کمسن مسلم بچیوں کو گمراہ ہونے سے بچانے کوچلڈرنس ہوم کا قیام

Jan 08, 2017 08:31 PM IST
1 of 11
  • گووا ایک سیاحتی مرکز ہے اور یہاں مغربی تہذیب کا بول بالا ہےـ ۔ گووا کے سلم علاقوں سے غریب لڑکیوں کو لالچ دے کر غلط راہ پر لے جانا ایک عام بات سی بن گئی ہے ۔ ـ اس ضمن میں گووا کے مسلمانوں نے لڑکیوں کےلیے چلڈرنس ہوم کی بنیاد ڈالی ہے، جس میں لڑکیاں اسلامی تہذیب کے ساتھ تعلیم حاصل کررہی ہیں ـ

    گووا ایک سیاحتی مرکز ہے اور یہاں مغربی تہذیب کا بول بالا ہےـ ۔ گووا کے سلم علاقوں سے غریب لڑکیوں کو لالچ دے کر غلط راہ پر لے جانا ایک عام بات سی بن گئی ہے ۔ ـ اس ضمن میں گووا کے مسلمانوں نے لڑکیوں کےلیے چلڈرنس ہوم کی بنیاد ڈالی ہے، جس میں لڑکیاں اسلامی تہذیب کے ساتھ تعلیم حاصل کررہی ہیں ـ

  • گووا کی مغربی تہذیب اورعیش وعشرت کی طرز زندگی آپ جانتے ہی ہوں گے۔ کچھ سالوں سے گووا کے سلم علاقوں میں لڑکیوں کےغائب ہونے کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے ۔

    گووا کی مغربی تہذیب اورعیش وعشرت کی طرز زندگی آپ جانتے ہی ہوں گے۔ کچھ سالوں سے گووا کے سلم علاقوں میں لڑکیوں کےغائب ہونے کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے ۔

  •  ـ والدین کے درمیان نااتفاقی کے بعد کمسن بچیاں گھر چھوڑنے پر مجبور ہوجاتی ہیں ۔

    ـ والدین کے درمیان نااتفاقی کے بعد کمسن بچیاں گھر چھوڑنے پر مجبور ہوجاتی ہیں ۔

  • ـ ایسی لڑکیوں کی مجبوری کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کچھ گروہ انہیں غلط راہ پر لے جاتے ہیں ـ

    ـ ایسی لڑکیوں کی مجبوری کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کچھ گروہ انہیں غلط راہ پر لے جاتے ہیں ـ

  •  اگر ان میں کچھ لڑکیاں بچ جاتی ہیں ، تو ان کو مسیحی مشنری کے ماتحت چلنے والے بورڈنگ اسکولوں میں داخل کرادیا جاتا ہے ، جس کے بعد وہ ـ کچھ سالوں میں کسی دباؤ کے بغیر اپنا مذہب تبدیل کرلیتی ہیں ۔

    اگر ان میں کچھ لڑکیاں بچ جاتی ہیں ، تو ان کو مسیحی مشنری کے ماتحت چلنے والے بورڈنگ اسکولوں میں داخل کرادیا جاتا ہے ، جس کے بعد وہ ـ کچھ سالوں میں کسی دباؤ کے بغیر اپنا مذہب تبدیل کرلیتی ہیں ۔

  • ـ انہیں حالات کے پیش نظر جماعت ہند گووا کے ماتحت چلنے والا ادارہ مدھور سندیش نے مسلم لڑکیوں کے لیےگووا کے واسکو میں آشیانہ کے نام سے چلڈرنس ہوم کی بنیاد ڈالی ہے ۔ـ

    ـ انہیں حالات کے پیش نظر جماعت ہند گووا کے ماتحت چلنے والا ادارہ مدھور سندیش نے مسلم لڑکیوں کے لیےگووا کے واسکو میں آشیانہ کے نام سے چلڈرنس ہوم کی بنیاد ڈالی ہے ۔ـ

  • گووا کے واسکو میں کمسن بچیوں کے لیے آج ایک بہترین عمارت موجود ہے ، جس میں بورڈنگ اسکول اور رہائش کا انتظام ہے ۔

    گووا کے واسکو میں کمسن بچیوں کے لیے آج ایک بہترین عمارت موجود ہے ، جس میں بورڈنگ اسکول اور رہائش کا انتظام ہے ۔

  • یہاں بچیوں کو نصابی تعلیم کے علاوہ دینی تعلیم اور کاریگری بھی سکھائی جاتی ہے تاکہ وہ لڑکیاں مستقبل میں اپنے پیروں پر کھڑی  ہوسکیں اور ملک کا نام روشن کرسکیں۔

    یہاں بچیوں کو نصابی تعلیم کے علاوہ دینی تعلیم اور کاریگری بھی سکھائی جاتی ہے تاکہ وہ لڑکیاں مستقبل میں اپنے پیروں پر کھڑی ہوسکیں اور ملک کا نام روشن کرسکیں۔

  •  ـعام طور سے آشیانہ میں آنے والے کمسن لڑکیاں کافی ڈری اور سہمی ہوئی ہوتی ہیں ـ

    ـعام طور سے آشیانہ میں آنے والے کمسن لڑکیاں کافی ڈری اور سہمی ہوئی ہوتی ہیں ـ

  • کمسنی میں مصیبتوں کو جھیلنے کی وجہ سے تعلیم حاصل کرنے میں وہ احساس کمتری کا شکار رہتی ہیں ۔

    کمسنی میں مصیبتوں کو جھیلنے کی وجہ سے تعلیم حاصل کرنے میں وہ احساس کمتری کا شکار رہتی ہیں ۔

  • ـ آشیانہ میں بورڈنگ اسکول بھی موجود ہےـ ،یہاں کے اساتذہ ان بچوں کے ساتھ پیار و محبت سے پیش آتے ہیں ـ۔(رپورٹ : شاہد قاضی ) ۔

    ـ آشیانہ میں بورڈنگ اسکول بھی موجود ہےـ ،یہاں کے اساتذہ ان بچوں کے ساتھ پیار و محبت سے پیش آتے ہیں ـ۔(رپورٹ : شاہد قاضی ) ۔

  • گووا کی مغربی تہذیب اورعیش وعشرت کی طرز زندگی آپ جانتے ہی ہوں گے۔ کچھ سالوں سے گووا کے سلم علاقوں میں لڑکیوں کےغائب ہونے کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے ۔
  •  ـ والدین کے درمیان نااتفاقی کے بعد کمسن بچیاں گھر چھوڑنے پر مجبور ہوجاتی ہیں ۔
  • ـ ایسی لڑکیوں کی مجبوری کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کچھ گروہ انہیں غلط راہ پر لے جاتے ہیں ـ
  •  اگر ان میں کچھ لڑکیاں بچ جاتی ہیں ، تو ان کو مسیحی مشنری کے ماتحت چلنے والے بورڈنگ اسکولوں میں داخل کرادیا جاتا ہے ، جس کے بعد وہ ـ کچھ سالوں میں کسی دباؤ کے بغیر اپنا مذہب تبدیل کرلیتی ہیں ۔
  • ـ انہیں حالات کے پیش نظر جماعت ہند گووا کے ماتحت چلنے والا ادارہ مدھور سندیش نے مسلم لڑکیوں کے لیےگووا کے واسکو میں آشیانہ کے نام سے چلڈرنس ہوم کی بنیاد ڈالی ہے ۔ـ
  • گووا کے واسکو میں کمسن بچیوں کے لیے آج ایک بہترین عمارت موجود ہے ، جس میں بورڈنگ اسکول اور رہائش کا انتظام ہے ۔
  • یہاں بچیوں کو نصابی تعلیم کے علاوہ دینی تعلیم اور کاریگری بھی سکھائی جاتی ہے تاکہ وہ لڑکیاں مستقبل میں اپنے پیروں پر کھڑی  ہوسکیں اور ملک کا نام روشن کرسکیں۔
  •  ـعام طور سے آشیانہ میں آنے والے کمسن لڑکیاں کافی ڈری اور سہمی ہوئی ہوتی ہیں ـ
  • کمسنی میں مصیبتوں کو جھیلنے کی وجہ سے تعلیم حاصل کرنے میں وہ احساس کمتری کا شکار رہتی ہیں ۔
  • ـ آشیانہ میں بورڈنگ اسکول بھی موجود ہےـ ،یہاں کے اساتذہ ان بچوں کے ساتھ پیار و محبت سے پیش آتے ہیں ـ۔(رپورٹ : شاہد قاضی ) ۔

تازہ ترین تصاویر