قرضہ جات کی ریکوری کے لئے وزارت اقلیتی امور کے حکام مہاراشٹر کے دورے پر

May 06, 2017 08:13 PM IST | Updated on: May 06, 2017 08:13 PM IST

اورنگ آباد۔  مرکزی وزارت اقلیتی امور کے حکام ان دنوں مہاراشٹر کےدورے پر ہیں ۔ اس دورے کا مقصد  مولانا آزاد فائنانس کارپوریشن کے تحت  اقلیتی طبقات میں تقسیم کیے گئے  قرضہ جات کا جائزہ لینا اور مرکز کو رپورٹ پیش کرنا ہے ۔ مرکزی ٹیم نے اورنگ آباد میں  بھی سروے کیا ۔ مہاراشٹر میں اقلیتی طبقات کو مولانا آزاد مائنا رٹی ڈیولپمنٹ فائنانس کارپوریشن کے تحت قرضہ جات فراہم کیے جاتے ہیں ۔ اس کارپوریشن کے نام پر حکومت اقلیتوں کو معاشی میدان میں مستحکم  کرنے کا دعوی کرتی ہے۔ کسی حد تک اقلیتوں کو اس کا فائدہ بھی ہورہا ہے لیکن یہ اونٹ کے منہ میں زیرے کے مترادف ہے ۔ حال میں مرکزی وزارت کی ایک ٹیم نے اورنگ آباد پہنچ کر دفترکا جائزہ لیا اورقرضداروں سے بات چیت کی  ساتھ ہی ریکوری کے سلسلے میں جانکاری حاصل کی ۔

 تعلیمی قرض  کے سلسلے میں جاری تعلیمی سال کے لیے مولانا آزاد اقلیتی  ترقیاتی کارپوریشن کے اورنگ آباد  دفتر کو  92 درخواستیں موصول ہوئیں، جن میں 54 امیدواروں کا قرض منظور ہوا۔ جس کی  رقم  ایک کروڑ33 لاکھ  5 ہزار777  ہے ۔ یہ رقم جلد ہی امیدواروں کے اکاؤنٹ میں ٹرانسفر ہوجائیگی۔ اس بات کی جانکاری ضلع افسر ظہیرشیخ نے دی۔ وہیں مرکزی ٹیم کے ذمہ داروں کا کہنا ہے کہ مہاراشٹر میں ریکوری کا تناسب پچاس فیصد ہے ۔  جائزے میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ زیادہ تر قرضدار ادائیگی کے تعلق سے سنجیدہ ہیں لیکن نوٹ بندی  اور دیگر وجوہات کی بنا پر قرض کی ریکوری میں تاخیر ہورہی ہے ۔ مرکزی ٹیم کا  کہنا ہے کہ ضلع دفتروں کے مسائل سے بھی مرکز کو واقف کروایا جائیگا۔

قرضہ جات کی ریکوری کے لئے  وزارت اقلیتی امور کے حکام مہاراشٹر کے دورے پر

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز