آدھی رات کے بعد ہونے والی ووٹوں کی گنتی میں پٹیل، شاہ اور ایرانی فاتح

Aug 09, 2017 09:35 AM IST | Updated on: Aug 09, 2017 09:35 AM IST

گاندھی نگر۔  وزیر اعظم نریندر مودی کی آبائی ریاست گجرات میں تین سیٹوں پر ہونے والے  ڈرامائی واقعات اور کئی کراس ووٹنگ کے درمیان راجیہ سبھا انتخاب کی آدھی رات کے بعد ہوئی ووٹوں کی گنتی میں کانگریس کے امیدواراور سونیا گاندھی کے سیاسی سکریٹری احمد پٹیل، بی جے پی کے صدر امت شاہ اور مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی جیت گئے۔ حالانکہ بی جے پی کے تیسرے امیدوار کانگریس چھوڑ کر بی جے پی میں شامل ہونے والے بلونت سنگھ راجپوت اور سابق وزیر اعلی شنكرسنگھ واگھیلا کے قریبی رشتہ دار معمولی فرق سے ہار گئے۔ مسٹر واگھیلا سمیت ان کے حامی سات اراکین اسمبلی نے بی جے پی کے لئے ووٹنگ کی تھی۔

الیکشن کمیشن نے بی جے پی کے لئے کراس ووٹنگ کرنے والے کانگریس کے واگھیلا خیمے کے دو ممبران اسمبلی راگھوجي پٹیل اور بھولا گوہل کے ووٹ منسوخ کر دیئے۔ اس کے بعد آدھی رات کے بعد ڈیڑھ بجے کے آس پاس ووٹوں کی گنتی شروع ہوئی۔ پولنگ کے وقت سے دو گھنٹے پہلے تقریبا دو بجے ہی مکمل ہو گیا تھا۔ ووٹوں کی گنتی شام پانچ بجے سے ہونی تھی۔ مگر کانگریس کے اعتراض کے بعد یہ روک دی گئی تھی۔

آدھی رات کے بعد ہونے والی ووٹوں کی گنتی میں پٹیل، شاہ اور ایرانی فاتح

ابتدائی غیر سرکاری اعدادو شمار کے مطابق مسٹر شاہ اور محترمہ ایرانی کو 46 ووٹ ملے جبکہ مسٹر پٹیل کو 44 ووٹ ملے : گیٹی امیجیز

ابتدائی غیر سرکاری اعدادو شمار کے مطابق مسٹر شاہ اور محترمہ ایرانی کو 46 ووٹ ملے جبکہ مسٹر پٹیل کو 44 ووٹ ملے۔ کل 176 اراکین اسمبلی نے ووٹ دیا تھا مگر دو ووٹ رد ہونے سے فتح کے لئے کم از کم 44 ووٹ کی ضرورت ہو گئی۔ مسٹر پٹیل نے پانچویں بار راجیہ سبھا انتخابات میں جیت کے بعد کہا کہ اس سال گجرات اسمبلی انتخابات میں بھی کانگریس جیتے گی۔ دریں اثنا، کانگریس کو جیت کے باوجود توقع سے بہت کم ووٹ ملے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز