آپ نے کبھی نہیں دیکھی ہوں گی ممبئی کی لوکل ٹرین لیڈیز ڈبہ کی یہ منفرد تصاویر

Apr 07, 2017 01:30 PM IST
1 of 11
  • ممبئی کی لوکل ٹرین اس شہر کی زندگی کا دستاویز ہے۔ اس شہر میں کام پر جانے والی خواتین روزانہ چار گھنٹے لوکل ٹرین میں سفر کرتی ہیں یعنی سال میں تقریبا 1300 گھنٹے۔ 70 لاکھ سے زیادہ لوگوں کو یہ ٹرینیں روز دفتر سے گھر اور گھر سے دفتر لے کر جاتی ہیں۔ فوٹو جرنلسٹ انوشري فڑنويس نے لوکل ٹرین کے خواتین ڈبے کی کچھ تصاویر کو ٹرین ڈائری  کے نام سے اپنے کیمرے میں قید کیا ہے۔ یہ تصویریں ممبئی کی ہاربر، سینٹرل اور ویسٹرن ریلوے لائنوں پر دوڑتی لوکل ٹرین کے ڈبوں کی ہیں۔ انو شري ممبئی میں پلی بڑھی ہیں اور آئی ٹی کمپنی کی نوکری چھوڑ 2010 سے فوٹو گرافی کر رہی ہیں اور نیوز ایجنسی انڈس امیجز کے ساتھ کام کر رہی ہیں۔

    ممبئی کی لوکل ٹرین اس شہر کی زندگی کا دستاویز ہے۔ اس شہر میں کام پر جانے والی خواتین روزانہ چار گھنٹے لوکل ٹرین میں سفر کرتی ہیں یعنی سال میں تقریبا 1300 گھنٹے۔ 70 لاکھ سے زیادہ لوگوں کو یہ ٹرینیں روز دفتر سے گھر اور گھر سے دفتر لے کر جاتی ہیں۔ فوٹو جرنلسٹ انوشري فڑنويس نے لوکل ٹرین کے خواتین ڈبے کی کچھ تصاویر کو ٹرین ڈائری کے نام سے اپنے کیمرے میں قید کیا ہے۔ یہ تصویریں ممبئی کی ہاربر، سینٹرل اور ویسٹرن ریلوے لائنوں پر دوڑتی لوکل ٹرین کے ڈبوں کی ہیں۔ انو شري ممبئی میں پلی بڑھی ہیں اور آئی ٹی کمپنی کی نوکری چھوڑ 2010 سے فوٹو گرافی کر رہی ہیں اور نیوز ایجنسی انڈس امیجز کے ساتھ کام کر رہی ہیں۔

  • سینٹرل لائن کی لوکل ٹرینوں میں ٹرانس جینڈرس کی اپنی ایک دنیا ہے اور ان کی زندگی کے اپنے رنگ ہیں۔ ماٹنگا روڈ اسٹیشن سے گزرتی ایک لوکل ٹرین ۔

    سینٹرل لائن کی لوکل ٹرینوں میں ٹرانس جینڈرس کی اپنی ایک دنیا ہے اور ان کی زندگی کے اپنے رنگ ہیں۔ ماٹنگا روڈ اسٹیشن سے گزرتی ایک لوکل ٹرین ۔

  • دیر رات تھكي ہاری کام سے لوٹتی خواتین ، سکینڈ کلاس ڈبے میں ان خواتین کی تعداد زیادہ رہتی ہیں جو مچھلیاں فروخت کا کام کرتی ہیں۔

    دیر رات تھكي ہاری کام سے لوٹتی خواتین ، سکینڈ کلاس ڈبے میں ان خواتین کی تعداد زیادہ رہتی ہیں جو مچھلیاں فروخت کا کام کرتی ہیں۔

  • سینٹرل لائن پر دیر رات کی ٹرین اور ایک کونے میں سمٹی زندگی۔

    سینٹرل لائن پر دیر رات کی ٹرین اور ایک کونے میں سمٹی زندگی۔

  • یہاں زندگی کے سبھی رنگ ہیں ۔ گھر سے نکل کر جو کچھ بچتا ہے وہ اسی لوکل ٹرین کے ڈبے کا حصہ ہوتا ہے۔

    یہاں زندگی کے سبھی رنگ ہیں ۔ گھر سے نکل کر جو کچھ بچتا ہے وہ اسی لوکل ٹرین کے ڈبے کا حصہ ہوتا ہے۔

  • لوکل ٹرین بھروسہ ہےآدھے ادھورے اور چھوٹے ہوئے کاموں کو پورا کرنے کا۔ یہاں کئی ہاتھ کئی طرح سے ملتے ہیں۔

    لوکل ٹرین بھروسہ ہےآدھے ادھورے اور چھوٹے ہوئے کاموں کو پورا کرنے کا۔ یہاں کئی ہاتھ کئی طرح سے ملتے ہیں۔

  • پٹریوں پر دوڑتی ٹرین اور اس کے آغوش میں سمٹتي نیند۔ لوکل ٹرین کے اس ڈبے میں بھی خواتین نیند میں ایک دوسرے کو سنبھالتی ہیں۔

    پٹریوں پر دوڑتی ٹرین اور اس کے آغوش میں سمٹتي نیند۔ لوکل ٹرین کے اس ڈبے میں بھی خواتین نیند میں ایک دوسرے کو سنبھالتی ہیں۔

  • ممبئی میں بھیڑ سیلاب کی شکل میں بہتی ہے اور اس سیلاب کی کئی آنکھیں کئی جگہ ہوتی ہیں۔ خواتین ڈبہ اپنی پرائیویسی اور خالی پن کے درمیان بھی کئی نگاہوں کی زد میں ہوتا ہے۔

    ممبئی میں بھیڑ سیلاب کی شکل میں بہتی ہے اور اس سیلاب کی کئی آنکھیں کئی جگہ ہوتی ہیں۔ خواتین ڈبہ اپنی پرائیویسی اور خالی پن کے درمیان بھی کئی نگاہوں کی زد میں ہوتا ہے۔

  • ممبئی میں ٹرینیں بوڑھی نہیں ہوتی اور نہ ہی تھكتي ہیں، لیکن روزانہ اس کا سفر ڈھلتا رہتا ہے اور ڈھلتی شام کے ساتھ یہ بھی ایک گہری رات میں سمٹ جاتی ہے۔

    ممبئی میں ٹرینیں بوڑھی نہیں ہوتی اور نہ ہی تھكتي ہیں، لیکن روزانہ اس کا سفر ڈھلتا رہتا ہے اور ڈھلتی شام کے ساتھ یہ بھی ایک گہری رات میں سمٹ جاتی ہے۔

  • یہاں پابندیاں اپنے وقت میں درج ہیں  اور پھولوں کی خوشبو کو بھی پہروں کی عادت ہو چکی ہے۔

    یہاں پابندیاں اپنے وقت میں درج ہیں اور پھولوں کی خوشبو کو بھی پہروں کی عادت ہو چکی ہے۔

  • یہاں کئی کہانیاں درج ہیں اور کئی قصے چھوٹ گئے ہیں۔ کئی مرتبہ کہیں سے واپس آ جانا، وہاں سے دور ہو جانا نہیں ہوتا، بلکہ وہ خالی ہو جانا ہوتا ہے بھیڑ میں رہتے ہوئے بھی۔ انوشری کا کیمرہ بہت کچھ قید کرتا ہے اور محفوظ کرتا ہے، کچھ نہ درج کرتے ہوئے بھی۔

    یہاں کئی کہانیاں درج ہیں اور کئی قصے چھوٹ گئے ہیں۔ کئی مرتبہ کہیں سے واپس آ جانا، وہاں سے دور ہو جانا نہیں ہوتا، بلکہ وہ خالی ہو جانا ہوتا ہے بھیڑ میں رہتے ہوئے بھی۔ انوشری کا کیمرہ بہت کچھ قید کرتا ہے اور محفوظ کرتا ہے، کچھ نہ درج کرتے ہوئے بھی۔

  • سینٹرل لائن کی لوکل ٹرینوں میں ٹرانس جینڈرس کی اپنی ایک دنیا ہے اور ان کی زندگی کے اپنے رنگ ہیں۔ ماٹنگا روڈ اسٹیشن سے گزرتی ایک لوکل ٹرین ۔
  • دیر رات تھكي ہاری کام سے لوٹتی خواتین ، سکینڈ کلاس ڈبے میں ان خواتین کی تعداد زیادہ رہتی ہیں جو مچھلیاں فروخت کا کام کرتی ہیں۔
  • سینٹرل لائن پر دیر رات کی ٹرین اور ایک کونے میں سمٹی زندگی۔
  • یہاں زندگی کے سبھی رنگ ہیں ۔ گھر سے نکل کر جو کچھ بچتا ہے وہ اسی لوکل ٹرین کے ڈبے کا حصہ ہوتا ہے۔
  • لوکل ٹرین بھروسہ ہےآدھے ادھورے اور چھوٹے ہوئے کاموں کو پورا کرنے کا۔ یہاں کئی ہاتھ کئی طرح سے ملتے ہیں۔
  • پٹریوں پر دوڑتی ٹرین اور اس کے آغوش میں سمٹتي نیند۔ لوکل ٹرین کے اس ڈبے میں بھی خواتین نیند میں ایک دوسرے کو سنبھالتی ہیں۔
  • ممبئی میں بھیڑ سیلاب کی شکل میں بہتی ہے اور اس سیلاب کی کئی آنکھیں کئی جگہ ہوتی ہیں۔ خواتین ڈبہ اپنی پرائیویسی اور خالی پن کے درمیان بھی کئی نگاہوں کی زد میں ہوتا ہے۔
  • ممبئی میں ٹرینیں بوڑھی نہیں ہوتی اور نہ ہی تھكتي ہیں، لیکن روزانہ اس کا سفر ڈھلتا رہتا ہے اور ڈھلتی شام کے ساتھ یہ بھی ایک گہری رات میں سمٹ جاتی ہے۔
  • یہاں پابندیاں اپنے وقت میں درج ہیں  اور پھولوں کی خوشبو کو بھی پہروں کی عادت ہو چکی ہے۔
  • یہاں کئی کہانیاں درج ہیں اور کئی قصے چھوٹ گئے ہیں۔ کئی مرتبہ کہیں سے واپس آ جانا، وہاں سے دور ہو جانا نہیں ہوتا، بلکہ وہ خالی ہو جانا ہوتا ہے بھیڑ میں رہتے ہوئے بھی۔ انوشری کا کیمرہ بہت کچھ قید کرتا ہے اور محفوظ کرتا ہے، کچھ نہ درج کرتے ہوئے بھی۔

تازہ ترین تصاویر