ایوت محل میں مسلم قبرستان کے لئے زمین دینے کا مہاراشٹر حکومت کا اعلان

Jul 21, 2017 08:47 AM IST | Updated on: Jul 21, 2017 08:47 AM IST

ممبئی۔  مہاراشٹر کے ایوت محل ضلع میں نگر پریشد کے تحت مسلم علاقے میں قبرستان کے لئے ڈھائی ایکٹر قطعہ اراضی دینے کا حکم دیا گیا ہے۔ مذکورہ مطالبہ کانگریس ایم ایل سی حسنہ بانو خلفے نے کیا تھا۔دراصل ایوت محل شہر کی توسیع کے نتیجے میں تین ایسے علاقے چند سال قبل شامل کئے گئے جہاں اقلیتی فرقے کی آبادی تھی اور خاتون ایم ایل سی نے اس تعلق سے گزشتہ سال ناگپور اجلا س کے دوران وزیر محصول چندرکانت پاٹل کو ایک مکتوب دے کر قبرستان کا مطالبہ کیا اور اسے سرکار نے منظوری دے دی ہے۔ حسنہ بانو خلفے نے کہا کہ گذشتہ کئی سالوں سے کوششیں جاری تھی لیکن اب مہاراشٹر کی بی جے پی قیادت والی حکومت نے اس کی منظوری دے دی اور ایوت محل کلکٹر کو فوری طور پر قطعہ اراضی قبرستان کے لئے دینے کا حکم جاری کیا۔

واضح رہیکہ مسلم قبرستان کے قیام کے لئے گذشتہ ریاستی اسمبلی اجلاس کے دوران کانگریس رکن قانون ساز حسنہ بانو خلفے نے مطالبہ کیا تھا، دراصل مسلم آبادی میں اضافہ کے پیش نظرموجودہ قبرستان ناکافی ہے اور مقامی افراد کو آخری رسومات کے لئے مختلف دقتوں کو جھیلنا پڑتا ہے اس لئے مسلم علاقے میں سرکاری قطعہ اراضی کا مطالبہ کیاگیا۔

ایوت محل میں مسلم قبرستان کے لئے زمین دینے کا مہاراشٹر حکومت کا اعلان

مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ دیویندر فڑنویس: فائل فوٹو

ریاستی اسمبلی کے اجلاس کے دوران انہوں نے اس معاملے کو ایوان میں اٹھایا تھا اس کے بعد سرکاری سطح پر میٹنگیں طلب کی گئی اور پھر وزیر محصول نے آج منترالیہ میں اسے منظوری دی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز