ٹرمپ نے افغانستان میں مزید امریکی فوجی بھیجنے کو منظوری دی

Aug 22, 2017 07:36 PM IST | Updated on: Aug 22, 2017 07:36 PM IST

واشنگٹن۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے افغانستان میں مزید امریکی فوجیوں کو بھیجنے کے منصوبہ کو کل رات منظوری دیتے ہوئے کہا کہ یہ امریکہ کی پالیسی تبدیلی کا حصہ ہے اور وہاں ہمارا مقصد طالبان کو شکست دینا ہے۔ مسٹر ٹرمپ نے واشنگٹن کے نزدیک ایک فوجی ٹھکانہ پر اپنے خطاب میں کہا کہ نئی پالیسی کا مقصد افغانستان کو دہشت گردوں کی محفوظ پناہ گاہ بننے سے روکنا ہے تاکہ وہاں چھپے ہوئے دہشت گرد امریکہ کو نشانہ بنانے کی بات خواب میں بھی نہ سوچ سکیں۔

خیال رہے کہ مسٹر ٹرمپ ہمیشہ اپنے سے قبل امریکی صدور کی افغانستان کے بارے میں پالیسیوں کی زبردست تنقید کرتے رہے ہیں لیکن اب یہ چیلنج ان کے سامنے ہے کہ کس طرح طالبان کو ختم کیا جائے کیونکہ افغانستان میں ہمیشہ ہی حکومت کی کمزوریوں کا طالبان نے فائدہ اٹھایا ہے۔ مسٹر ٹرمپ نے اس بات کا ذکر نہیں کیا کہ ابھی افغانستان میں مزید کتنے فوجیوں کو تعینات کیاجائے گا اور انکی تعیناتی کی مدت کیا ہوگی لیکن سرکاری ذرائع کا کہنا ہے کہ انہوں نے وزیر دفاع جم میٹس کے اس منصوبہ کو منظوری دی ہے جس میں افغانستان میں مزید چار ہزار فوجیوں کو بھیجنے کی بات کہی گئی ہے اور انہیں ملاکر وہاں امریکی فوجیوں کی مجموعی تعداد بڑھ کر 12400ہوجائے گی۔

ٹرمپ نے افغانستان میں مزید امریکی فوجی بھیجنے کو منظوری دی

امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ: فائل فوٹو

مسٹر ٹرمپ نے یہ وارننگ بھی دی کہ افغانستان میں امریکہ کی حمایت ایک دم کوری نہیں ہے اور نہ ہی امریکہ ملک کی صحیح خطوط پر تعمیر کا خواہشمند ہے بلکہ اہم مقصد طالبان کا خاتمہ ہے اور اس کے بعد افغانستان خود ہی اپنے پیروں پر کھڑا ہوجائے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز