اوبر ڈرائیوروں کا نئے بل کے خلاف احتجاج

برازیلیا۔ انٹرنیٹ کی سہولت سے آراستہ مسافروں کو سروس دینے والی کمپنی اوبر کے سینکڑوں ڈرائیوروں نے برازیل کے مختلف شہروں میں کل احتجاج و مظاہرہ کرکے اس بل کی مخالفت کی جس کے لاگو ہونے پر انہیں ٹیکسی ڈرائیوروں میں تبدیل کردیا جائے گا۔

Oct 31, 2017 07:50 PM IST | Updated on: Oct 31, 2017 07:50 PM IST

برازیلیا۔ انٹرنیٹ کی سہولت سے آراستہ مسافروں کو سروس دینے والی کمپنی اوبر کے سینکڑوں ڈرائیوروں نے برازیل کے مختلف شہروں میں کل احتجاج و مظاہرہ کرکے اس بل کی مخالفت کی جس کے لاگو ہونے پر انہیں ٹیکسی ڈرائیوروں میں تبدیل کردیا جائے گا۔ پولیس نے کہا کہ بل کی مخالفت کرنے کے لئے 800 اوبر ڈرائیور برازیل کے دارالحکومت برازیليا میں جمع ہوئے۔ مظاہرین ڈرائیوروں کا کہنا تھا کہ یہ بل ان کو کاروبار سے باہر کر دے گا کیونکہ یہ ان کے مقامی لائسنس اور ٹیکس قوانین کے تابع کر دے گا۔

ساؤ پولو اور ریو ڈی جنیرو میں اسی طرح کے احتجاج سے آمد و رفت میں کمی آئی۔ اوبر ٹیکنالوجی انک کے چیف ایگزیکٹیو آفیسر دارا خسرووشاهي سینیٹ کی طرف سے ووٹنگ کے لئے آج لائے جانے والے اس بل کے خلاف لابنگ کرنے کے لئے برازیل پہنچے۔ کمپنی کا خیال ہے کہ اس سے تیزی سے بڑھتی ہوئی غیر ملکی مارکیٹ میں کمپنی کے کاروبار کو خطرہ ہے۔ کمپنی کے مطابق، برازیل اوبر کا تیسرا سب سے بڑا مارکیٹ ہے جہاں ایک کروڑ 70 لاکھ صارفین ہیں۔ نیو یارک اور میکسیکو سٹی کے بعد ساؤ پالو شہر دنیا کے کسی بھی دوسرے شہر کے مقابلے میں سواری اور ایویر سروس پر زیادہ توجہ دیتا ہے۔

اوبر ڈرائیوروں کا نئے بل کے خلاف احتجاج

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز