باہمی اختلافات کو بھلاکر ایک مضبوط سیاسی طاقت بننے کیلئے مجلس اتحاد المسلمین کا ساتھ دینے کی اپیل

ملک کے موجودہ حالات میں مسلمانوں کو اپنے باہمی اختلافات کو بھلاکر متحد ہونے کی ضرورت ہے۔

Mar 24, 2017 09:33 PM IST | Updated on: Mar 24, 2017 09:33 PM IST

ناندیڑ : ملک کے موجودہ حالات میں مسلمانوں کو اپنے باہمی اختلافات کو بھلاکر متحد ہونے کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار ایم آئی ایم کے ریاستی صدر سید معین نے ناندیڑ میں ایک جلسہ سے خطاب کے دوران کیا ۔ حالات حاضرہ کے عنوان سے منعقدہ جلسہ میں نجیب احمد کی بازیابی اور طلاق ثلاثہ کے مسئلہ پر بھی گفتگو کی گئی ۔

مجلس اتحاد المسلمین مہاراشٹر کے مختلف مقاما ت اپنی طاقت کو بڑھانا چاہتی ہے ۔ یہی وجہ ہے کہ پارٹی کے ریاستی صدر سید معین مختلف اضلاع میں جلسے منعقد کررہے ہیں ۔ ایسا ہی ایک جلسہ ناندیڑ میں بھی منعقد کیا گیا ۔ اس جلسہ میں مسلمانوں کے مقامی مسائل سے لے کر قومی سطح کے مسائل پر بھی گفتگو کی گئی ۔ اس ان مسائل کو حل کرنے کیلئے مسلمانوںکو باہمی طورپر متحد ہونے کی نصیحت کی گئی ۔

باہمی اختلافات کو بھلاکر ایک مضبوط سیاسی طاقت بننے کیلئے مجلس اتحاد المسلمین کا ساتھ دینے کی اپیل

قومی سطح پر نجیب احمد کی گمشدگی کا مسئلہ موضوع بحث بنا ہوا ہے ۔ کئی ملی تنظیمیں اس کے حق میں تحریک چلارہی ہیں ۔ نجیب کے مسئلہ پر پارلیمنٹ میں آواز اٹھانے والوں میں کانگریس اور دیگر سیکولر پارٹیوں کی جانب سے اختیار کی جا رہی خاموشی پر مجلس کے قائدین نے زبردست تنقید کی ۔ اسی طرح مسلم خواتین سے ہمدردی کے نام پر طلاق ثلاثہ کی حمایت میں بیانات دینے والے وزیر اعظم مودی سے دو ٹوک انداز میں یہ بات کہی گئی کہ مسلم خواتین سے اگر اتنی ہی ہمدردی ہے ، تو نجیب کی ماں کو اس کے بیٹے سے ملایا جائے ۔

جلسہ میں اتر پردیش کے حالیہ انتخابی نتائج پر بھی تبصرہ کیا گیا ۔بی جے پی کو ملنے والی غیر معمولی کامیابی کیلئے مجلس پر تنقید کرنے والوں کو اپنے گریبان میں جھانکنے کا مشورہ دیا گیا ۔ ساتھ ہی ساتھ سیکولزم کے بام پر مسلمانوں کو بے و خوف بنانے والی پارٹیوں سے ہوشیار رہتے ہوئے قومی سطح پر مسلمانوں کو ایک مضبوط سیاسی قوت بننے کا مشورہ دیا گیا ۔جلسہ میں ناندیڑ کے مختلف مقامات سے ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز