گئو رکشا اور بیف کے نام پر مسلمانوں کے ساتھ ہو رہے ظلم کے خلاف ناندیڑ میں احتجاجی دھرنا

ناندیڑ میں کل جماعتی احتجاجی دھرنے کا اہتمام کیا گیا ۔ دھرنے میں مسلم تنظیموں کے دلت تنظیموں کے نمائندوں نے بھی شریک ہو کر حکومت پر ظلم کو روکنے میں ناکامی کا الزام لگایا ہے

Jul 24, 2017 11:06 PM IST | Updated on: Jul 24, 2017 11:06 PM IST

ناندیڑ : گئو رکشا کے نام پر مسلمانوں کے ساتھ جاری و ظلم و بربریت کے خلاف مسلمانوں میں شدید غم وغصہ ہے ۔ حکومت سے ناراضگی ظاہرکرنے کیلئے ملک بھر میں ’ ناٹ ان مائی نیم ‘ کے عنوان سے احتجاج کیا جا رہا ہے ۔ اسی سلسلہ کی ایک کڑی کے طورپر ناندیڑ میں کل جماعتی احتجاجی دھرنے کا اہتمام کیا گیا ۔ دھرنے میں مسلم تنظیموں کے دلت تنظیموں کے نمائندوں نے بھی شریک ہو کر حکومت پر ظلم کو روکنے میں ناکامی کا الزام لگایا ہے ۔

ملک بھرمیں ’ناٹ ان مائی نیم‘ کے تحت تحر گئو رکشا اور بیف کے نام بے گناہ مسلمانوں اور دلتوں کے ساتھ ہورہے ظلم کے خلاف ناراضگی کا اظہار اور احتجاج کیا جا رہا ہے ۔ اسی سلسلہ میں ناندیڑ میں بھی احتجاج کیا گیا ، جس میں مختلف ملی و سماجی تنظیموں کے ذمہ داران نے شریک ہوکر نام نہاد گئو رکشکوں کے خلاف کارروائی کے معاملہ میں مودی حکومت کی بے حسی کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا ۔

گئو رکشا اور بیف کے نام پر مسلمانوں کے ساتھ ہو رہے ظلم کے خلاف ناندیڑ میں احتجاجی دھرنا

دھرنے کے اختتام پر ملی تنظیموں کے نمائندوں کے وفد نے ضلع کلکٹر سے ملاقات کی اورا نہیں صدرجمہوریہ کے نام تحریر ایک میمورنڈم پیش کیا۔ اس میمورنڈم میں کئی مطالبات کئے گئے ہیں، جن میں سے ایک اہم مطالبہ نام نہاد گئو رکشکوں کی بڑھتی غنڈہ گردی سے حفاظ کے لئے مسلمانوں کو ہتھیار رکھنے کی اجازت دینے اور گئو رکشکوں کو دہشت گرد قرار دے کر پولیس کو ان کے خلاف گولی چلانے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

گئو رکشا کے نام پر ظلم کو ایک سوچی سمجھی سازش قرار دے کر اس کو ملک کو ایک خاص رنگ میں رنگنے کی کوشش قراردیا گیا ۔ احتجاجی دھرنے میں شریک دلت تنظیموں کے ذمہ داران نے بھی مسلمانوں کے خلاف ظلم کی شدید الفاظ میں مذمت کی اور ماب لنچنگ کے تحت بے گناہوں کے قتل کی وارداتوں کے خلاف دلت مسلم اور دیگر سیکولر تنظیموں کو متحد ہوکر ملک بھر میں بیداری لانے کا اعلان کیا گیا ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز