دیوبند میں تحفظ شریعت اور اصلاح معاشرہ کانفرنس کا کامیاب انعقاد، دیکھیں تصویریں

Feb 03, 2017 12:39 PM IST
1 of 18
  • دیوبند میں ویمنس ونگ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی جانب سے خواتین و طالبات کیلئے دیو بند میں کل ایک روزہ ’’تحفظ شریعت اور اصلاح معاشرہ کانفرنس 2017 ‘‘ ڈاکٹر اسماء زہرہ صاحبہ کی زیر صدارت کامیابی سے منعقد ہوئی۔ کانفرنس کے پہلے سیشن میں مہمان خصوصی پروفیسر شکیل احمدقاسمی صاحب،صدر شعبہ اردوپٹنہ بہار، نے عورتوں کی آزادی کے معاملے پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلام میں عورت کو آزادی 14 سو سال قبل ہی عطا کردی گئی تھی۔ آج جو فریڈم کی بات کہی جاتی ہے۔ خلفاء راشدین و امیر المؤمنین کے دور میں مسلم خواتین آزاد تھیں۔ امیرالمؤمنین خواتین کا مشورہ قبول کرتے تھے۔

    دیوبند میں ویمنس ونگ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کی جانب سے خواتین و طالبات کیلئے دیو بند میں کل ایک روزہ ’’تحفظ شریعت اور اصلاح معاشرہ کانفرنس 2017 ‘‘ ڈاکٹر اسماء زہرہ صاحبہ کی زیر صدارت کامیابی سے منعقد ہوئی۔ کانفرنس کے پہلے سیشن میں مہمان خصوصی پروفیسر شکیل احمدقاسمی صاحب،صدر شعبہ اردوپٹنہ بہار، نے عورتوں کی آزادی کے معاملے پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اسلام میں عورت کو آزادی 14 سو سال قبل ہی عطا کردی گئی تھی۔ آج جو فریڈم کی بات کہی جاتی ہے۔ خلفاء راشدین و امیر المؤمنین کے دور میں مسلم خواتین آزاد تھیں۔ امیرالمؤمنین خواتین کا مشورہ قبول کرتے تھے۔

  • انھوں نے کہا کہ شریعت اسلامی نے عورت کو نکاح میں رضامندی کا حق دیا، مہر کا حق عطا کیا، نفقہ کی ذمہ داری مرد پرڈالی گئی، خلع کا حق اوروراثت میں بیٹیو ں اور بہنوں کو حق عطا کیا گیا۔

    انھوں نے کہا کہ شریعت اسلامی نے عورت کو نکاح میں رضامندی کا حق دیا، مہر کا حق عطا کیا، نفقہ کی ذمہ داری مرد پرڈالی گئی، خلع کا حق اوروراثت میں بیٹیو ں اور بہنوں کو حق عطا کیا گیا۔

  • انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستا ن میں مختلف رسم و رواج اور تہذیبیں پائی جاتی ہیں، زبانیں الگ الگ ہیں،شادی بیاہ کے معاملے میں ہندوطبقہ میں نارتھ انڈیا اور ساؤتھ انڈیا میں الگ الگ رواج ہیں۔ اس کثیر اللسانی اور مختلف تہذیبوں والے ملک میں یکساں سول کوڈ کا نفاذ ممکن نہیں۔

    انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستا ن میں مختلف رسم و رواج اور تہذیبیں پائی جاتی ہیں، زبانیں الگ الگ ہیں،شادی بیاہ کے معاملے میں ہندوطبقہ میں نارتھ انڈیا اور ساؤتھ انڈیا میں الگ الگ رواج ہیں۔ اس کثیر اللسانی اور مختلف تہذیبوں والے ملک میں یکساں سول کوڈ کا نفاذ ممکن نہیں۔

  • مہمان خصوصی مولانا فرید الدین صاحب استاذحدیث دارا لعلوم وقف دیوبند نے کانفرنس میں خواتین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اہل ایمان اور اہل شریعت کو ،شریعت اسلامی کا پابند ہونا ہوگاتب ہی شریعت کا تحفظ ممکن ہوگا۔

    مہمان خصوصی مولانا فرید الدین صاحب استاذحدیث دارا لعلوم وقف دیوبند نے کانفرنس میں خواتین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اہل ایمان اور اہل شریعت کو ،شریعت اسلامی کا پابند ہونا ہوگاتب ہی شریعت کا تحفظ ممکن ہوگا۔

  •  قرآن کریم میں خطاب اہل ایمان سے ہے کہ وہ شریعت اسلامی کی پوری پابندی کریں۔ آخر میں انھوں نے اجلاس میں شریک ماؤں ،بہنوں سے اپیل کی کہ اولاد کی تربیت ان کی اولین ذمہ داری ہے جس کو وہ پورا کریں۔

    قرآن کریم میں خطاب اہل ایمان سے ہے کہ وہ شریعت اسلامی کی پوری پابندی کریں۔ آخر میں انھوں نے اجلاس میں شریک ماؤں ،بہنوں سے اپیل کی کہ اولاد کی تربیت ان کی اولین ذمہ داری ہے جس کو وہ پورا کریں۔

  • کانفرنس کے دوسرے سیشن میں ڈاکٹر اسماء زہرہ مسؤلہ ویمنس ونگ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے اپنے صدارتی خطاب میں ’’تحفظ شریعت‘‘ کے عنوان پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی فسطائی طاقتیں وقفہ وقفہ سے مسلمانوں کے ذیلی لا تعلق مسائل کو مسلمانوں سے منسوب کرکے بدنام کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔

    کانفرنس کے دوسرے سیشن میں ڈاکٹر اسماء زہرہ مسؤلہ ویمنس ونگ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے اپنے صدارتی خطاب میں ’’تحفظ شریعت‘‘ کے عنوان پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی فسطائی طاقتیں وقفہ وقفہ سے مسلمانوں کے ذیلی لا تعلق مسائل کو مسلمانوں سے منسوب کرکے بدنام کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔

  • طلاق، تعددازدواج، کثر ت اولاد، قضائت، یوگا، سوریہ نمسکار، وندے ماترم، گاؤکشی جیسی باتوں میں الجھا کرمسلم خواتین کو ٹارگیٹ کرکے ملک کے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ اسلام میں مرد و عورتوں کے حقوق میں مساوات نہیں اور مسلم عورتوں پرظلم و زیادتی ہورہی ہے وغیرہ۔

    طلاق، تعددازدواج، کثر ت اولاد، قضائت، یوگا، سوریہ نمسکار، وندے ماترم، گاؤکشی جیسی باتوں میں الجھا کرمسلم خواتین کو ٹارگیٹ کرکے ملک کے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ اسلام میں مرد و عورتوں کے حقوق میں مساوات نہیں اور مسلم عورتوں پرظلم و زیادتی ہورہی ہے وغیرہ۔

  • انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستان کی خواتین کے حقیقی مسائل، جہیز ،گھریلو تشدد، عورتوں کا تحفظ ، رحم مادرمیں بیٹی کا قتل، دختر کشی وغیر ہ ہے۔ طلاق کا ایک جھوٹا پروپیگنڈہ کیا جارہا ہے۔

    انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستان کی خواتین کے حقیقی مسائل، جہیز ،گھریلو تشدد، عورتوں کا تحفظ ، رحم مادرمیں بیٹی کا قتل، دختر کشی وغیر ہ ہے۔ طلاق کا ایک جھوٹا پروپیگنڈہ کیا جارہا ہے۔

  • انہوں نے کہا کہ حکومت کے ایک سروے کے مطابق دوسرے مذاہب کی لڑکیوں کے مقابلے میں مسلمان عورتوں اور لڑکیوں کو بھرپور غذاملتی ہے اور وہ غذائی کمی کا شکارنہیں، دختر کشی کا تناسب بھی مسلمانوں میں نہ کے برابر ہے۔ جس سے پتہ چلتا ہے کہ بیٹیاں مسلم سماج میں محفوظ ہیں۔

    انہوں نے کہا کہ حکومت کے ایک سروے کے مطابق دوسرے مذاہب کی لڑکیوں کے مقابلے میں مسلمان عورتوں اور لڑکیوں کو بھرپور غذاملتی ہے اور وہ غذائی کمی کا شکارنہیں، دختر کشی کا تناسب بھی مسلمانوں میں نہ کے برابر ہے۔ جس سے پتہ چلتا ہے کہ بیٹیاں مسلم سماج میں محفوظ ہیں۔

  • انھوں نے خواتین سے گذارش کی کہ وہ شریعت اسلامی پر مکمل ایقان رکھیں۔ اسکے نفاذ اور تحفظ کیلئے اپنی جان دینے کو تیار رہیں۔ مسلم خواتین شریعت میں کسی بھی قسم کی تبدیلی کو ہرگز برداشت نہیں کرسکتیں۔

    انھوں نے خواتین سے گذارش کی کہ وہ شریعت اسلامی پر مکمل ایقان رکھیں۔ اسکے نفاذ اور تحفظ کیلئے اپنی جان دینے کو تیار رہیں۔ مسلم خواتین شریعت میں کسی بھی قسم کی تبدیلی کو ہرگز برداشت نہیں کرسکتیں۔

  •  آخر میں انھوں نے اپیل کی کہ موجودہ حالات کے مقابلے کیلئے تعلیم، تربیت ،اتحاد اور اصلاح معاشرہ کی ضرورت ہے۔ آپ سب خواتین اپنی صلاحیت، وقت اور پیسہ اس کام میں لگائیں تاکہ ایک صالح معاشرہ کی تعمیر و تشکیل ہوسکے۔

    آخر میں انھوں نے اپیل کی کہ موجودہ حالات کے مقابلے کیلئے تعلیم، تربیت ،اتحاد اور اصلاح معاشرہ کی ضرورت ہے۔ آپ سب خواتین اپنی صلاحیت، وقت اور پیسہ اس کام میں لگائیں تاکہ ایک صالح معاشرہ کی تعمیر و تشکیل ہوسکے۔

  • اسکے علاوہ مہمانان خصوصی میں خاتون ارکان بورڈ محترمہ ممدوحہ ماجد صاحبہ رکن عاملہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈاورمحترمہ زینت مہتاب صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ، محترمہ عطیہ صدیقہ صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نئی دہلی اوردیگر مقررات میں اہلیہ مولانا سید محموداسعد مدنی ،جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ہند، محترمہ صفیہ ،اہلیہ مولانا محمد سفیان قاسمی ،محترمہ حسینہ ،اہلیہ محترمہ مفتی احمد سعد ، محترمہ شائستہ صدیقی ، اہلیہ حسین احمد مدنی،محترمہ حنا اور کنوینر محترمہ خورشیدہ خاتون نے خطاب کیا۔

    اسکے علاوہ مہمانان خصوصی میں خاتون ارکان بورڈ محترمہ ممدوحہ ماجد صاحبہ رکن عاملہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈاورمحترمہ زینت مہتاب صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ، محترمہ عطیہ صدیقہ صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نئی دہلی اوردیگر مقررات میں اہلیہ مولانا سید محموداسعد مدنی ،جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ہند، محترمہ صفیہ ،اہلیہ مولانا محمد سفیان قاسمی ،محترمہ حسینہ ،اہلیہ محترمہ مفتی احمد سعد ، محترمہ شائستہ صدیقی ، اہلیہ حسین احمد مدنی،محترمہ حنا اور کنوینر محترمہ خورشیدہ خاتون نے خطاب کیا۔

  • سینکڑوں خواتین و طالبات نے اس کانفرنس میں شرکت کیں۔ دعاء پر اس کانفرنس کا کامیاب اختتام عمل میں آیا۔

    سینکڑوں خواتین و طالبات نے اس کانفرنس میں شرکت کیں۔ دعاء پر اس کانفرنس کا کامیاب اختتام عمل میں آیا۔

  • دیکھیں تصویریں۔

    دیکھیں تصویریں۔

  • دیکھیں تصویریں۔

    دیکھیں تصویریں۔

  • دیکھیں تصویریں۔

    دیکھیں تصویریں۔

  • دیکھیں تصویریں۔

    دیکھیں تصویریں۔

  • دیکھیں تصویریں۔

    دیکھیں تصویریں۔

  • انھوں نے کہا کہ شریعت اسلامی نے عورت کو نکاح میں رضامندی کا حق دیا، مہر کا حق عطا کیا، نفقہ کی ذمہ داری مرد پرڈالی گئی، خلع کا حق اوروراثت میں بیٹیو ں اور بہنوں کو حق عطا کیا گیا۔
  • انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستا ن میں مختلف رسم و رواج اور تہذیبیں پائی جاتی ہیں، زبانیں الگ الگ ہیں،شادی بیاہ کے معاملے میں ہندوطبقہ میں نارتھ انڈیا اور ساؤتھ انڈیا میں الگ الگ رواج ہیں۔ اس کثیر اللسانی اور مختلف تہذیبوں والے ملک میں یکساں سول کوڈ کا نفاذ ممکن نہیں۔
  • مہمان خصوصی مولانا فرید الدین صاحب استاذحدیث دارا لعلوم وقف دیوبند نے کانفرنس میں خواتین کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اہل ایمان اور اہل شریعت کو ،شریعت اسلامی کا پابند ہونا ہوگاتب ہی شریعت کا تحفظ ممکن ہوگا۔
  •  قرآن کریم میں خطاب اہل ایمان سے ہے کہ وہ شریعت اسلامی کی پوری پابندی کریں۔ آخر میں انھوں نے اجلاس میں شریک ماؤں ،بہنوں سے اپیل کی کہ اولاد کی تربیت ان کی اولین ذمہ داری ہے جس کو وہ پورا کریں۔
  • کانفرنس کے دوسرے سیشن میں ڈاکٹر اسماء زہرہ مسؤلہ ویمنس ونگ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نے اپنے صدارتی خطاب میں ’’تحفظ شریعت‘‘ کے عنوان پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک کی فسطائی طاقتیں وقفہ وقفہ سے مسلمانوں کے ذیلی لا تعلق مسائل کو مسلمانوں سے منسوب کرکے بدنام کرنے کی کوشش کررہی ہیں۔
  • طلاق، تعددازدواج، کثر ت اولاد، قضائت، یوگا، سوریہ نمسکار، وندے ماترم، گاؤکشی جیسی باتوں میں الجھا کرمسلم خواتین کو ٹارگیٹ کرکے ملک کے عوام کو گمراہ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے کہ اسلام میں مرد و عورتوں کے حقوق میں مساوات نہیں اور مسلم عورتوں پرظلم و زیادتی ہورہی ہے وغیرہ۔
  • انھوں نے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستان کی خواتین کے حقیقی مسائل، جہیز ،گھریلو تشدد، عورتوں کا تحفظ ، رحم مادرمیں بیٹی کا قتل، دختر کشی وغیر ہ ہے۔ طلاق کا ایک جھوٹا پروپیگنڈہ کیا جارہا ہے۔
  • انہوں نے کہا کہ حکومت کے ایک سروے کے مطابق دوسرے مذاہب کی لڑکیوں کے مقابلے میں مسلمان عورتوں اور لڑکیوں کو بھرپور غذاملتی ہے اور وہ غذائی کمی کا شکارنہیں، دختر کشی کا تناسب بھی مسلمانوں میں نہ کے برابر ہے۔ جس سے پتہ چلتا ہے کہ بیٹیاں مسلم سماج میں محفوظ ہیں۔
  • انھوں نے خواتین سے گذارش کی کہ وہ شریعت اسلامی پر مکمل ایقان رکھیں۔ اسکے نفاذ اور تحفظ کیلئے اپنی جان دینے کو تیار رہیں۔ مسلم خواتین شریعت میں کسی بھی قسم کی تبدیلی کو ہرگز برداشت نہیں کرسکتیں۔
  •  آخر میں انھوں نے اپیل کی کہ موجودہ حالات کے مقابلے کیلئے تعلیم، تربیت ،اتحاد اور اصلاح معاشرہ کی ضرورت ہے۔ آپ سب خواتین اپنی صلاحیت، وقت اور پیسہ اس کام میں لگائیں تاکہ ایک صالح معاشرہ کی تعمیر و تشکیل ہوسکے۔
  • اسکے علاوہ مہمانان خصوصی میں خاتون ارکان بورڈ محترمہ ممدوحہ ماجد صاحبہ رکن عاملہ آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈاورمحترمہ زینت مہتاب صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ، محترمہ عطیہ صدیقہ صاحبہ رکن آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ نئی دہلی اوردیگر مقررات میں اہلیہ مولانا سید محموداسعد مدنی ،جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ہند، محترمہ صفیہ ،اہلیہ مولانا محمد سفیان قاسمی ،محترمہ حسینہ ،اہلیہ محترمہ مفتی احمد سعد ، محترمہ شائستہ صدیقی ، اہلیہ حسین احمد مدنی،محترمہ حنا اور کنوینر محترمہ خورشیدہ خاتون نے خطاب کیا۔
  • سینکڑوں خواتین و طالبات نے اس کانفرنس میں شرکت کیں۔ دعاء پر اس کانفرنس کا کامیاب اختتام عمل میں آیا۔
  • دیکھیں تصویریں۔
  • دیکھیں تصویریں۔
  • دیکھیں تصویریں۔
  • دیکھیں تصویریں۔
  • دیکھیں تصویریں۔

تازہ ترین تصاویر