امریکہ نے شامی فوج کے جنگی طیارے کو مار گرایا

Jun 19, 2017 05:27 PM IST | Updated on: Jun 19, 2017 05:27 PM IST

عمان / واشنگٹن۔  امریکی فوج نے شام کے جنوبی شہر رقہ میں شامی فوج کے ایک جنگی طیارے کو مار گرایا ہے۔ امریکی فوج کا کہنا ہے کہ یہ جیٹ طیارہ امریکہ اور اس کی اتحادی فوجوں پر بم گرا رہا تھا۔ لیکن شام کا کہنا ہے کہ طیارہ داعش شدت پسندوں کے خلاف مشن پر جا رہا تھا تبھی امریکی فوج نے اسے راستے میں مار گرایا۔ اس دوران شام کے سرکاری ٹیلی ویژن پر جاری ایک بیان میں بتایا جا رہا ہے کہ جیٹ طیارہ اتوار کو رصافہ گاؤں کے قریب حادثہ کا شکار ہو گیا اور پائلٹ لاپتہ ہے۔ شامی فوج نے کہا، "اس طرح کے حملے فوج کی کوششوں کو کمزور کرنے کی غرض سے کئے جارہے ہیں ۔ ہماری فوج ہی اپنے ساتھیوں کے ساتھ مل کر دہشت گردی کے خلاف لڑ رہی ہے۔ " شامی فوج نے کہا کہ حملہ اس وقت ہوا ہے جب فوج اپنے اتحادیوں کے ساتھ داعش کے شدت پسندوں کے خلاف فیصلہ کن برتری حاصل کرنے کی طرف آگے بڑھ رہی تھی۔

شامی فوج کے بعد امریکی فوج نے بھی ایک بیان جاری کرکے کہا کہ شامی طیارہ اتحادی سیکورٹی فورسز کی طرف سے اپنے دفاع میں مار گرایا گیا ہے۔ امریکی سنٹرل کمان نے دعوی کیا ہے کہ شامی آرمی کے ایس یو ۔22 جیٹ نے امریکہ کی حمایت والی فوج کے پاس بم گرائے۔ اس کے فورا بعد ہی یوایس ایف / اے -18 ای سپرهارنیٹ جنگی طیارے نے اسے مار گرایا۔ فوج نے کہا کہ شامی حکومت کی حمایت والی فوج نے اس سے پہلے ایس ڈی ایف کے قبضہ والے شہر طبقہ میں حملہ کیا اور بہت سے جوانوں کو زخمی کرنے کے ساتھ انہیں شہر سے باہر کردیا۔ امریکہ کی قیادت والی اتحادی فورسز نے شمالی شام اور رقہ صوبے میں حالیہ دنوں میں اپنے ہوائی حملے تیز کئے ہیں۔

امریکہ نے شامی فوج کے جنگی طیارے کو مار گرایا

فائل فوٹو: رائٹرز

امریکہ کی حمایت والی فوج نے رقہ شہر کا محاصرہ کرکے کئی اضلاع کو دہشت گردوں کے قبضے سے آزاد کرا لیا۔ رقہ شہر میں تیل کے کئی کنویں اور گاؤں شامل ہیں۔ یہ شہر گزشتہ تین برسوں سے دہشت گردوں کے قبضے میں تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز