بی جے پی کو کرارا جھٹکا، نکھل سوانی نے خرید وفروخت کا الزام لگا کر پارٹی چھوڑی

حال ہی میں بی جے پی میں شامل ہوئے نکھل سوانی نے پارٹی پر خرید وفروخت کا الزام عائد کرتے ہوئے استعفیٰ دے دیا ہے۔

Oct 23, 2017 03:03 PM IST | Updated on: Oct 23, 2017 03:03 PM IST

احمد آباد۔ گجرات اسمبلی انتخابات سے ٹھیک پہلے پاٹیدار معاشرے کی جانب سے بی جے پی کو دو جھٹکے لگے ہیں، جس سے پارٹی بیک فٹ پر آ گئی ہے۔ حال ہی میں بی جے پی میں شامل ہوئے نکھل سوانی نے پارٹی پر خرید وفروخت کا الزام عائد کرتے ہوئے استعفیٰ دے دیا ہے۔ اسی طرح اس سے پہلے ایک اور پاٹیدار رہنما نریندر پٹیل نے بی جی پی پر 1 کروڑ کا لالچ دینے کا الزام لگایا ہے۔

گزشتہ چھبیس ستمبر کو پاٹیدار انامت آندولن سمیتی کے رہنما نکھل سوانی پاٹیدار کمیونٹی کے قریب ڈیڑھ سو لوگوں کے ساتھ بی جے پی میں دھوم دھام سے یہ کہتے ہوئے شامل ہوئے تھے کہ ریاستی حکومت ان کے سماج کے مفاد کے لئے کام کر رہی ہے، لیکن آج بی جے پی کو سخت جھٹکا دیتے ہوئے انہوں نے بی جے پی چھوڑ دی۔ سوانی نے الزام لگایا کہ بی جے پی نے جن منصوبوں کا اعلان کیا تھا وہ صرف انتخابی ہتھکنڈا ثابت ہوا۔ سوانی نے کہا کہ جو پاٹیداروں کے مفاد کی بات کرے گا وہ ان کی حمایت کریں گے اور اس سلسلے میں وہ راہل گاندھی سے بھی ملیں گے۔

بی جے پی کو کرارا جھٹکا، نکھل سوانی نے خرید وفروخت کا الزام لگا کر پارٹی چھوڑی

نکھل سوانی اور نریندر پٹیل

اس سے قبل پاٹیدار انامت آندولن سمیتی کے کنوینر نریندر پٹیل نے بی جے پی پر سنگین الزام لگایا ہے۔ نریندر پٹیل نے کہا کہ حال ہی میں بی جے پی میں شامل ہوئے ورون پٹیل نے انہیں بی جی پی میں شامل ہونے کے لئے 1 کروڑ روپے کی پیشکش کی تھی۔ مجھے پیشگی طور پر 10 لاکھ روپے دیئے گئے ہیں۔ 1 کروڑ کیا ریزرو بینک بھی مجھے خرید نہیں سکتا۔ نریندر نے یہ بھی بتایا کہ انہیں ایک کروڑ روپے کی پہلی قسط 10 لاکھ روپے دی جا چکی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز