اورنگ آباد میں روایتی انداز میں سنی علمبردار کمیٹی کی سواریاں اور شیعہ کا ماتم ہوا ساتھ ساتھ

Oct 01, 2017 08:41 PM IST | Updated on: Oct 01, 2017 08:41 PM IST

اورنگ آباد: یوم عاشورہ کی مناسبت سے اورنگ آباد شہر میں شیعہ سنی اتحاد کی مثال پورے ملک میں مشہور ہے۔ اورنگ آباد واحد شہر کہا جا سکتا ہے ، جہاں ایک ہی مقام پر شیعہ برادران ماتم کرتے ہیں توسنیوں کے علم اور سواریوں کا مجمع بھی لگتا ہے ۔یہ روایت پچھلی کئی دہائیوں سے جاری ہے ۔

نواسہ رسول حضرت امام حسین نے اسلامی اقدار کے تحفظ کے لیے اپنے بہتر جانثاروں کے ساتھ کربلا کے میدان میں جوجام شہادت نوش کیا، یہ شہادت تاریخ اسلام کا وہ عظیم سانحہ ہے ، جسے شیعہ اور سنی اپنے اپنے انداز میں مناتے ہیں۔ شیعہ طبقے میں محرم کے دس روز ماتمی مجالس اور اعزاداری کا اہتمام کیا جاتا ہے ،نوحہ خوانی ہوتی ہے ۔ تو سنی طبقہ میں سواریاں بٹھائی جاتی ہیں اور شہادت حسین کی یاد کو تازہ کیا جاتا ہے ۔

اورنگ آباد میں روایتی انداز میں سنی علمبردار کمیٹی کی سواریاں اور شیعہ کا ماتم ہوا ساتھ ساتھ

یوم عاشورہ کو اورنگ آباد کے سٹی چوک علاقہ میں مجمع لگتا ہے ، جہاں پورے شہر کی سواریوں کے علمبردارجمع ہوتے ہیں ۔ علمبرادر کمیٹی کے صدر رشید ماموں نے اسے باہمی اتحاد کی علامت قرار دیا۔ عبدالرشید ماموں کے مطابق اورنگ آباد میں 98 سواریاں بٹھائی جاتی ہیں ۔ شیعہ برادران کا ماتمی جلوس نکلتا ہے ۔ اس میں مذہبی پیشوا اور اعلی سرکاری افسران بھی شامل ہوتے ہیں۔ یہ سب ایک ہی مقام پر ہوتا ہے۔ پورے ملک میں آپ کو ایسی مثال دیکھنے کو نہیں ملے گی۔ یہ سلسلہ پچھلے کافی برسوں سے جاری ہے اور ہم ایک دوسرے کا احترام کرتے ہیں ۔ کبھی کوئی ناخوشگوارواقعہ پیش نہیں آیا۔ شیعہ سنی اتحاد پرہمیں فخر ہے۔ ملک میں ہندو مسلم بھائی چارہ بھی اسی طرح ہونا چاہئے ۔

یوم عاشورہ کے موقع پر شیعہ برادران کا ماتمی جلوس علی الصبح محمد نواب عاشور خانہ فاضل پورہ سے نکلتا ہے۔ یہ جلوس شہر کے مختلف علاقوں میں گشت کرتا ہوتا دیوان دیورھی میں واقع سالار جنگ عاشور خانہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوتا ہے ۔ اس ماتمی جلوس میں زنجیری ماتم دیکھنے کے لیے ہزاروں افراد کا مجمع جمع ہوتا ہے ۔ اس موقع پر شیعہ برادران اعزاداری کرتے ہوئے اپنے آپ کو لہولہان کرتے ہیں۔ اس ماتم میں نوجوان پیش پیش رہتے ہیں ۔

اورنگ آباد شہر میں محرم کا جلوس دیکھنے کے لیے اطراف و اکناف سے بڑی تعداد میں لوگ شہر کا رخ کرتے ہیں۔ اس دن کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جاسکتا ہے کہ سنی طبقہ میں نو محرم اور دس محرم کو روزہ رکھا جاتا ہے اور اپنےاہل وعیال پر دل کھول کر خرچ کیا جاتا ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز