گجرات انتخابات : ٹکٹ کو لے کر بی جے پی میں سر پھٹول ، کارکنوں کا دفتر میں توڑ پھوڑ ، سینئر دلت لیڈر جیٹھا سولنکی مستعفی

Nov 18, 2017 08:23 PM IST | Updated on: Nov 19, 2017 11:31 AM IST

احمد آباد : گجرات اسمبلی انتخابات میں بی جے پی کی مشکلات فی الحال کم ہوتی ہوئی نظر نہیں آرہی ہیں ۔ جہاں ایک طرف ریاست میں بی جے پی مخالف ہوا چل رہی ہے ، وہیں اب ٹکٹوں کی تقسیم کو لے کر بھی پارٹی میں سر پھٹول کی نوبت آگئی ہے ۔ گزشتہ روز ٹکٹوں کی تقسیم سے ناراض متعدد لیڈروں نے پارٹی سے استعفی دیدیا جبکہ آج ٹکٹ نہ ملنے سے بی جے پی کے ترجمان کے حامی افراد نے پارٹی دفتر میں جم کر ہنگامہ آرائی اور توڑ پھوڑ کی ۔

کل 70سیٹوں کےلئے پہلی فہرست جاری کرنے والی بی جےپی کے اہم لیڈرسمجھے جانے والے گجرات کی سابقہ حکومت کے وزیر اور پارٹی کے حالیہ ترجمان آئی کے جاڈیجہ کو اس بار بھی ان کی سابق سیٹ وڈھوان سے ٹکٹ نہیں دیا گیا ہے ، جس کی وجہ سے ان کے حامیوں میں کافی ناراضگی ہے ۔ اب حامی ایک دیگر سیٹ دھرانگ دھرا سے انہیں ٹکٹ دینے کا مطالبہ کر رہے ہیں اور اسی کو لے  کر بی جےپی ہیڈکوارٹر پر جم کر نعرے بازی کرنے لگے۔

گجرات انتخابات : ٹکٹ کو لے کر بی جے پی میں سر پھٹول ، کارکنوں کا دفتر میں توڑ پھوڑ ، سینئر دلت لیڈر جیٹھا سولنکی مستعفی

دھر مسٹر جاڈیجہ نے کہا کہ وہ بی جےپی سے ہی جڑے رہیں گے لیکن وڈھوان میں بیرونی امیدوار دینے سے لوگ کچھ مجروح ہوئے ہیں۔اس سیٹ پر اس بار بی جےپی نے سبکدوش ہونے والی رکن اسمبلی ورشا بین دوشی کی جگہ پاٹی دار صنعت کار دھنجی پٹیل کو ٹکٹ دیا ہے۔محترمہ دوشی سے پہلے اس سیٹ پر مسٹر جاڈیجہ ہی رکن اسمبلی تھے۔

سینئر دلت لیڈر جیٹھا سولنکی مستعفی

ادھر ٹکٹ کٹنے کے خدشے میں پارٹی کے سینئر دلت لیڈر اور رکن اسمبلی اور پارلیمنٹ سکریٹری جیٹھا سولنکی نے بھی آج اختلاف ظاہر کرتے ہوئے پارٹی اور رکن اسمبلی کے عہدوں سے استعفی دے دیا۔ان بڑے لیڈران کے علاوہ کئی چھوٹے لیڈر بھی اختلاف ظاہر کر رہے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز