گجرات اسمبلی انتخابات : وزیر اعظم مودی کا سونیا گاندھی کے مشیر احمد پٹیل پر نشانہ ، کہی یہ بات ؟

Dec 03, 2017 09:24 PM IST | Updated on: Dec 03, 2017 09:24 PM IST

بھڑوچ : وزیر اعظم نریندرمودی نے آج سے شروع ہوئے اپنی آبائی ریاست گجرات کے دوروزہ انتخابی دورے کےدورران پہلی ریلی میں کانگریس کےساتھ ہی پارٹی صدر سونیاگاندھی کے سیاسی سکریٹری اور مسلسل پانچ بار سے راجیہ سبھا کے رکن احمدپٹیل کو ہدف تنقیدبنایا۔مسٹرمودی نے مسٹر پٹیل کے آبائی ضلع بھڑوچ کے آمودمیں انتخابی ریلی میں انکا نام لئے بغیریوپی اے حکومت کی یاد دلاتے ہوئے کہا ’’اتنا اختیار آپ کے پاس تھا۔وزیر اعظم خود آپ پر انحصار کرتےتھے اور وزیر اعظم کی رہائش گاہ کے دروازے آپ کے لئے کھلے رہتے تھے اور گاندھی نہرو خاندان آپ پر بھروسہ کرتاتھا۔ اگر آپ کے اندر گجرات اور بھڑوچ کے لئے ذرہ برابربھی جذبہ ہوتا تو آپ نے کچھ کیا ہوتا۔آپ نے نرمدا پر ایک پل تک نہیں بنایا۔‘‘

انھوں نے گزشتہ اگست میں ہوئے راجیہ سبھا انتخابات میں امیدواررہے مسٹر پٹیل کے حامی کانگریسی ممبران اسمبلی کو بنگلورکے ایک ریزارٹ میں رکھے جانے کے واقعہ کا بھی ذکر کرتے ہوئے کہا کہ بناس کانٹھامیں سیلاب کی تباہی کے وقت وہ ذاتی مفاد کےلئے ممبران اسمبلی کو تفریح کرانے کے لئے باہر لے گئے ۔مسٹر مودی نے کہا کہ گجرات میں کوئی بھی کانگریس لیڈر ان سے (مسٹر پٹیل )سے پوچھےبغیر پانی تک نہیں پی سکتا۔انھوں نے کہا کہ خودکو شیرخاں سمجھنے والے اس لیڈر کو سبق سکھانےکے لئے لوگ ضلع سے کانگریس کا صفایا کردیں۔

گجرات اسمبلی انتخابات : وزیر اعظم مودی کا سونیا گاندھی کے مشیر احمد پٹیل پر نشانہ ، کہی یہ بات ؟

کانگریس راجیہ سبھا رکن احمد پٹیل: فائل فوٹو، گیٹی امیجیز۔

مسٹرمودی نے اترپردیش کے بلدیاتی انتخابات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ اترپردیش کے لوگ کانگریس کو اچھی طرح پہچان گئے ہیں ۔کانگریس کو کئی وزیر اعظم دینے والی اور موتی لعل نہرو،جواہرلعل نہرو،اندراگاندھی ،راجیوگاندھی ،سونیا گاندھی اور راہل گاندھی (راہل گاندھی کانام براہ راست نہیں اشارے میں لیا)جیسے لیڈروں کی میدان عمل ریاست میں کانگریس کا کیا ہوا۔گجرات کے عوام بھی کانگریس کو اچھی طرح جانتے ہیں ۔کانگریس نے ذات پات اور کنبہ پروری میں 70سال برباد کیا ہے ۔

مسٹر مودی نے کہا کہ گجرات میں بی جے پی اکثریت سے انتخاب جیتے گی ۔کانگریس کے پاس بچنے کا کوئی راستہ نہیں ہے تو یہ لوگوں کو لڑانے کی سیاست کا سہارا لینے کی کوشش کررہی ہے لیکن عوام یہ سب سمجھتے ہیں ۔گجرات میں مسلمانوں کی زیادہ آبادی والے دوضلعے کچھ اور بھڑوچ بی جے پی کے دورحکومت میں ترقی کےمعاملے میں بھی صف اول کے ضلعوں میں شمار ہوتے ہیں۔انھوں نے الزام لگایا کہ کانگریس موقع دیکھ کر رنگ بدلنے کا کام کرتی ہے ۔مسٹر مودی نے کہا کہ بلیٹ ٹرین کے لئے منموہن حکومت نے بھی 2012میں اعلان کیا تھا لیکن اسے جاپاب سے پیسے نہیں مل پائے ۔وہ اس کے لئے تقریبا مفت ایک کروڑ لے آئے ۔مسٹر مودی نے اپنے خطاب میں بی جے پی اور کانگریس کے دورحکومت میں گجرات کی ترقی کا موازنہ بھی کیا اور کہا کہ انکی حکومت نے مغربی ساحل کے 1300جزیروں کی ترقی کے لئے ایک منصوبہ بنایا ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز