گجرات اسمبلی انتخابات کا ہر جگہ چرچا ، مگر اس اہم تاریخی شہر پر اب تک نہیں چڑھ سکا ہے انتخابی رنگ

گجرات میں اسمبلی انتخابات کی بحث جگہ جگہ ہونے لگی ہے لیکن سیاست اور معیشت کا مرکز مانے جانے والے اس تاریخی شہر میں اب بھی انتخابی رنگ نہیں چڑھ سکا ہے۔

Nov 25, 2017 12:16 PM IST | Updated on: Nov 25, 2017 12:16 PM IST

احمد آباد: گجرات میں اسمبلی انتخابات کی بحث جگہ جگہ ہونے لگی ہے لیکن سیاست اور معیشت کا مرکز مانے جانے والے اس تاریخی شہر میں اب بھی انتخابی رنگ نہیں چڑھ سکا ہے۔صنعتی، کاروباری اور تعلیم کا مرکز مانے جانے والے اس شہر میں پہلے مرحلے کی ووٹنگ نو دسمبر کو ہونے والی ہے اس کے باوجود یہاں نہ تو کسی پارٹی کا جھنڈا، بینر، پوسٹر وغیرہ نظر آ رہا ہے اور نہ ہی کوئی سیاسی گہما گہمی دکھائی دے رہی ہے ۔ریاست میں برسراقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اور اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس کے لیڈروں کا دورہ شروع ہو گیا ہے اس کے باوجود شہر اداس ہے۔

تقریبا 70 لاکھ کی آبادی والے اس شہر میں کل 16 اسمبلی نشستیں ہیں۔ شہر میں پرائیویٹ کمپنیوں کے بینر پوسٹر تو نظرآ جاتے ہیں لیکن سیاسی پارٹیوں کی اس طرح کی کوئی مہم نہیں چل رہی ہے۔اس شہر کے اہم مقامات پربی جے پی اور کانگریس کے عالیشان دفاتر ہیں لیکن وہاں کوئی خاص چہل پہل نہیں ہے۔

گجرات اسمبلی انتخابات کا ہر جگہ چرچا ، مگر اس اہم تاریخی شہر پر اب تک نہیں چڑھ سکا ہے انتخابی رنگ

بی جے پی نے اپنے دفتر کے علاوہ ایس جی روڈ میں میڈیا سینٹر بنایا ہے جہاں سے انتخابی مہم کا کام چلایا جا رہا ہے۔ کارپوریٹ گھرانوں کے دفاتر کی طرز پر بنے یہ سینٹرز جدید سہولیات سے لیس ہے اور یہاں رہنماؤں کے پریس کانفرنس کے لئے اسٹوڈیو جیسی سہولیات دستیاب کرائی گئی ہے۔اس دفتر کے باہر ایک ہورڈنگ نصب ہے جس پر وزیر اعظم نریندر مودی اور بی جے پی صدر امت شاہ کے علاوہ کچھ مقامی لیڈروں کی تصویریں ہیں۔

یہاں کانگریس کی آفس بھی کارپوریٹ گھرانوں کی طرز پر ہی شاندار بنایا گیا ہے۔ راجیو گاندھی بھون میں تمام جدید سہولیات دستیاب ہیں لیکن یہاں کوئی خاص سرگرمی نہیں ہے۔ اس بابت پوچھے جانے پر دفتر کے کارکنوں نے بتایا کہ تمام عہدیدار پارٹی نائب صدر راہل گاندھی کے پروگرام میں مصروف ہیں۔

Loading...

مسٹر گاندھی کل سے ہی ریاست کے دورے پر ہیں۔راہل گاندھی نے کل شام ہی کو شہر کے مشرقی علاقے میں ایک روڈ شو کیا اور لوگوں کو خطاب کیا۔ کانگریس کے دفتر کے باہر جو ہورڈنگز نصب ہیں ان میں سے ایک میں سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ کی ایک بڑی سی تصویر لگی ہے۔ اس کے علاوہ کانگریس صدر سونیا گاندھی اور پارٹی کے دیگر مقامی لیڈروں کی چھوٹی چھوٹی تصویر یں ہیں۔ دوسرے ہورڈنگز میں مسز گاندھی کی بڑی سی تصویر لگی ہے، جس میں دیگر مقامی لیڈروں کی تصویر ہے۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز