دہلی حکومت کا پرانی دہلی کے 11 اردو اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ ، عوام میں شدید ناراضگی

Jul 14, 2017 09:26 PM IST
1 of 8
  • دہلی کی کیجریوال حکومت نے ایک سرکلر جاری کر کے پرانی دہلی کے 12 اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا  ہے ، جس کے بعد سے پرانی دہلی کے لوگوں میں کافی ناراضگی پائی جارہی ہے ۔ حکومت کے ذریعہ اسکولوں کو نوٹس بھیجنے کے بعد ہی سے پرانی دہلی کے لوگ دہلی حکومت کے ذمہ داران سے اس فیصلے پر دوبارہ غورکرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں ۔

    دہلی کی کیجریوال حکومت نے ایک سرکلر جاری کر کے پرانی دہلی کے 12 اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا ہے ، جس کے بعد سے پرانی دہلی کے لوگوں میں کافی ناراضگی پائی جارہی ہے ۔ حکومت کے ذریعہ اسکولوں کو نوٹس بھیجنے کے بعد ہی سے پرانی دہلی کے لوگ دہلی حکومت کے ذمہ داران سے اس فیصلے پر دوبارہ غورکرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں ۔

  • دہلی حکومت کے محکمہ تعلیم نے پرانی دہلی اردو میڈیم اسکولوں کے انضمام کے لیے گزشتہ دنوں ایک سرکلر جاری کر کے محبان اردو کے دلوں میں بے چینی پیدا کر دی ہے۔

    دہلی حکومت کے محکمہ تعلیم نے پرانی دہلی اردو میڈیم اسکولوں کے انضمام کے لیے گزشتہ دنوں ایک سرکلر جاری کر کے محبان اردو کے دلوں میں بے چینی پیدا کر دی ہے۔

  • محکمہ نے 12 اسکولوں کی ایک فہرست جاری کی ہے ،  جس میں سے ایک ہندی میڈیم اور 11 اردو میڈیم اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ان تمام اسکولوں میں سے صرف دو اسکول لڑكوں کے ہیں ، جبکہ باقی 10 اسکول لڑکیوں کے ہیں ۔

    محکمہ نے 12 اسکولوں کی ایک فہرست جاری کی ہے ، جس میں سے ایک ہندی میڈیم اور 11 اردو میڈیم اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ان تمام اسکولوں میں سے صرف دو اسکول لڑكوں کے ہیں ، جبکہ باقی 10 اسکول لڑکیوں کے ہیں ۔

  • اسکولوں کو ضم کرنے کے لئے بھیجے نوٹس کے پیچھے جب وجہ جاننے کی کوشش کی گئی تو معلوم ہوا کہ دہلی حکومت کے ذریعہ اسکولوں کو بند کرنے کی وجہ ہی قانونی طور پر کمزور ہے۔

    اسکولوں کو ضم کرنے کے لئے بھیجے نوٹس کے پیچھے جب وجہ جاننے کی کوشش کی گئی تو معلوم ہوا کہ دہلی حکومت کے ذریعہ اسکولوں کو بند کرنے کی وجہ ہی قانونی طور پر کمزور ہے۔

  • دراصل اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کی تعداد کو کم بتا کر ان اسكولوں ضم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے، جبکہ اسکولوں میں مستقل طور پر كلاس کرنے آ رہے طلبہ کی تعداد سیکڑوں میں ہے۔

    دراصل اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کی تعداد کو کم بتا کر ان اسكولوں ضم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے، جبکہ اسکولوں میں مستقل طور پر كلاس کرنے آ رہے طلبہ کی تعداد سیکڑوں میں ہے۔

  • ای ٹی وی نے جب عام آدمی پارٹی کے ذمہ داران سے بات کرنے کی کوشش کی تو وہ سب اس پر بولنے سے بچتے نظر آئے ۔

    ای ٹی وی نے جب عام آدمی پارٹی کے ذمہ داران سے بات کرنے کی کوشش کی تو وہ سب اس پر بولنے سے بچتے نظر آئے ۔

  • آپ کو بتا دیں کہ گزشتہ 40 سالوں سے پرانی دہلی میں کوئی نیا سرکاری اسکول نہیں کھولا گیا ہے۔ لیكن گزشتہ 2 سالوں میں تقریبا 25 ایم سی ڈی یا دیگر سرکاری اسکولوں کو بند کیا جا چکا ہے۔ جن میں ہزاروں کی تعداد میں طلبا علم حاصل کرنے کے لیے آتے تھے اور تقریباً تمام اسکول اردو میڈیم کے تھے ۔

    آپ کو بتا دیں کہ گزشتہ 40 سالوں سے پرانی دہلی میں کوئی نیا سرکاری اسکول نہیں کھولا گیا ہے۔ لیكن گزشتہ 2 سالوں میں تقریبا 25 ایم سی ڈی یا دیگر سرکاری اسکولوں کو بند کیا جا چکا ہے۔ جن میں ہزاروں کی تعداد میں طلبا علم حاصل کرنے کے لیے آتے تھے اور تقریباً تمام اسکول اردو میڈیم کے تھے ۔

  •  اپنے پہلے بجٹ میں تعلیم کے معیار کو بہتر کرنے کا ڈھول پیٹنے والی عام آدمی پارٹی اردو مسلم طلبہ کی تعلیم کو لے کر کتنی فکر مند ہے، اس فیصلے کے بعد یہ آسانی سے پتہ لگایا جا سکتا ہے ۔ اس فیصلے کے بعد ہی سے اسکولوں میں پڑھ رہے طلبہ اپنے مستقبل کو لے کرفکرمند نظر آرہے ہیں۔ بہت سے لڑکیوں کو اسکولوں کے ضم ہونے پر ان کی تعلیم چھوٹ جانے کا ڈر بھی ستانے لگا ہے۔

    اپنے پہلے بجٹ میں تعلیم کے معیار کو بہتر کرنے کا ڈھول پیٹنے والی عام آدمی پارٹی اردو مسلم طلبہ کی تعلیم کو لے کر کتنی فکر مند ہے، اس فیصلے کے بعد یہ آسانی سے پتہ لگایا جا سکتا ہے ۔ اس فیصلے کے بعد ہی سے اسکولوں میں پڑھ رہے طلبہ اپنے مستقبل کو لے کرفکرمند نظر آرہے ہیں۔ بہت سے لڑکیوں کو اسکولوں کے ضم ہونے پر ان کی تعلیم چھوٹ جانے کا ڈر بھی ستانے لگا ہے۔

  • دہلی حکومت کے محکمہ تعلیم نے پرانی دہلی اردو میڈیم اسکولوں کے انضمام کے لیے گزشتہ دنوں ایک سرکلر جاری کر کے محبان اردو کے دلوں میں بے چینی پیدا کر دی ہے۔
  • محکمہ نے 12 اسکولوں کی ایک فہرست جاری کی ہے ،  جس میں سے ایک ہندی میڈیم اور 11 اردو میڈیم اسکولوں کو 6 اسکولوں میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ان تمام اسکولوں میں سے صرف دو اسکول لڑكوں کے ہیں ، جبکہ باقی 10 اسکول لڑکیوں کے ہیں ۔
  • اسکولوں کو ضم کرنے کے لئے بھیجے نوٹس کے پیچھے جب وجہ جاننے کی کوشش کی گئی تو معلوم ہوا کہ دہلی حکومت کے ذریعہ اسکولوں کو بند کرنے کی وجہ ہی قانونی طور پر کمزور ہے۔
  • دراصل اسکولوں میں پڑھنے والے طلبہ کی تعداد کو کم بتا کر ان اسكولوں ضم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے، جبکہ اسکولوں میں مستقل طور پر كلاس کرنے آ رہے طلبہ کی تعداد سیکڑوں میں ہے۔
  • ای ٹی وی نے جب عام آدمی پارٹی کے ذمہ داران سے بات کرنے کی کوشش کی تو وہ سب اس پر بولنے سے بچتے نظر آئے ۔
  • آپ کو بتا دیں کہ گزشتہ 40 سالوں سے پرانی دہلی میں کوئی نیا سرکاری اسکول نہیں کھولا گیا ہے۔ لیكن گزشتہ 2 سالوں میں تقریبا 25 ایم سی ڈی یا دیگر سرکاری اسکولوں کو بند کیا جا چکا ہے۔ جن میں ہزاروں کی تعداد میں طلبا علم حاصل کرنے کے لیے آتے تھے اور تقریباً تمام اسکول اردو میڈیم کے تھے ۔
  •  اپنے پہلے بجٹ میں تعلیم کے معیار کو بہتر کرنے کا ڈھول پیٹنے والی عام آدمی پارٹی اردو مسلم طلبہ کی تعلیم کو لے کر کتنی فکر مند ہے، اس فیصلے کے بعد یہ آسانی سے پتہ لگایا جا سکتا ہے ۔ اس فیصلے کے بعد ہی سے اسکولوں میں پڑھ رہے طلبہ اپنے مستقبل کو لے کرفکرمند نظر آرہے ہیں۔ بہت سے لڑکیوں کو اسکولوں کے ضم ہونے پر ان کی تعلیم چھوٹ جانے کا ڈر بھی ستانے لگا ہے۔

تازہ ترین تصاویر