گوا اسمبلی میں منوہر پاریکر فلور ٹیسٹ میں پاس، 22 ممبران اسمبلی نے کی حمایت

Mar 16, 2017 12:55 PM IST | Updated on: Mar 16, 2017 01:01 PM IST

پنجی۔ وزیر دفاع کے عہدے سے استعفی دینے کے بعد گوا کے وزیر اعلی بنے بی جے پی لیڈر منوہر پاریکر فلور ٹیسٹ میں پاس ہو گئے ہیں۔ انہیں اسمبلی میں 22 ممبران اسمبلی نے اپنی حمایت دی جبکہ 16 ممبران اسمبلی نے ان کے خلاف ووٹ دیا۔

سپریم کورٹ کے حکم کے مطابق انہیں جمعرات کو اسمبلی میں طاقت آزمائی کے ذریعے اکثریت ثابت کرنا تھا۔ بتا دیں کہ پاریکر نے منگل کو چوتھی بار گوا کے وزیر اعلی کے عہدے کا حلف لیا تھا۔

گوا اسمبلی میں منوہر پاریکر فلور ٹیسٹ میں پاس، 22 ممبران اسمبلی نے کی حمایت

طاقت آزمائی کو دیکھتے ہوئے کانگریس کی صفوں میں بھی ہلچل ہے۔ ووٹنگ سے پہلے کانگریس کے ناراض رکن اسمبلی وشوجیت رانے نے 5 نوجوان اراکین اسمبلی کے ساتھ ملاقات کی تھی۔ خبروں کے مطابق یہ میٹنگ ایک ہوٹل میں ہوئی۔ وشوجیت کچھ کانگریس رہنماؤں سے ناراض ہیں اور وہ کانگریس نائب صدر راہل گاندھی سے بھی مل کر ان کی شکایت کر سکتے ہیں۔

کانگریس کا الزام: 1000 کروڑ میں خریدے گئے ممبر ان اسمبلی

وہیں، گوا میں اپوزیشن پارٹی کانگریس نے  الزام لگایا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی)نے ریاست میں حکومت بنانے کے لئے ممبران اسمبلی کو خریدنے کے لئے ایک ہزار کروڑ روپے خرچ کئے ہیں۔  کانگریس کے جنرل سکریٹری گریش چودانكر نے یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ " بی جے پی نے کانگریس ممبران اسمبلی کو لالچ دینے اور انہیں خریدنے میں کم از کم ایک ہزار کروڑ روپے خرچ کئے"۔ انہوں نے پنجی سے رکن اسمبلی سدھارتھ كنكالينكر کو گوا اسمبلی کا عارضی صدر مقرر کئے جانے پر سوالیہ نشان لگاتے ہوئے کہا کہ ان کی معتبریت شک کے گھیرے میں رہے گی۔

انہوں نے کہا " سدھارتھ وزیر اعلی منوہر پاریکر کے سابق سیاسی معاون اور جوائنٹ سکریٹری رہ چکے ہیں۔ وہ بی جے پی کے عہدیدار بھی رہے ہیں۔ کس طرح ان کوعارضی صدر مقرر کیا جا سکتا ہے جبکہ ان کے سابق آقا ہی اب ریاست کے وزیر اعلی بنائے گئے ہیں"۔  انہوں نے کہا کہ کانگریس کی قانون ساز پارٹی کے لیڈر چندركات كاولیكر نے گورنر مردلا سنہا کو خط لکھ کر عارضی صدر کے عہدے پر کی گئی تقرری کو منسوخ کرنے کی اپیل کی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز