ممبئی عمارت حادثہ میں ہلاک شدگان کی تعداد 34 تک پہنچی ، متعدد کی حالت ہنوز سنگین ، معاوضہ کا اعلان

جنوبی ممبئی کے بھنڈی بازار علاقے میں سو سال سے زائد پرانی خستہ حال عمارت حسینی منزل حادثے میں مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 34 ہوگئی ہے۔

Sep 01, 2017 01:05 PM IST | Updated on: Sep 01, 2017 01:07 PM IST

ممبئی: جنوبی ممبئی کے بھنڈی بازار علاقے میں سو سال سے زائد پرانی خستہ حال عمارت حسینی منزل حادثے میں مرنے والوں کی تعداد بڑھ کر 34 ہوگئی ہے۔ ممبئی پولیس کے ترجمان رشمی کراندی کر نے آج بتایا کہ اس حادثے میں 34 افراد ہلاک ہو گئے ہیں اور 15 افراد زخمی ہوئے ہیں جن میں سے کچھ کی حالت سنگین ہیں۔ ملبے میں بعض افراد کے دبے ہونے کا اندیشہ ہے۔

قابل ذکر ہے کہ کل صبح 8:30 بجے عمارت منہدم ہوگئی تھی۔ اب تک 60 افراد کو ملبے سے نکالایا گیا ہے۔وزیر اعلی دیوندرفڑنویس نے مہلوکین کےورثا کو 5 لاکھ روپئے امداد کا ​​اعلان کیا ہے۔ عینی شاہدین کے مطابق ایک بڑا حادثہ ٹل گیا کیوں کہ اس واقعہ کے دہ گھنٹے بعد ہی اس عمارت چلنے والے نرسری پلے اسکول کے کھلنے کا وقت تھا جس میں 25 معصوم بچے رہتے ہیں۔ اس طرح، دو گھنٹوں پہلے اس حادثے کی وجہ سے، ایک بڑا حادثہ ٹل گیا تھا۔

ممبئی عمارت حادثہ میں ہلاک شدگان کی تعداد 34 تک پہنچی ، متعدد کی حالت ہنوز سنگین ، معاوضہ کا اعلان

بی ایم سی کے ایک بلیٹن کے مطابق، اس عمارت میں ایک خالی گودام ہے اور کل دس کرایہ دار ہیں۔ یہ عمارت مہاراشٹر ہاؤسنگ اور علاقائی ڈویلپمنٹ کارپوریشن کی جانب سے سیس پرہے جو سیفی برہانی اپلیفٹمنٹ ٹرسٹ ری ڈیولپمنٹ (ای بی یو ٹی)) منصوبے کا حصہ ہے۔ بی ایم سی کے ایک اہلکار نے کہا، ’’اس خطرناک عمارت کو 2011 میں خالی کرنے کا نوٹس دیا گیا تھا۔ اس میں رہنے والے لوگوں کو ایس بی یو ٹی منصوبے کے لئے بھی گھر خالی کرنے کو کہا گیا تھا لیکن کسی نے بھی انتباہ کی پرواہ نہیں کی‘‘۔

فائر بریگیڈ کے حکام کے مطابق، عمارت کے دو حصے مکمل طور پر تباہ ہوچکے ہیں ۔ اس سال 26 جولائی کو گھاٹ کوپر میں چار منزلہ عمارت منہدم ہونے 17 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ اس عمارت میں تقریبا 12 خاندان رہتےتھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز