ٹرمپ کے مسلم مخالف بیانات ، سابق امریکی وزیرخارجہ کا خود کو مسلمان رجسٹر کروانے کا اعلان

Jan 27, 2017 04:32 PM IST | Updated on: Jan 27, 2017 04:32 PM IST

واشنگٹن : سابق امریکی صدر بل کلنٹن کے ساتھ وزیر خارجہ کے عہدے پر فائز رہنے والی سرکردہ امریکی سیاست دان میڈلین البرائیٹ نے نو منتخب امریکی صدر ڈونالد ٹرمپ کی جانب سے مسلمان شہریوں کے امریکہ میں داخلے پر پابندی کے اعلان کے خلاف انوکھا احتجاج درج کرایا ہے۔میڈلین البرائٹ نے ٹویٹ کیا ہے کہ اگر امریکی مسلمانوں کےلئے علیحدہ رجسٹریشن کا قانون بنایا گیا تو وہ اپنا اندراج مسلمان کی حیثیت سے کروائیں گی۔

خیال رہے کہ میڈلین البرائٹ اپنی سخت گیری کے باعث لیڈی ہاک کے نام سے بھی مشہور تھیں ، لیکن نئے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی متعصبانہ پالیسیوں اور متنازع بیانات کے بعد انہوں نے بھی امریکی مسلمانوں کے ساتھ کھڑے ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔

ٹرمپ کے مسلم مخالف بیانات  ، سابق امریکی وزیرخارجہ کا خود کو مسلمان رجسٹر کروانے کا اعلان

انہوں نے ڈونالڈ ٹرمپ سے کہا ہے کہ وہ بعض مسلمان اور عرب ممالک کے باشندوں کے 120 دن تک امریکہ میں داخلے پر پابندی کے فیصلے کو قبول نہیں کرتیں۔ اگر ٹرمپ مسلمانوں پر پابندی کے فیصلے پر مُصر رہتے ہیں ،تو وہ خود کو مسلمان رجسٹر کرالیں گی۔

مائیکرو بلاگنگ ویب سایٹ ٹویٹر پر پوسٹ کردہ ایک بیان میں میڈلین البرائیٹ نے کہا کہ میری تربیت کیتھولک عیسائی کی حیثیت سے ہوئی ہے۔ بعد ازاں میں اسقف کلیسا کے ساتھ وابستہ ہوگئی۔ مجھے پتا چلا کہ میرا خاندانی پس منظر یہودی ہے اور آج میں پناہ گزینوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے خود کو مسلمان کے طور پر رجسٹر کرانے کی تیاری کررہی ہوں۔ انہوں نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پرامریکہ میں مجسمہ آزادی کی تصویر پوسٹ کی اور اس کے نیچے لکھا کہ امریکا کے دروازے آج بھی تمام ادیان اور انسانی طبقات کے لیے کھلے ہیں۔

میڈلین البرائٹ کی تقلید کرتے ہوئے ہالی ووڈ کی معروف اداکارہ مایم بیالک نے بھی احتجاجاً خود کو بطور مسلمان رجسٹر کروانے کا اعلان کیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز