اٹلی : وینس کے میئر کا متنازع حکم ، سینٹ مارکس اسكوائرپر اگر کوئی اللہ اکبر کا نعرہ لگائے ، تو گولی مار دو

Aug 25, 2017 12:50 PM IST | Updated on: Aug 25, 2017 12:58 PM IST

وینس : اٹلی کے وینس شہر کے میئرلوئیگی بگنارو نے ایک انتہائی متنازع حکم جاری کیا ہے،جس کی چوطرفہ تنقید کی جارہی ہے۔ میئر کے حکم کے مطابق 'شہر کے مشہور سینٹ مارکس اسكوائر پر اگر کسی شخص نے اللہ اکبر کا نعرہ بلند کیا تو اسے گولی مار دی جائے گی۔لوئیگی کے مطابق 'ہم اپنے گارڈس کو محتاط رہنے کی ہدایت دیں گے۔ اگر کوئی بھی سینٹ مارکس اسكوائر کی طرف دوڑتے ہوئے جائے گا اور اللہ اکبر کا نعرہ بلند کرے گا ، وہ اسے مار گرائیں گے ۔ میئر نے مزید کہا ہے کہ ایک سال پہلے انہوں نے کہا تھا کہ چار مراحل میں ایسا کریں، لیکن آج کہتا ہوں کہ تین مراحل میں ہی انہیں مار گرایا جائے گا۔ '

میئرلوئیگی نے مزید کہا کہ سب جانتے ہیں کہ 'اللہ اکبر لفظ عربی زبان میں اللہ کی عظمت کے لئے استعمال کیا جاتا ہے، لیکن گزشتہ کچھ وقت میں براعظم میں دیکھا گیا ہے کہ دہشت گردی کے واقعات سے پہلے دہشت گرد اسے بولتے آئے ہیں۔اپنے حکم پر رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے میئر نے کہا کہ میں ہمیشہ سیاسی طور پر صحیح نہیں ہوسکتا، میں غلط ہوں، ہم قتل کریں گے۔ '

اٹلی : وینس کے میئر کا متنازع حکم ، سینٹ مارکس اسكوائرپر اگر کوئی اللہ اکبر کا نعرہ لگائے ، تو گولی مار دو

میئرلوئیگی نے کہا کہ یہ اطالوی شہر بارسلونا سے کہیں زیادہ محفوظ تھا۔ بارسلونا میں اس ماہ کے آغاز میں دہشت گردوں نے ایک عجیب واقعہ میں 13 لوگوں کو وین سے کچل کر مار ڈالا تھا۔ وہاں سیکورٹی نظام زیادہ پختہ نہیں تھا جس کی وجہ سے ایسا ہوا، لیکن ہم شروع سے ہی محتاط ہیں۔

خیال رہے کہ یہ پہلی مرتبہ نہیں ہے کہ میئرنے متنازع کا حکم دیا ہے۔ اس سے پہلے انہوں نے اسکول میں 'ہم جنس پرستی پر لکھی ایک کتاب پر بھی پابندی لگا دی تھی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز