گجرات : چار کانگریسی اراکین اسمبلی کا بی جے پی پر لبھانے کا الزام ، الیکشن کمیشن سے کارروائی کا مطالبہ

Jul 28, 2017 08:36 PM IST | Updated on: Jul 28, 2017 08:36 PM IST

احمد آباد: گجرات میں گزشتہ 24 گھنٹے میں اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس کے چیف لیڈر سمیت کم از کم چھ ممبران اسمبلی کے استعفی دینے کے درمیان پارٹی کے چار ممبران اسمبلی نے آج قومی ترجمان رنديپ سورجےوالا کی موجودگی میں دعوی کیا کہ حکمراں بی جے پی کے دلالوں نے ،جن میں مبینہ طور پر ایک آئی پی ایس افسر بھی شامل تھا، پانسہ بدلنے کے لئے ان کو پانچ سے دس کروڑ روپے دینے اور اس سال ہونے والے اسمبلی انتخابات کے لئے ٹکٹ اور الیکشن لڑنے کا خرچ وغیرہ دینے کی لالچ دی ہے۔

پارٹی کے چار اراکین پونابھاي گامت، امت چودھری، ایشور پٹیل اور منگل گامت کے الزام کے بعد مسٹر سورجےوالا نے یہاں منعقد ہ پریس کانفرنس میں حکمراں بی جے پی پر پیسے کی طاقت اور اقتدار کا غلط استعمال کر کے پارٹی کے ممبران اسمبلی کی خرید و فروخت اور آئندہ 8 اگست کے راجیہ سبھا انتخابات کو متاثر کرنے کی کوشش کرنے کا الزام لگاتے ہوئے الیکشن کمیشن سے اس سنگین معاملے کا نوٹس لینے اور مجرمانہ معاملہ درج کرکے مناسب کارروائی کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس میں صرف عوامی نمائندگی ایکٹ کے تحت ہی نہیں بلکہ تعزیرات ہند یعنی آئی پی سی اور انسداد بدعنوانی ایکٹ کے تحت کیس درج ہونا چاہئے۔

گجرات : چار کانگریسی اراکین اسمبلی کا بی جے پی پر لبھانے کا الزام ، الیکشن کمیشن سے کارروائی کا مطالبہ

انہوں نے کہا کہ راجیہ سبھا الیکشن میں امیدوار بی جے پی صدر امت شاہ اور گجرات کے وزیر اعلی وجے روپاني کو بھی اس معاملے میں ریاست کے عوام كو جواب دینا چاہئے۔ مسٹر سورجےوالا نے بی جے پی پر جمہوریت کو کچلنے اور دن دہاڑے اس کو قتل کرنے اور آئینی ضوابط کو تار تار کرنے کا الزام بھی لگایا۔ بی جے پی کے پاس راجیہ سبھا کی مذکورہ تین سیٹوں میں سے صرف دو پر ہی جیت کے لئے ضروری تعداد ہے، اسی لئے یہ اقتدار کے لئے اندھی ہو گئی ہے۔ چاروں ممبران اسمبلی نے اس موقع پر اپنے الزام بھی دوهرائے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز