تصاویر : گاندھی میدان میں دین بچاو دیش بچاو کانفرنس ، تین لاکھ سے زائد لوگوں نے کی شرکت

Apr 15, 2018 09:38 PM IST
1 of 9
  • پٹنہ کے گاندھی میدان میں امارت شرعیہ بہار کے زیر اہتمام دین بچاؤ دیش بچاؤ کانفرنس کا انعقاد کیاگیا۔ گاندھی میدان میں کسی مسلم تنظیم کی یہ پہلی کانفرنس تھی جس میں تقریبا تین لاکھ لوگوں نے شرکت کی۔ بہار، جھارکھنڈ، اڑیسہ سے آئے لوگ کانفرنس کا حصہ بنے۔

    پٹنہ کے گاندھی میدان میں امارت شرعیہ بہار کے زیر اہتمام دین بچاؤ دیش بچاؤ کانفرنس کا انعقاد کیاگیا۔ گاندھی میدان میں کسی مسلم تنظیم کی یہ پہلی کانفرنس تھی جس میں تقریبا تین لاکھ لوگوں نے شرکت کی۔ بہار، جھارکھنڈ، اڑیسہ سے آئے لوگ کانفرنس کا حصہ بنے۔

  •  سخت دھوپ اور گرمی میں قریب آٹھ گھنٹہ لوگ گاندھی میدان میں بیٹھے رہے۔ کانفرنس سے مختلف لوگوں نے خطاب کیا۔

    سخت دھوپ اور گرمی میں قریب آٹھ گھنٹہ لوگ گاندھی میدان میں بیٹھے رہے۔ کانفرنس سے مختلف لوگوں نے خطاب کیا۔

  • امارت شرعیہ بہار کے امیر شریعت مولانا ولی رحمانی نے کہا کی ملک کے حالات ٹھیک نہیں ہے وہیں امارت کے جنرل سکریٹری مولانا انیس الرحمٰن قاسمی نے حکومت سے اپیل کیا کی شرعی معاملات میں دخل اندازی بند کی جائے۔

    امارت شرعیہ بہار کے امیر شریعت مولانا ولی رحمانی نے کہا کی ملک کے حالات ٹھیک نہیں ہے وہیں امارت کے جنرل سکریٹری مولانا انیس الرحمٰن قاسمی نے حکومت سے اپیل کیا کی شرعی معاملات میں دخل اندازی بند کی جائے۔

  •  کانفرنس میں دلت اور مسلم اتحاد پر زور دیاگیا۔ معروف لیڈر عبداللہ اعظمی نے مرکزی حکومت کو اپنی تنقید کا نشانہ بنایا۔

    کانفرنس میں دلت اور مسلم اتحاد پر زور دیاگیا۔ معروف لیڈر عبداللہ اعظمی نے مرکزی حکومت کو اپنی تنقید کا نشانہ بنایا۔

  • مولانا ولی رحمانی نے مرکزی حکومت سے شریعت میں مداخلت بند کرنے اور خواتین کی حفاظت کے نام پر لائے گئے تین طلاق بل کو واپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو اپنے رویہ میں تبدیلی کرنی چاہئے اور قرآن و حدیث کی حرمت کو پامال کرنے کا کوشش نہیں کرنی چاہئے۔

    مولانا ولی رحمانی نے مرکزی حکومت سے شریعت میں مداخلت بند کرنے اور خواتین کی حفاظت کے نام پر لائے گئے تین طلاق بل کو واپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو اپنے رویہ میں تبدیلی کرنی چاہئے اور قرآن و حدیث کی حرمت کو پامال کرنے کا کوشش نہیں کرنی چاہئے۔

  •  انہوں نے کہا کہ ہجومی تشدد اور چند بے لگام لیڈروں کے اشتعال انگیزبیان کے ذریعے ملک کے مسلمانوں، دلتوں اور کمزور طبقے میں خوف پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

    انہوں نے کہا کہ ہجومی تشدد اور چند بے لگام لیڈروں کے اشتعال انگیزبیان کے ذریعے ملک کے مسلمانوں، دلتوں اور کمزور طبقے میں خوف پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

  • حکومت نفرت اور خوف کے ماحول کو ختم کر کے معاشرے میں مساوات و یکجہتی قائم کرنے کی کوشش کرے اور ملک کے اتحاد اور سالمیت کو خطرے میں نہ ڈالے۔

    حکومت نفرت اور خوف کے ماحول کو ختم کر کے معاشرے میں مساوات و یکجہتی قائم کرنے کی کوشش کرے اور ملک کے اتحاد اور سالمیت کو خطرے میں نہ ڈالے۔

  • امیر شریعت نے کہا کہ ملک کے آئین میں تمام مذاہب کو ماننے کی آزادی دی گئی ہے، لیکن گزشتہ کچھ عرصے سے پورے ملک پر ایک مخصوص نظریے کو مسلط کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

    امیر شریعت نے کہا کہ ملک کے آئین میں تمام مذاہب کو ماننے کی آزادی دی گئی ہے، لیکن گزشتہ کچھ عرصے سے پورے ملک پر ایک مخصوص نظریے کو مسلط کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

  •  اس کانفرنس کے ذریعے حکومت اور تمام آئینی اداروں سے مطالبہ کیا جاتا ہے کہ وہ مکمل طورپر آئین کے اصولوں پر عمل درآمد کریں۔(تصاویر : یو این آئی)۔

    اس کانفرنس کے ذریعے حکومت اور تمام آئینی اداروں سے مطالبہ کیا جاتا ہے کہ وہ مکمل طورپر آئین کے اصولوں پر عمل درآمد کریں۔(تصاویر : یو این آئی)۔

  •  سخت دھوپ اور گرمی میں قریب آٹھ گھنٹہ لوگ گاندھی میدان میں بیٹھے رہے۔ کانفرنس سے مختلف لوگوں نے خطاب کیا۔
  • امارت شرعیہ بہار کے امیر شریعت مولانا ولی رحمانی نے کہا کی ملک کے حالات ٹھیک نہیں ہے وہیں امارت کے جنرل سکریٹری مولانا انیس الرحمٰن قاسمی نے حکومت سے اپیل کیا کی شرعی معاملات میں دخل اندازی بند کی جائے۔
  •  کانفرنس میں دلت اور مسلم اتحاد پر زور دیاگیا۔ معروف لیڈر عبداللہ اعظمی نے مرکزی حکومت کو اپنی تنقید کا نشانہ بنایا۔
  • مولانا ولی رحمانی نے مرکزی حکومت سے شریعت میں مداخلت بند کرنے اور خواتین کی حفاظت کے نام پر لائے گئے تین طلاق بل کو واپس لینے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کو اپنے رویہ میں تبدیلی کرنی چاہئے اور قرآن و حدیث کی حرمت کو پامال کرنے کا کوشش نہیں کرنی چاہئے۔
  •  انہوں نے کہا کہ ہجومی تشدد اور چند بے لگام لیڈروں کے اشتعال انگیزبیان کے ذریعے ملک کے مسلمانوں، دلتوں اور کمزور طبقے میں خوف پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔
  • حکومت نفرت اور خوف کے ماحول کو ختم کر کے معاشرے میں مساوات و یکجہتی قائم کرنے کی کوشش کرے اور ملک کے اتحاد اور سالمیت کو خطرے میں نہ ڈالے۔
  • امیر شریعت نے کہا کہ ملک کے آئین میں تمام مذاہب کو ماننے کی آزادی دی گئی ہے، لیکن گزشتہ کچھ عرصے سے پورے ملک پر ایک مخصوص نظریے کو مسلط کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔
  •  اس کانفرنس کے ذریعے حکومت اور تمام آئینی اداروں سے مطالبہ کیا جاتا ہے کہ وہ مکمل طورپر آئین کے اصولوں پر عمل درآمد کریں۔(تصاویر : یو این آئی)۔

تازہ ترین تصاویر