مسلم کنبہ نے فساد میں بچائی تھی جان ، شیف وکاس کھنہ نے 26 سال بعد ڈھونڈ نکالا

مشہور شیف وکاس کھنہ گزشتہ 26 سال سے رمضان کے مہینے میں ایک دن روزہ رکھتے ہیں۔ وہ ایسا اسلئے کرتے ہیں کیونکہ 1992 کے ممبئی فسادات میں ایک مسلم کنبہ نے ان کی جان بچائی تھی ۔

Jun 13, 2018 10:55 PM IST | Updated on: Jun 13, 2018 10:56 PM IST

مشہور شیف وکاس کھنہ گزشتہ 26 سال سے رمضان کے مہینے میں ایک دن روزہ رکھتے ہیں۔ وہ ایسا اسلئے کرتے ہیں کیونکہ 1992 کے ممبئی فسادات میں ایک مسلم کنبہ نے ان کی جان بچائی تھی ۔ اس سال ان کی ملاقات پھر سے اس کنبہ سے ہوگئی اور اس سے کھنہ کافی خوش ہیں۔ پیر کو انہوں نے ٹویٹ کرکے بتایا کہ کنبہ کو ڈھونڈ کر وہ کافی خوش ہیں اور اس مرتبہ اپنا روزہ ان کے ساتھ پورا کریں گے ۔ منگل کو انہوں نے پھر سے ٹویٹ کیا اور اس سے لگ رہا تھا کہ وہ اس کنبہ سے مل چکے ہیں۔

شیف وکاس کھنہ نے ٹویٹ کیا : دل خوش کردینے والی شام ، سارے دل ، آنسو ، درد ، فخر ، انسانیت ، عزت ، یہ میری زندگی کی سب سے اہم اور یادگار عید ہوگی ، میری روح سے ملانے کیلئے سب کا شکریہ ۔ نہوں نے سال 2015 میں فیس بک کے ذریعہ اس واقعہ کا ذکر کیا تھا۔

مسلم کنبہ نے فساد میں بچائی تھی جان ، شیف وکاس کھنہ نے 26 سال بعد ڈھونڈ نکالا

مشہور شیف وکاس کھنہ ۔ فائل فوٹو

اس میں لکھا تھا کہ ممبئی میں دسمبر 1992 میں جب فسادات ہوئے تو اس وقت سیراک شیریٹن میں ٹریننگ لے رہا تھا اور پورا شہر جل رہا تھا ، ہم کئی دنوں تک ہوٹل میں ہی پھنسے رہے ، اقبال خان اور وسیم بھائی ( ٹرینی شیف اور ایک ویٹر ، جس سے میرا رابطہ ہمیشہ کیلئے ٹوٹ گیا ) اور ان کے کنبہ نے اس دوران مجھے پناہ دی اور کھانا دیا ، اس سال کے بعد میں رمضان کے مقدس مہینے میں ایک دن روزہ رکھتا ہوں اور انہیں میری دعاوں میں یاد کرتا ہوں ، سبھی کو پیار ۔ وکاس کھنہ نے گزشتہ سال ایک انٹرویو میں اس واقعہ کا تفصیل سے ذکر کرتے ہوئے کہا تھا کہ کرفیو کی وجہ سے اسٹاف کا کوئی شخص ہوٹل سے نہ تو باہر جاپارہا تھا اور نہ ہی اندر آپارہا تھا ۔ ایک دن انہوں نے افواہ سنی کے گھاٹ کوپر میں فساد کی وجہ سے کئی لوگ زخمی ہوگئے ہیں ، ایسا سن کر اپنے بھائی کی فکر میں وہ گھاٹ کوپر کی طرف نکل پڑے جبکہ راستہ کا بھی علم نہیں تھا ۔راستے میں ایک مسلم کنبہ نے انہیں فساد کے بارے میں خبردار کیا اور پناہ دی۔ جلد ہی وہاں بھیڑ اکٹھا ہوگئی اور پوچھنے لگے کہ گھر میں کون آیا ہے ، اس پر مسلم کنبہ نے بتایا کہ وہ ان کا بیٹا ہے ، ایسا سننے کے بعد بھیڑ وہاں سے چلی گئی۔

بقول کھنہ دو دن تک میں ان کے یہاں سویا ، مجھے ان کے بارے میں کوئی علم نہیں تھا ، اس کنبہ نے میرے اہل خانہ کو ڈھوندنے کیلئے بھیجا اور وہ محفوظ ملا ، اس سال کے بعد میں ہر سال رمضان میں ایک روزہ رکھتا ہوں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز