Live Results Assembly Elections 2018

ممبرا میں اردو اسکولوں کی حالت زار، ایم آئی ایم کے وفد کا اسکولوں کا ہنگامی دورہ

تھانےمیونسپل کارپوریشن کے ماتحت ممبرا کے اردو اسکولوں میں 6 ہزار سے زائد طلبہ زیر تعلیم ہیں، جہاں اول درجہ سے لے کر دسویں تک کی تعلیم مفت میں دی جاتی ہے

Nov 13, 2017 09:09 PM IST | Updated on: Nov 13, 2017 09:09 PM IST

ممبرا : تھانےمیونسپل کارپوریشن کے ماتحت ممبرا کے اردو اسکولوں میں 6 ہزار سے زائد طلبہ زیر تعلیم ہیں، جہاں اول درجہ سے لے کر دسویں تک کی تعلیم مفت میں دی جاتی ہے ، لیکن اسکول میں اسٹاف کی کمی اورسہولیات کے فقدا ن کو دیکھ کرمیونسپل کارپوریشن اور حکومت مہاراشٹر کی اردو سے عدم دلچسپی صاف طور پر ظاہر ہوجاتی ہے ۔ ایجوکیشن کے نام پر بنائی گئی اس غیر معیاری عمارت اور غیر معیای سسٹم کے جانب شہر کے کارپوریٹروں ، ایم ایل اے اور ایم پی کی توجہ نہیں جارہی ہے ، جس پر ایم آئی ایم اب وزیر اعلیٰ سے ملاقات کر کے ان سے شکایت کرنے کی تیاری کر رہی ہے۔

تھانے میونسپل کارپوریشن کے سبھی اسکولوں میں سب سے زیادہ طلبہ اردومیڈیم میں پائے جاتے ہیں ، جس کی وجہ سے اب تک ہر ایس ایس سی کے نتائج میں بھی ہر سال اردو اسکول کا ہی نمایاں نمبر رہا ہے۔ لیکن اس کے باوجود یہاں نہ ہی اساتذہ کی خالی اسامیوں کو پر کیا جا رہا ہے اور نہ ہی بچوں کو انتظامیہ کی جانب سے ملنے والی سہولیات مہیا کرائی جا رہی ہیں ۔

ممبرا میں اردو اسکولوں کی حالت زار، ایم آئی ایم کے وفد کا اسکولوں کا ہنگامی دورہ

ممبرا کی کوسہ اردو میونسپل اسکولوں میں سہولیات کا جائزہ لینے پہنچی مجلس اتحاد المسلمین کے وفد نے اسکول کی کھڑکیوں دروازوں، طہارت خانوں، بینچوں اور پینے پانی کے پانی کا جائزہ لیا ۔ کوسہ کے اردو اسکول میں طلبہ کی کثرت ہے ، لیکن اسکول کے اسٹاف میں نہ پرنسپل ہیں اور نہی اساتذہ۔ اساتذہ کی خالی اسامیوں کو پرکرنے کے لئے میونسپل کارپوریشن سے اسمبلی تک اور کمشنر سے کے کر سی ایم تک شکایت کی گئی ، لیکن کسی کے کان پر جوں نہیں رینگی ۔

اب اسکول کا حال یہ ہے کہ بیشترکھڑکیوں کے شیشے ٹوٹ چکے ہیں۔ اسکول کے سبھی گرلز و بوائز کے طہارت خانوں کے دروازے غائب ہیں۔ پینے کے پانی کا فلٹر خراب ہے اور گندگی کا انبار ہے۔ اسکول کی بینچوں کی لکٹریاں ٹوٹی ہوئی ہیں اورکتابیں تو ہیں ، لیکن لائبریری نہیں ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز