بھیڑ کے ذریعہ قتل پر امت شاه نے کیا مودی حکومت کا دفاع ، کانگریس کے دور اقتدار میں زیادہ واقعات ہوئے

Jul 02, 2017 10:32 AM IST | Updated on: Jul 02, 2017 10:45 AM IST

گوا : بی جے پی کے صدر امت شاہ نے ملک بھر میں بھیڑ کے ذریعہ پیٹ پیٹ کر قتل کے معاملے پر مودی حکومت کا دفاع کیا ہے ۔ گزشتہ روز امت شاہ نے کہا کہ بھیڑ کی طرف سے قتل کے سب سے زیادہ کیس سال 2011 سے 2013 کے درمیان، کانگریس کی مدت کے دوران سامنے آئے ۔ قابل ذکر ہے کہ حال ہی میں بیف کھانے کی افواہ پر بھیڑ کے ذریعہ قتل کے واقعات میں بے تحاشہ اضافہ ہوگیا ہے ۔ تازہ معاملہ 29 جون کو جھارکھنڈ کے رام گڑھ علاقہ میں پش آیا ، جہاں بھیڑ نے مسلم نوجوان علیم الدین کا قتل کردیا ۔

ان واقعات کو لے کر جب شاہ سے سوال پوحھا گیا تو انہوں نے کہا کہ میں موازنہ کرکے اس معاملہ کی سنگینی کو کم نہیں کرنا چاہتا ، میں اسے لے کر کافی سنجیدہ ہوں ، لیکن یہ سچ ہے کہ سال 2011، 2012 اور 2013 میں موب لنچنگ کے کئی معاملات سامنے آئے تھے ۔ ہمارے تین سال کی مدت کے دوران جتنے معاملات نہیں ہوئے، اس سے زیادہ ایک سال میں کانگریس کی مدت کار میں ہوئے ، مگر کبھی یہ سوال نہیں اٹھایا گیا ۔

بھیڑ کے ذریعہ قتل پر امت شاه نے کیا مودی حکومت کا دفاع ، کانگریس کے دور اقتدار میں زیادہ واقعات ہوئے

جن ستتا ڈاٹ کام کی رپورٹ کے مطابق امت شاہ نے یہ باتیں گوا میں نگر اداروں اور پنچایتوں کے نمائندوں کے ایک پروگرام کے دوران کہیں ۔ شاہ نے کہا کہ پارٹی ایسی حکومت بنانے کیلئے پابند عہد ہے ، جس میں تمام کمیونٹیز کے ساتھ یکساں برتاؤ ہو ایک اور سوال کے جواب میں شاہ نے کہا کہ جہاں تک بیف پر پابندی کی بات ہے ، اس پر عمل کرنے والی بی جے پی نہیں ہے ۔ گوا میں پہلے سے گئو کشی پر پابندی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سال 1976 سے یہاں ہے اور یہ تب ہوا تھا جب کانگریس کی حکومت تھی ، لیکن کسی نے کانگریس سے سوال نہیں پوچھا ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز