مسلمانوں کو بابری مسجد کی زمین خوشی سے ہندوؤں کو دے دینی چاہئے : شیعہ عالم دین مولانا کلب صادق

Aug 13, 2017 12:56 PM IST | Updated on: Aug 13, 2017 12:56 PM IST

ممبئی : معروف عالم دین مولانا سید کلب صادق کا کہنا ہے کہ بابری مسجد کی زمین مسلمانوں کو ہندووں کو دیدینی چاہئے ۔ ممبئی میں منعقدہ ایک پروگرام کے دوران انہوںنے یہ بات کہی۔ انہوں نے کہا کہ اگر بابری مسجد کا فیصلہ مسلمانوں کے حق میں نہیں آتا، تو انہیں پرامن طور سے فیصلہ کو قبول کرنا چاہئے۔ وہیں اگر فیصلہ مسلمانوں کے حق میں آتا ہے ، تو انہیں خوشی سے زمین ہندوؤں کو دے دینی چاہئے۔

خیال رہے کہ بابری مسجد - رام جنم بھومی معاملہ پر سپریم کورٹ میں 11 اگست کو سات سال بعد سماعت شروع ہوئی ہے۔سماعت میں عدالت عظمی نے سبھی فریقوں سے بات چیت کر کے کہا تھا کہ عدالت پہلے دو اہم فریقوں کی شناخت کرے گا۔ کورٹ نے تاریخی دستاویزات کے ترجمے کے لئے وقت دیتے ہوئے اگلی سماعت 5 دسمبر سے شروع کرنے کیلئے کہا ہے ۔

مسلمانوں کو بابری مسجد کی زمین خوشی سے ہندوؤں کو دے دینی چاہئے : شیعہ عالم دین مولانا کلب صادق

قبل ازیں 8 اگست کو شیعہ وقف بورڈ نے سپریم کورٹ میں ایک حلف نامہ بھی دائر کیا ، جس میں اس نے کہا کہ ایودھیا میں متنازع جگہ پر رام مندر کی تعمیر کی جانی چاہئے اور مسجد کی تعمیر پاس کے مسلم اکثریتی علاقہ میں ہونی چاہئے۔

مولانا کلب صادق کے اس بیان کے بعد مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے کہا کہ بھگوان رام نہ ہندو ہیں اور نہ مسلمان ، وہ ہندوستان کی جان ہیں۔ مولانا صاحب (کلب صادق) نے دل جیت لیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز