دفاعی وکلا کی جرح سے بوکھلائے استغاثہ نے معاملے کی سماعت پر روک لگائی

Jun 13, 2017 03:58 PM IST | Updated on: Jun 13, 2017 03:58 PM IST

ممبئی۔ 13/7 ممبئی سلسلہ وار بم دھماکوں میں مبینہ طور پر استعمال شدہ چوری کی ہوئی دو موٹر سائیکلوں کے معاملے کی سماعت کررہی ممبئی کی سیوڑی مجسٹریٹ عدالت نے گذشتہ ماہ استغاثہ کی عرضداشت پر معاملے کی سماعت پر فوری طور پر روک لگانے کے احکامات جاری کئے تھے جس کے بعد سیوڑی عدالت کے فیصلہ کو ممبئی سیشن عدالت میں چیلنج کیا گیا تھا جس کی سماعت کے دوران سیشن عدالت نے نچلی عدالت کے فیصلہ کو برقرار رکھتے ہوئے معاملے کی سماعت پر جاری اسٹے کو درست ٹھہرایا۔ موصولہ اطلاعات کے مطابق اس معاملے کا سامنا کررہے ملزمین نقی احمد وسعی احمد شیخ اور ندیم اختر اشفاق شیخ کو قانونی امداد فراہم کرنے والی تنظیم جمعیت علمامہاراشٹر (ارشد مدنی) قانونی امداد کمیٹی کے سربراہ گلزار اعظمی نے بتایا کہ سیوڑی عدالت کے مجسٹریٹ سی وی مہاترے کے روبرو معاملے کی سماعت جاری تھی اور سرکاری گواہوں کے بیانات کا اندارج جاری تھا لیکن دفاعی وکیل ایڈوکیٹ عبدالوہاب خان نے سرکاری گواہان سے دوران جرح ایسے سوالات پوچھے جس کا ان کے پاس کوئی جواب نہیں تھا اور وہ اپنے سابقہ بیانات سے منحرف ہوتے نظر آرہے تھے اسے دیکھتے ہوئے سرکاری وکیل نے مکوکا قانون کی دفعہ10 کا حوالہ دیتے ہوئے عدالت سے گذارش کی تھی کہ وہ معاملے کی سماعت کو فوراً روکے کیونکہ اسی مقدمہ سے منسلک 13/7 ممبئی سلسلہ وار بم دھماکہ معاملے میں اس کا اثر پڑے گا۔

گلزار اعظمی نے کہا کہ سرکاری گواہوں کو یکے بعد دیگر ٹوٹتادیکھتے ہوئے سرکاری وکیل نے مکوکا قانون کی دفعہ 10کا بہانہ بناکر معاملے کو روک دیا جبکہ ابھی 13/7 سلسلہ واربم دھماکہ معاملے کی سماعت شروع بھی نہیں ہوئی ہے لہذا جمعیت علما نے سیوڑی عدالت کے فیصلہ کو ممبئی سیشن عدالت میں چیلنج کیا تھا جس کی سماعت کے بعد سیشن عدالت نے استغاثہ کے حق میں فیصلہ صادر کیا اور سیوڑی عدالت کے فیصلہ کو برقرار رکھا۔ گلزار اعظمی نے کہا کہ وہ سیشن عدالت کے فیصلہ سے مطمین نہیں ہیں اور انہوں نے سیشن عدالت کے فیصلہ کو ممبئی ہائی کورٹ میں چینلج کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ اس معاملے میں گرفتار بے گناہ مسلم نوجوانو ں کو انصاف مل سکے اور ان کے خلاف قائم مقدمہ جلد از جلد ختم ہو سکے۔

دفاعی وکلا کی جرح سے بوکھلائے استغاثہ نے معاملے کی سماعت پر روک لگائی

واضح رہے کہ ملزمین پر الزام ہے کہ انہوں نے 13/7 سلسلہ وار بم دھماکوں میں استعمال ہوئی دو موٹر سائیکلوں کو جنوبی ممبئی سے چرایا تھااور ان کے خلاف اس تعلق سے ایف آئی آر بھی درج کی گئی تھی جس کے تحت سیوڑی عدالت میں معاملے کی سماعت جاری تھی۔ عیاں رہے کہ31 جولائی2012کو ممبئی کے تین مقامات زاویری بازار، اوپیرا ہاؤس اور دادر میں بم دھماکے ہوئے تھے جس میں 27 افراد ہلاک 127 افراد زخمی ہوئے تھے۔

اسی درمیان گلزار اعظمی نے بتایا کہ 13/7 بم دھماکہ معاملے کی سماعت التوا کا شکار ہے لہذا انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ ملزمین کی یکے بعد دیگر ضمانت عرضداشتیں خصوصی مکوکا عدالت اور ممبئی ہائی کورٹ میں داخل کریں گے اور اس تعلق سے وکلاء4 سے صلاح و مشورہ کیا جارہا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز