امریکی انتخابات میں روس کے ہیکنگ کی بات کا ڈونالڈ ٹرمپ نے کیا اعتراف

Jan 09, 2017 11:41 PM IST | Updated on: Jan 09, 2017 11:41 PM IST

واشنگٹن: امریکہ کے نو منتخب صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے امریکی انٹیلی جنس ایجنسی کی اس رپورٹ کو تسلیم کر لیا ہے جس میں بتایا گیا تھا کہ امریکی صدارتی انتخابات کے دوران سائبر حملے میں روس کا ہاتھ تھا۔ اس سلسلے میں وہ كوئی کارروائی کر سکتے ہیں۔ چیف آف اسٹاف رنس پربس نے کہا ہے کہ مسٹر ٹرمپ کا یہ ماننا ہے کہ ڈیموکریٹک پارٹی تنظیم کو ہدایات دینے کے پیچھے روس کا ہاتھ ہے لیکن پربس نے یہ واضح نہیں کیا کہ کیا مسٹر ٹرمپ اس بات پر متفق ہیں کہ هیكنگ کی ہدایت دینے کے پیچھے روس کے صدر ولاديمير پوتن کا ہاتھ تھا۔

پربس نے کل فوكس نیوز سنڈے كو بتایا’’اس خاص معاملے کے ساتھ روس کا نام پہلے سے منسلک تھا اس لئے یہ مسئلہ نہیں ہے‘‘۔ ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ ریپبلکن نو منتخب صدر کی ٹیم کے ایک سینئر رکن نے یہ بات قبول کی ہے کہ مسٹر ٹرمپ یہ مانتے ہیں کہ روس نے 2016 میں صدارتی انتخابات کے دوران ڈیموکریٹک اميدوار کے ای میل کے ہیکنگ کی ہدایات دیئے تھے جسے بعد میں بے نقاب کیا گیا تھا۔

امریکی انتخابات میں روس کے ہیکنگ کی بات کا ڈونالڈ ٹرمپ نے کیا اعتراف

مسٹر ٹرمپ اب تک اس بات سے انکار کرتے رہیں ہیں کہ هیكنگ کے پیچھے روس کا ہاتھ ہے یا روس نے انہیں کامیاب کرانے میں کسی بھی طرح کی مدد کی ہے۔ آئندہ 20 جنوری کو صدر کے عہدے کا حلف لینے سے پہلے مسٹر ٹرمپ پر ریپبلکن پارٹی کی طرف سے یہ دباؤ بڑھتا جا رہا ہے کہ وہ انٹیلی جنس ایجنسی کے اس دعوے کو قبول کریں کہ آٹھ نومبر کو ہوئے انتخابات کو متاثر کرنے کے لئے روس نے ہیکنگ یا کسی بھی طرح کی دوسری مدد کی تھی۔

گذشتہ ہفتے امریکی انٹیلی جنس ایجنسی کی رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ مسٹر پوٹن نے ڈیموکریٹک پارٹی کی امیدوار ہیلری کلنٹن کو شکست دینے اور مسٹر ٹرمپ کو تعاون کرنے کے لیے سائبر حملے کی ہدایات دیئے تھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز