Live Results Assembly Elections 2018

سنجے دت کی مشکلات میں اضافہ ، ہائی کورٹ کے سخت رویہ کے بعد پھر جیل بھیج سکتی ہے فرنویس سرکار

بامبے ہائی کورٹ نے آج حکومت کے مہاراشٹر سے دریافت کیا ہے کہ معروف اداکارسنجے دت کوان کی خودسپردگی کے بعدفوری طورپرپیرول اورپھرفرلوکیسے دے دیاگیااوریہ سب صرف دومہینے میں کس طرح ممکن ہوسکا

Jul 27, 2017 07:14 PM IST | Updated on: Jul 27, 2017 07:14 PM IST

ممبئی: بامبے ہائی کورٹ نے آج حکومت کے مہاراشٹر سے دریافت کیا ہے کہ معروف اداکارسنجے دت کوان کی خودسپردگی کے بعدفوری طورپرپیرول اورپھرفرلوکیسے دے دیاگیااوریہ سب صرف دومہینے میں کس طرح ممکن ہوسکا اور قیدکے دوران بہترسلوک کے بارے میں جیل حکام کیسے اندازہ لگاسکتے ہیں۔ واضح رہے کہ سنجے دت کو1993میں ممبئی میں ہونے والے بم دھماکوں میں ملوث ہونے کے جرم میں پانچ سال کی سزا کا حکم دیاگیا تھا۔ہائی کورٹ نے ان کے اچھے رویہ پر جیل حکام کے فیصلہ پربھی سوال اٹھایا۔اورپوچھاکہ اس کاطریقہ کارکیاہے۔

جسٹس آرایم ساونت اور جسٹس سدھناجادھونے کہاکہ مئی 2013 میں اداکارنے خودسپردگی کی اورجولائی میں انہوں نے فرلواورپیرول پررہاکرنے کی درخواست دی جسے منظورکرلیاگیا۔ان کی 8 جولائی 2013 کی عرضی کو منظور کرلیا گیا۔ جسٹس جادھونے تجزیہ کرتے ہوئے کہاکہ دومہینے قیدکے دوران جیل انتظامیہ نے سنجے دت کے بہتررویے کے بارے میں کیسے اندازہ لگالیا۔عام طورپرسپرٹینڈنٹ آف جیل اس قسم کی درخواست کوآگے نہیں بڑھاتے ہیں اورانتظامیہ درخواستوں کوپھینک دیتا ہے۔

سنجے دت کی مشکلات میں اضافہ ، ہائی کورٹ کے سخت رویہ کے بعد پھر جیل بھیج سکتی ہے فرنویس سرکار

ایڈوکیٹ جنرل اشوتوش کمباکنی نے عدالت کویقین دلایاکہ سنجے دت کوجیل میں کوئی خصوصی رعایت نہیں دی گئی،لیکن اگرحکومت یہ محسوس کرتی ہے کہ ریاستی حکومت نے انہیں جلدرہاکرنے میں کوتاہی کی ہے تووہ چاہئے توسنجے دت کودوبارہ حوالات میں جانے کی ہدایت دے سکتی ہے۔جسٹس ساونت نے کہاکہ ہم کسی طرح وقت کوپیچھے لیجانے کے حق میں ہیں اورنہ ہی چاہتے ہیں کہ سنجے دت کودوبارہ جیل بھیج دیاجائے۔لیکن قانون کے دائرے میں ایک طریقہ کارچاہتے ہیں تاکہ مستقبل میں اس طرح کاکوئی سوال نہ اٹھے۔

ہائی کورٹ نے کہاکہ ایسے متعدد مقدمات کی انہوں نے سماعت کی ہیں جن مجرم کے ماں باپ کی موت پربھی انہیں پیرول اورفرلونہیں دیاگیاہے۔سنجے دت کوپہلے اس کی اہلیہ کی علالت کے سبب فرلودیاگیا۔،پھربیٹی کی بیماری پرپیرول ملاتھا۔ہم نے ایسے کئی کیسوں کی شنوائی کی ہے کہ ماں باپ کی علالت اورموت پرانہیں چھوٹ نہیں دی گئی ہے۔عدالت نے حکومت مہاراشٹرکودوہفتے میں حلف نامہ داخل کرنے کاحکم دیاہے۔عدالت ایک شہری پردیپ بھالیکرکی پی آئی ایل کی سماعت کررہی ہے۔جس میں سنجے دت کے فرلواورپیرول اوران کی سزاکم کرنے پرسوال اٹھائے گئے ہیں۔مفادعامہ کی عرضداشت میں حکومت پرسنجے دت کی حمایت کاالزام عائدکیاگیاہے۔حکومت نے اس ماہ پیش کی گئی رپورٹ میں کسی خصوصی رعایت اورسلوک سے انکارکیاہے۔

Loading...

رپورٹ کے مطابق مہاراشٹرقوانین برائے جیل کے تحت ہرماہ میں تین روزکی رعایت اچھے سلوک کی بناپردی جاسکتی ہے۔سنجے دت کے معاملے میں انہیں آٹھ ماہ 16دن میں 256 دنوں کیلئے چھوٹ دی گئی۔31جولائی 2007 کو ٹاڈا کورٹ نے اداکارکوآرمس ایکٹ کے تحت چھ سال کی سزاکاحکم دیاہے اور25ہزارروپے جرمانہ عائد کیاگیاتھا،لیکن سپریم کورٹ نے2013میں سنجے دت کی سزاپانچ سال کردی اورانہیں خودسپردگی کاحکم دیا۔انہیں قید کے دوران دسمبر2013میں 90دن کے لئے پیرول دی گئی اورپھر 30روزکے لئے رہاکیاگیاتھا۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز