فیس بک میں پھر ہوئی گڑبڑی، 1.4 کروڑ یوزرس کا پرائویٹ ڈیٹا ہوا پبلک

Jun 08, 2018 01:58 PM IST
1 of 5
  • دنیا کی سب سے بڑی سوشل میڈیا کمپنی فیس بک ایک مرتبہ پھر تنازعہ میں ہے۔ خبر کے مطابق فیس بک نے قریب 14 ملین یانی 1.4 کروڑ یوزرس کا پرائویٹ ڈیٹا پبلک ہو گیا ہے۔ حالانکہ کمپنی نے کہا ہےکہ ایسا ایک بگ کی وجہ سے ہوا ہے۔

    دنیا کی سب سے بڑی سوشل میڈیا کمپنی فیس بک ایک مرتبہ پھر تنازعہ میں ہے۔ خبر کے مطابق فیس بک نے قریب 14 ملین یانی 1.4 کروڑ یوزرس کا پرائویٹ ڈیٹا پبلک ہو گیا ہے۔ حالانکہ کمپنی نے کہا ہےکہ ایسا ایک بگ کی وجہ سے ہوا ہے۔

  • فیس بک نے کہا ہےکہ بگ کی وجہ سے یہ خرابی 18 مئی سے 27 مئی 2018 کے درمیان در پیش ہوئی ہے۔ کمپنی کے پرائوی افسر ایرن اگر نے اپنے بیان میں سافٹوئر میں خرابی کی بات قبول کی ہے۔

    فیس بک نے کہا ہےکہ بگ کی وجہ سے یہ خرابی 18 مئی سے 27 مئی 2018 کے درمیان در پیش ہوئی ہے۔ کمپنی کے پرائوی افسر ایرن اگر نے اپنے بیان میں سافٹوئر میں خرابی کی بات قبول کی ہے۔

  • ایرین نے کہا کہ ہم نے بگ کو ٹھیک کر دیا ہے اور ہم لوگو کو مشورہ دیتے ہیں کہ ان دنوں میں انہوں نے جو بھی پوسٹ شائع کئے ہیں اسے ایک بار چیک کر لیں۔ ہم یہ بھی واضح کر دینا چاہتے ہیں کہ 18 مئی سے قبل فیس پوسٹ میں کسی بھی قسم کی کوئی خرابی نہیں ہے۔ اس بگ کی وجہ سے لوگوں کو پریشانی ہوئی اس کے لئے ہم اؤمعافی مانگتے ہیں۔

    ایرین نے کہا کہ ہم نے بگ کو ٹھیک کر دیا ہے اور ہم لوگو کو مشورہ دیتے ہیں کہ ان دنوں میں انہوں نے جو بھی پوسٹ شائع کئے ہیں اسے ایک بار چیک کر لیں۔ ہم یہ بھی واضح کر دینا چاہتے ہیں کہ 18 مئی سے قبل فیس پوسٹ میں کسی بھی قسم کی کوئی خرابی نہیں ہے۔ اس بگ کی وجہ سے لوگوں کو پریشانی ہوئی اس کے لئے ہم اؤمعافی مانگتے ہیں۔

  • خبر کے مطابق یہ بگ اپنے آپ ہی یوزرس کے نئے پوسٹ کو پبلک کر دیتا ہے جسے انہوں نے چاہے صرف اپنے دوستوں کے لئے ہی پوسٹ کیوں نہ کیا ہو۔

    خبر کے مطابق یہ بگ اپنے آپ ہی یوزرس کے نئے پوسٹ کو پبلک کر دیتا ہے جسے انہوں نے چاہے صرف اپنے دوستوں کے لئے ہی پوسٹ کیوں نہ کیا ہو۔

  • بتا دیں کہ کیمبریج انالیٹکا کی جانب سے ڈیٹا لیک ہونے کے بعد فیس بک ایک کے ایک کئی تنازعہ میں مبتلا ہو تا جا رہا ہے۔ کچھ روز قبل ہی فیس بک نے قبول کیا تھا کہ اس نے اوپپو ، ہوآو، سمیت 4 چینی کمپنیوں کو یوزرس کا ڈیٹا دیا تھا۔

    بتا دیں کہ کیمبریج انالیٹکا کی جانب سے ڈیٹا لیک ہونے کے بعد فیس بک ایک کے ایک کئی تنازعہ میں مبتلا ہو تا جا رہا ہے۔ کچھ روز قبل ہی فیس بک نے قبول کیا تھا کہ اس نے اوپپو ، ہوآو، سمیت 4 چینی کمپنیوں کو یوزرس کا ڈیٹا دیا تھا۔

  • فیس بک نے کہا ہےکہ بگ کی وجہ سے یہ خرابی 18 مئی سے 27 مئی 2018 کے درمیان در پیش ہوئی ہے۔ کمپنی کے پرائوی افسر ایرن اگر نے اپنے بیان میں سافٹوئر میں خرابی کی بات قبول کی ہے۔
  • ایرین نے کہا کہ ہم نے بگ کو ٹھیک کر دیا ہے اور ہم لوگو کو مشورہ دیتے ہیں کہ ان دنوں میں انہوں نے جو بھی پوسٹ شائع کئے ہیں اسے ایک بار چیک کر لیں۔ ہم یہ بھی واضح کر دینا چاہتے ہیں کہ 18 مئی سے قبل فیس پوسٹ میں کسی بھی قسم کی کوئی خرابی نہیں ہے۔ اس بگ کی وجہ سے لوگوں کو پریشانی ہوئی اس کے لئے ہم اؤمعافی مانگتے ہیں۔
  • خبر کے مطابق یہ بگ اپنے آپ ہی یوزرس کے نئے پوسٹ کو پبلک کر دیتا ہے جسے انہوں نے چاہے صرف اپنے دوستوں کے لئے ہی پوسٹ کیوں نہ کیا ہو۔
  • بتا دیں کہ کیمبریج انالیٹکا کی جانب سے ڈیٹا لیک ہونے کے بعد فیس بک ایک کے ایک کئی تنازعہ میں مبتلا ہو تا جا رہا ہے۔ کچھ روز قبل ہی فیس بک نے قبول کیا تھا کہ اس نے اوپپو ، ہوآو، سمیت 4 چینی کمپنیوں کو یوزرس کا ڈیٹا دیا تھا۔

تازہ ترین تصاویر