یوم اطفال پر خاص: غربت سے دوچار گلفشاں خان نے تعلیمی بیداری کی چلائی مہم

Nov 14, 2017 08:06 PM IST | Updated on: Nov 14, 2017 08:06 PM IST

 ممبئی۔ آج ملک بھر میں دھوم دھام کے ساتھ چلڈرن ڈے منایا جارہا ہے۔ خاص طور پر اسکولوں میں مختلف پروگرام منعقد ہوتے ہیں، جہاں اساتذہ بچوں کو اس دن و تعلیم کی اہمیت سے روشناش کراتے ہیں ۔ لیکن ان سب کے باوجود ہمارے ملک میں لاکھوں ایسے بچے ہیں جو مختلف مسائل کے شکار ہیں۔ انہیں تعلیم چھوڑنی پڑی ہے۔ ان بچوں کا بچپن معاشی بوجھ اٹھاتے اور کام کرتے گزرجاتا ہے ۔ لیکن انہیں کے درمیان اس تصویر کے برعکس کچھ ایسے چہرے بھی ہیں جو تمام تر مشکلات و پریشانیوں کو درکنار کرتے ہوئے موجودہ حالات کے ساتھ قدم سے قدم ملا رہے ہیں اور دوسروں کے لئے مثال بنتے ہیں۔ ان میں اہم نام ممبئی کی گلفشاں خان کا ہے جس نے تعلیم چھوڑنے کے باوجود نہ صرف دوبارہ تعلیم شروع کی بلکہ دوسرے بچوں کو بھی تعلیم کی جانب مائل کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

ممبئی جیسے بڑے شہر کے اریہ کالونی بستی میں گلفشاں خان اپنے والدین کے ساتھ رہتی ہے لیکن عام ہندوستانی خاندان کے برعکس اس گھرکو چلانے کی ذمداری گلفشاں کی ماں کے کاندھوں پر ہے جو اپنا، اپنے بچوں و شوہر کا پیٹ پالنے کے لئے دوسروں کے گھروں میں کام کرتی ہے۔  اس طرح اس گھر کی گاڑی چلتی ہے۔ ماں کی معاشی مدد کے لئے گلفشاں کو بھی اپنی تعلیم چھوڑنی پڑی تھی ۔

یوم اطفال پر خاص: غربت سے دوچار گلفشاں خان نے تعلیمی بیداری کی چلائی مہم

معاشی بدحالی کے سبب گلفشاں تعلیم چھوڑ کر کام کاج سے وابستہ ہوئی۔ اسے امیر گھرانوں کے بچوں اور ان کو ملنے والی سہولیات کو دیکھ کر اپنے حالات پر مایوسی ہوتی تھی۔ تاہم گلفشاں نے مایوس ہونے کے بجائے اس بات کو محسوس کیا کہ اگر تعلیم حاصل کی جائے تو حالات بدل سکتے ہیں۔ اور پھر اس نے میونسپل اسکول میں جہاں فیس کا بوجھ نہیں تھا، دوبارہ تعلیم شروع کی۔ اپنی تعلیمی کارکردگی سے گلفشاں نے اساتذہ کو متوجہ کرایا اور دیگر بچوں کو بھی اپنے ساتھ تعلیم کی راہ پر گامزن کرایا ۔ گلفشاں نے  اپنے علاقے کے بیشتر بچوں کا داخلہ میونسپل اسکول میں کرایا اور آج ایک گروپ کے ساتھ وہ اسکول جاتی ہے۔  والدہ نے بھی بیٹی کو تعلیم پر توجہ دی جو یونیسیف و دیگر این جی او کی مدد سے نہ صرف خود تعلیم حاصل کررہی ہے بلکہ دوسرے بچوں کی اعلی تعلیم کے لئے بھی پیش پیش رہتی ہے۔ تعلیم کے لئے گلفشاں کی جدوجہد نے گلفشاں کو خاص بنایا ہے ۔ مختلف تنظیموں نے اسکی کاوشوں کو سراہا ہے۔ گلفشاں کے مطابق غریب بچوں کے لئے اسکول تو بنائے جاتے ہیں لیکن سہولیات فراہم نہیں کی جاتی ہیں ۔

ری کمنڈیڈ اسٹوریز