جن لوگوں کی اپنی ہی بیوی ساتھ نہیں ، وہ مسلم خواتین کو حق دلوانے کی بات کر رہے ہیں :آچاریہ پرمود کرشن

May 08, 2017 10:27 PM IST | Updated on: May 08, 2017 11:06 PM IST

احمد آباد :جمعیت علمائے ہند گجرات یونٹ کے جانب سے ملک میں مذہب کی بنیاد پر بڑھتی خلیج کو پاٹنے کے مقصد سے قومی اتحاد کانفرنس کا انعقاد کیا گیا ۔اس موقع پرسبھی لوگ ایک دوسرے کا ہاتھ پکڑ کر قومی اتحاد زندہ باد کے نعرے کو بلند کرتے ہوئے نظر آئے۔احمد آباد کے تاریخ میں پہلی مرتبہ ایسا ہو رہا تھا کہ تمام مذاہب کے پیروکار ایک ساتھ ایک اسٹیج پر بیٹھے ہوئے نظر آئے ۔ کہیں سے جے سردار، جے پاٹیدار کے نعرے کی آواز آئی ،تو کہیں سےدلت مسلم اتحاد کے نعرے بلند کئے گئے۔

احمد آباد کے سابرمتی ریورفرنٹ پر منعقدہ کانفرنس میں تمام مذہب کےذمہ داران قومی اتحاد کا پیغام دیتے ہوئے نظر آئے ۔ کانفرنس کے آخر میں ملک کے امن کے لئے دعا مانگی گئی ۔ساتھ ہی ساتھ تمام مذاہب سے وابستہ لوگوں نے یہ عہد بھی کیا کہ اب اس طریقے کے پروگرام بار بار منعقد کئے جاتے رہیں گے ، تاکہ لوگ ایک دوسرے سے ملتے ر ہیں اور دلوں کے فاصلے کو دور کرتے رہے ہیں۔

جن لوگوں کی اپنی ہی بیوی ساتھ نہیں ، وہ مسلم خواتین کو حق دلوانے کی بات کر رہے ہیں :آچاریہ پرمود کرشن

کانفرنس میں دہلی سےآئے آچاریہ پرمود کرشن نے کہا کہ آج جس طریقہ سے ہندوستان کا ماہول خراب ہے ، ایسے میں قومی اتحاد کی سخت ضرورت محسوس کی جا رہی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک وقت میں مہاتما گاندھی نے ملک کو ملانے کا کام کیا تھا، وہی کام آج مولانا ارشد مدنی کر رہے ہیں ۔ لہذا میں انہیں آج کا گاندھی مانتا ہوں ۔ ساتھ ہی ساتھ انہوں نے آرایس ایس پر حملہ بولتے ہوئے کہا کہ انگریزوں کی مخبری کرنے والے لوگ آج ہندوستان کی مسلم برادری کے لوگوں سے سرٹیفکیٹ مانگتے ہیں۔

آچاریہ پرمود کرشن یہیں نہیں رکے ،انہوں نے کھل کر تین طلاق پر اپنی رائے رکھتے ہوئے کہا کہ جن لوگوں کی اپنی ہی بیوی ساتھ نہیں ہے ، وہ آج مسلم خواتین کو ان کا حق دلوانے کی بات کر رہے ہیں ۔ یہ اپنے آپ میں ایک مذاق ہے ۔ آچاریہ پرمود کرشن نے ہندو قوم اور گئوركشا پر اپنی رائے رکھتے ہوئے کہا کہ ہندو مذہب کسی بے گناہ کی جان لینے کا حکم نہیں دیتا۔

قومی اتحاد کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا ارشد مدنی نے جمعیت علمائے ہند کی تاریخ پر روشنی ڈالی۔ انہوں نےکہا کہ ہندوستان کو آزاد کروانے کے لیے جمعیت علمائے ہند نے ناقابل فراموش کردار ادا کیا ۔ کانگریس پارٹی کے وجود میں آنے سے 80 سال پہلے سے جمعیت علمائے ہند کام کر رہی ہے۔ مولانا ارشد مدنی نے کہا کہ ہندوستان کو آج کچھ لوگ ہندو راشٹر بنانا چاہتے ہیں یہ بالکل بھی برداشت نہیں کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ 2002 گجرات فسادات میں مودی کی پوری کابینہ لگی ہوئی تھی ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز