دیوالی پر گجرات آیا تو لوگوں کے پیٹ درد ہوگیا ، مجھے کچھ نہیں کہہ پارہے ہیں ، تو الیکشن کمیشن پر ہی دباو ڈال رہے ہیں : مودی

Oct 22, 2017 09:23 PM IST | Updated on: Oct 22, 2017 09:23 PM IST

بڑودہ: وزیر اعظم نریندرمودی نے گجرات میں اسمبلی انتخابات کے اعلان میں تاخیرپر اپوزیشن کانگریس کی طرف سے الیکشن کمیشن پر لگائے جارہے الزامات پر آج سوالیہ نشان کھڑاکرتے ہوئے ریاست میں اگست میں ہوئے راجیہ سبھا الیکشن اور کمیشن کی مداخلت کے بعد اس میں پارٹی کے امیدوار اور محترمہ سونیا گاندھی کے سیاسی سکریٹری احمد پٹیل کی معمولی ووٹ سے جیت کی یاددلائی ۔

مسٹرمودی نے آج یہاں نولکھی میدان میں کئی ترقیاتی پروجکٹوں کا سنگ بنیاد اور افتتاح کرنے کے بعد کانگریس یا کسی کانام لئے بغیر کہا کہ انھوں نے ایک ہی دن میں 3600کروڑ کے پروجکٹوں کا سنگ بنیاد اور افتتاح ایک اسٹیج سے کردیا ہے جبکہ پہلے پورے گجرات کا بجٹ ہی آٹھ دس ہزار کروڑ کا تھا۔جس نے ایسا دیکھایا سوچانہ ہو اسے تکلیف تو ہوگی ۔

دیوالی پر گجرات آیا تو لوگوں کے پیٹ درد ہوگیا ، مجھے کچھ نہیں کہہ پارہے ہیں ، تو الیکشن کمیشن پر ہی دباو ڈال رہے ہیں : مودی

وزیر اعظم نے کہا کہ ’’کتنے لوگوں کو یہ تکلیف ہے کہ مودی دیوالی کے بعد کس لئے گجرات آتا ہے ۔مجھے کچھ نہیں کہہ پارہے توالیکشن کمیشن پر ہی الزام لگتا ہے ۔ایسا کرنے والوں سے مجھے کہناہے کہ جولوگ ووٹنگ کے دوران ہار چکے تھے اور نیوزچینلوں پر یہ دکھایا جانے لگا تھا کہ فلاں بھائی ہار گئے ہیں اور پتہ نہیں کیسے ری کاؤنٹنگ ہونے پر جیت گئے اور جو بال بال بچ گئے اور جیت گئے انھیں کمیشن پر الزام لگانے کا اخلاقی حق نہیں ۔‘‘

واضح رہے کہ 8اگست کو گجرات میں راجیہ سبھا کی تین سیٹوں کے لئے ہوئے انتخابات میں بی جے پی نے اپنے صدر امت شاہ ، مرکزی وزیر اسمرتی ایرانی اور کانگریس چھوڑ کر بی جے پی میں آئے بلونت سنگھ راجپوت کو امیدوار بنایا تھا جبکہ کانگریس نے اپنا اکلوتا امیدوار مسٹر احمد پٹیل کو بنایا تھا۔اس دوران کانگریس کے باغی ممبران اسمبلی نے کراس ووٹنگ کی تھی ۔بعد میں دیر رات کانگریس کی شکایت پر کمیشن نے ووٹوں کی گنتی روک دی اور کراس ووٹنگ کرنے والے دو باغی ممبران کے ووٹ رد کردئے ۔جس سے مسٹر احمد پٹیل معمولی ووٹوں کے فرق سے جیت گئے تھے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز