیمنٹ سیکریٹریٹ پر اندھا دھند حملہ کر کے ایران میں موجود امن و امان کی صورت حال پر اثرانداز ہونے کی ناکام کوشش کی۔ اس بیان میں کہا گیا ہے کہ دو دہشت گرد امام خمینی رح کے مزار کے احاطے میں داخل ہوئے جن میں سے ایک نے خود کو دھماکے سے اڑالیا جبکہ دوسرا سیکورٹی اہلکاروں کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں مارا گیا۔

ایرانی پارلیمنٹ اور آیت اللہ خمینی کے مزار پر داعش کے حملوں میں 12 افراد ہلاک ، 42 زخمی

وزارت داخلہ کے جاری کردہ بیان میں واضح کیا گیا ہے کہ چار دہشت گردوں کی دوسری ٹولی نے پارلیمنٹ سیکریٹریٹ میں داخل ہونے کی کوشش کی تاہم اسے سیکورٹی اہلکاروں کی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔

بیان کے مطابق ایک دہشت گرد نے خود کو دھماکے سے اڑالیا جبکہ تین دوسرے دہشت گرد پارلیمنٹ سیکریٹریٹ کی بالائی منزل پر پہنچنے کی کوشش میں سیکورٹی اہلکاروں کی فائرنگ کا نشانہ بن کر ہلاک ہو گئے۔ایران کی وزارت داخلہ نے اعلان کیا ہے کہ دہشت گردی کے دونوں واقعات میں 12 افراد ہلاک اور 45 دیگر زخمی ہوئے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز