انڈر ورلڈ ڈان داون ابراہیم داؤد ڈپریشن میں ، اکلوتا بیٹا معین نواز کا کاروبار چھوڑ کر مولوی بننے کا فیصلہ

Nov 26, 2017 01:03 PM IST | Updated on: Nov 26, 2017 01:06 PM IST

ممبئی: دولت و طاقت ہونے کے باوجود ممبئی سیریل دھماکوں کا ماسٹر مائنڈ اور انڈرورلڈ سرغنہ داؤد ابراہیم کے اپنے اکلوتے بیٹے کے مولوی بننے کے بعد ان دنوں ڈپریشن میں ہونے کی باتیں سامنے آرہی ہیں۔ حقیقت میں اپنی بے پناہ کالی کمائی کے باوجود داؤد ایسی مشکل میں پھنس گیا ہے، جس کا اس سے حل نہیں نکل پا رہا ہے۔ دراصل داؤد کا اکلوتا بیٹا معین نواز ڈی كاسكر (31) مولوی بن گیا ہے۔ اس کی وجہ سے داؤد کے ڈپریشن میں جانے کی باتیں سامنے آرہی ہیں۔داؤد کی سمجھ میں نہیں آ رہا ہے کہ اس کے بعد اس کے بڑے کاروبار کی دیکھ بھال کون کرے گا؟ معین کے علاوہ داؤد کی دو بیٹیاں ہیں۔

تھانے کے اینٹی ایكسٹورشن سیل کے سربراہ اور داؤد کے چھوٹے بھائی اقبال ابراہیم سے پوچھ گچھ کرنے والے پردیپ شرما نے بتایا-’’معین اپنے والد کی غیر قانونی سرگرمیوں کا بہت بڑا مخالف ہے۔اسکو لگتا ہے کہ اس کی وجہ سے پوری دنیا میں ان لوگوں کی بدنامی ہوئی ہے اور زیادہ تر اہل خانہ کو مفرور لوگوں کی طرح رہنا پڑ رہا ہے‘‘۔’انکاؤنٹرماہر‘مانے جانے والے مسٹر شرما نے بتایا کہ داؤد کے بھائی اقبال سے پوچھ گچھ کے دوران داؤد کے خاندان کے بارے میں کئی اہم اطلاعات ملی ہیں. تاوان کے تین مقدمات میں اقبال کو گزشتہ ستمبر میں گرفتار کیا گیا تھا۔

انڈر ورلڈ ڈان داون ابراہیم داؤد ڈپریشن میں ، اکلوتا بیٹا معین نواز کا کاروبار چھوڑ کر مولوی بننے کا فیصلہ

اقبال نے پولیس کو بتایا کہ اس کا ایک اور بھائی انیس ابراہیم بڑھتی عمر کے سبب بیمار رہنے لگا ہے۔ دیگر بھائی مر چکے ہیں۔ اس کے علاوہ ایسا کوئی دیگر قریبی رشتہ دار بھی نہیں ہے، جو داؤد کے بعد اس کے کاروبار کو سنبھال سکے۔مسٹر شرما نے بتایا-’’داؤد کے بیٹے نے گزشتہ چند برسوں سے اپنے خاندان سے ناطہ توڑ لیا ہے۔ اس کا اپنے والد کے کاروبار سے بھی اس کا کوئی لینا دینا نہیں ہے. تاہم، ابھی یہ معلوم نہیں ہوا ہے کہ باپ بیٹے میں بات چیت ہوتی ہے یا نہیں‘‘۔

داؤد کا بیٹا معین نواز اب ایک مولانا ہے اور اسے پورا قرآن حفظ ہے۔ کراچی کے متمول علاقے میں بنے اپنے خاندانی بنگلے کو بھی اس نے چھوڑ دیا ہے اور قریب ہی ایک مسجد میں رہنے کے لئے چلا گیا ہے. اس کا اہم کام نوجوانوں کو قرآن کی تعلیم دینا ہے۔ اس کی بیوی اور تین نابالغ بچے بھی مسجد انتظامیہ کی جانب سے دئیے گئے چھوٹے سے کمرے میں رہ رہے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز